مشال خان کو اپنی صفائی کا موقع نہیں دیا گیا، آئی جی خیبر پختونخوا

مشال خان کو اپنی صفائی کا موقع نہیں دیا گیا، آئی جی خیبر پختونخوا

ویب ڈ یسک: مشال خان قتل کیس ، مشال خان کے خلاف اب تک کوئی ایسا ثبوت نہیں ملا جس کی بنیاد پر عدالتی کارروائی کی جائے،آئی جی  خیبرپختونخوا صلاح الدین محسود 

تفصیلات کے مطابق پشاور مردان عبدالولی خان یونیورسٹی سانحہ کے حوالے سے پریس کانفرنس کرتے ہوئے آئی جی خیبرپختونخوا صلاح الدین محسودنے کہا کہ پولیس جب یونیورسٹی پہنچی تو ہنگامہ شروع تھا ۔بلوا شروع ہونے کے بعد پولیس کو مطلع کیا گیا جائے وقوعہ پر فوری طور پر ڈی ایس پی کو بھیجا جس نے اپنی جان خطرے میں ڈال کر متقول کی لاش کو وہاں سے نکالا کیونکہ ہجوم مشتعل تھا اور لاش کو جلانے کی کوشش کر رہا تھاانہوں نے کہا کہ  سوشل میڈیا کے حقائق جاننے کے لیے ایف آئی اے سے مدد مانگ لی ہے ، سوشل میڈیا پر بعض اوقات جعلی چیزیں ہوتی ہیں ۔

صلاح الدین محسود ن کا کہنا تھا کہ  تفتیش کی سمت درست ہے ، امید ہے مردان پولیس اچھے نتائج دے گی ، صلاح الدین محسود نےمزید کہا کہ

مشال خان کے قتل میں ملزم کو ملزم سمجھیں گے سیاسی وابستگی نہیں دیکھیں گے واقعے کے بعد مجموعی طور پر 59 افراد کو حراست میں لیا 6 یونیورسٹی ملازمین سمیت 26 زیر حراست ہیں، ایف آئی آر میں 20 ملزموں کو نامزد کیا گیا تھا ، تفتیش کے بعد 11 ملزموں کو مزید شامل کیا گیا ، واقعے کی تمام تفصیلات کل سپریم کورٹ میں جمع کرا دیں گے ۔ 

متعلقہ خبریں