بین الاقوامی سرمایہ کاری میں رکاوٹیں؟

بین الاقوامی سرمایہ کاری میں رکاوٹیں؟

یہ بڑی بد قسمتی کی بات ہے کہ صوبوں میں بین الاقوامی سرمایہ کاری کے لئے آنیوالوں کی راہ میں اکثر ایسی رکاوٹیں کھڑی کردی جاتی ہیں جن کی وجہ سے صوبوں کی ترقی کی راہ کھوٹی ہوتی رہتی ہے۔ ایک عرصے تک صوبوں میں 50 میگا واٹ کے بجلی منصوبوں پر پابندی عاید تھی جبکہ اس سے کم طاقت کے بجلی منصوبے بھی مرکز کی اجازت سے مشروط ہوتے تھے۔ مرکز نے کبھی صوبوں میں ان قدرتی وسائل سے بھر پور استفادہ کرنے کی ضرورت محسوس نہیں کی ۔ اس ضمن میں خیبر پختونخوا کے بالائی علاقوں میں پانی کے قدرتی ذخائر وافرمقدار میں موجودہونے کے باوجود صرف اور صرف ایک خاص مقام پر ڈیم بنانے پر عدم قومی اتحاد کی وجہ سے ایک خاص لابی ملک کے مستقبل کے ساتھ کھلواڑ پراتری تھی اور یوں خیبر پختونخوا کے پانیوں سے سستی ترین بجلی منصوبوں سے جان بوجھ کر تعرض برتا گیا۔ اب بھی جبکہ اٹھارہویں آئینی ترمیم کے بعد صوبوں پر پچاس میگاواٹ سے زیادہ قوت کے بجلی منصوبوں پر سے پابندیاں ہٹائی جا چکی ہیں اس کے باوجود وفاق سے حتمی منظوری لینا ضروری ہے جو ایک لحاظ سے دیکھا جائے تو اٹھارہویں ترمیم کے ساتھ بھی مذاق ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے گزشتہ روز اسلامیہ کالج میں ایک سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے جہاں سی پیک منصوبے کو ملک میں خوشحالی آنے کا باعث قرار دیا ہے وہیں انہوں نے ایک بار پھریہ گلہ کیا ہے کہ ہم بین الاقوامی سرمایہ کاروں کو راغب کر رہے ہیں تاہم اگر بڑے بھائی نے رکاوٹیں کھڑی نہ کیں تو صوبے میں 30 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری لانے میں کامیاب ہو جائیں گے۔ وزیر اعلیٰ پرویز خٹک کے خیالات یقینا مثبت طرز فکر کے غماض ہیں اور اب تک سی پیک پر چھوٹے صوبوں کی جانب سے جو اعتراضات کئے جاتے رہے ہیں اس سوچ میں اب تبدیلی کے آثار دیکھے جا سکتے ہیں تاہم وزیر اعلیٰ پرویز خٹک نے بین السطور جو گلہ یا شکایت کی ہے اس پر بھی وفاقی حکومت کو ہمدرددانہ غور کرنا چاہئے کیونکہ قوم کے ماضی پر نگاہ ڈالی جائے تو صوبوں کے منصوبوں کی راہ ہمیشہ کھوٹی کرنے کی پالیسی نے وفاق اور صوبوں کے مابین تعلقات کار پر عدم اتفاق کے سایوں کی وجہ سے صوبوں کو شکایات کے مواقع فراہم کئے ہیں۔ اس لئے اگر سی پیک کے تناظر میں بین الاقوامی سرمایہ کاروں کو راغب کرنے میں صوبائی حکومت کامیاب ہو ئی ہے تو مرکزی حکومت کو اس کی حوصلہ افزائی ضرور کرنی چاہئے۔

متعلقہ خبریں