آخر اس کی کوئی وجہ تو ہوگی

آخر اس کی کوئی وجہ تو ہوگی

ایک رپورٹ کے مطابق حسب سابق اس سال بھی تھانہ حیات آباد نے جرائم کی شرح میں بازی لینے کا اعزاز برقرار رکھا۔ صوبائی دارالحکومت کا سب سے منافع بخش سمجھا جانے والے تھانے کی حدود میں سٹریٹ کرائمز اور کار چوری کے واقعات ہی نہیں ہوتے بلکہ اغوائ' بھتہ خوری اور سمگلنگ کے واقعات بھی معمول کا حصہ ہیں۔ حیات آباد میں سیف حیات آباد کے نام سے سیکورٹی کا جو معقول انتظام کیاگیا ہے اس کے بعد تو پولیس کو بہت سے معاملات سے یکسو ہو کر انسداد مجرمان پر توجہ کی ضرورت تھی مگر لگتا یوں ہے کہ حیات آباد پولیس تھانے کے منافع بخش تصور کو غلط ثابت کرنے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتی۔ حیات آباد اور تاتارا تھانے کی حدود میں فحاشی کے اڈوں کی نگرانی اور گاہکوں کی آمد و رفت گن کر حصے کی وصولی جیسے شرمناک الزام کی شنید ہے ۔ممکن ہے یہ مبالغہ اور لغو ہو مگر بد اچھا بد نام برا کے مصداق کوٹھوں چڑھی بات میں کچھ نہ کچھ تو صداقت بھی تو ہوسکتی ہے۔ امر واقعہ یہ ہے کہ حیات آباد میں پولیس گشت نہ ہونے کے برابر ہے۔ تھانوں کی موبائل اور موٹر سائیکل سوار دستے سڑکوں پر ہی نظر نہیںآتے کجا کہ گلی محلوں میںگشت کرکے کار چوروں اور سٹریٹ کرائمز میںملوث عناصر کے خلاف کارروائی کو یقینی بنائیں۔ حیات آباد کے مکین اس بناء پر بہتر توجہ کے مستحق ہیں کہ ٹائون شپ سے حکومت کو ٹیکس کی مد میں کروڑوں روپے ملتے ہیں۔ علاوہ ازیں پلاٹس اورمکانات کی خرید و فروخت سے بھی حکومت کے خزانے میںخطیر رقم جمع ہوتی ہے۔ مگر اس کے باوجود یہاں کے مسائل اور حالات دوسرے علاقوں سے مختلف نہیں۔ حیات آباد میں اغواء برائے تاوان کی بڑھتی ہوئی وارداتوں' سرکاری اراضی پر تجاوزات کے قیام اور قبضے پر شہری حلقوں کی جانب سے بار بار تحفظات کا اظہار کسی سے پوشیدہ امر نہیں مگر اس پر کان دھرے کون۔ اگر ایسا کیا جاتا تو جرائم کی شرح میں سرفہرست ہونے کا اعزاز چھن نہ جاتا۔آئی جی خیبر پختونخوا اور سینئر پولیس حکام کو اس امر پر غور کرنا چاہئے کہ آخر اس کی کوئی تو وجہ ہوگی۔ ہمارے تئیں اگر پولیس حکام چاہیں تو کسی ایسے پولیس افسر کی تعیناتی کرکے صورتحال کو تبدیل کرسکتے ہیں جس کی فرض شناسی اور کردار مسلمہ ہو۔ کیا پولیس حکام اس بات کا جواب دیں گے کہ تھانہ حیات آباد اور تاتارا میں ایس ایچ او کی کارکردگی ناقص کیوں رہتی ہے اور ہر تبدیل ہونے والے کی تقرری کی مدت مختصر کیوں ہوتی ہے۔

متعلقہ خبریں