شارجہ میں بریتھ ویٹ کی عمدہ بلے بازی، ویسٹ انڈیز کے 200 رنز مکمل

شارجہ میں پاکستان کے خلاف تیسرے کرکٹ ٹیسٹ میچ کے دوسرے دن ویسٹ انڈیز کی پہلی اننگز جاری ہے۔

اب سے کچھ دیر قبل تک ویسٹ انڈیز نے پانچ وکٹوں کے نقصان پر 206 رنز بنا لیے تھے۔

٭ میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

اس وقت کریز پر ڈورچ اور بریتھ ویٹ موجود ہیں اور بریتھ وٹ نصف سنچری بنانے کے بعد پراعتماد انداز میں کھیل رہے ہیں۔

ویسٹ انڈیز کے آؤٹ ہونے والے پہلے بلے باز جانسن تھے جنھیں وہاب ریاض نے ایل بی ڈبلیو کیا۔

اس کے بعد جب سکور 32 پر پہنچا تو ذوالفقار بابر نے اپنے پہلے ہی اوور میں ڈیرن براوو کو آوٹ کیا۔ وہ 11 رنز بنانے کے بعد محمد عامر کے ہاتھوں کیچ ہوئے۔

مجموعی سکور میں چھ رنز کے اضافے کے بعد یاسر شاہ نے اس اننگز میں اپنی پہلی اور پاکستان کے لیے تیسری وکٹ مارلن سیموئلز کو ایل بی ڈبلیو کر کے حاصل کی ۔

مارلن نے اس فیصلے کے خلاف ریویو لیا لیکن تھرڈ امپائر کا فیصلہ بھی ان کے خلاف ہی گیا۔

آؤٹ ہونے والے چوتھے کھلاڑی جرمین بلیک وڈ تھے جنہیں محمد عامر نے آؤٹ کیا۔

 

پانچویں وکٹ کے لیے راسٹن چیز اور بریتھ ویٹ کے درمیان 83 رنز کی شراکت ہوئی جس کا خاتمہ محمد عامر نے کیا۔

آؤٹ ہونے والے بلے باز چیز تھے جو ٹیسٹ کرکٹ میں اپنی پہلی نصف سنچری بنانے کے بعد یونس خان کے ہاتھوں کیچ ہوئے۔

اس سے قبل پاکستانی ٹیم اپنی پہلی اننگز میں 281 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی۔ پاکستان کے آخری دو بلے باز مجموعی سکور میں 26 رنز کا اضافہ ہی کر سکے۔

پیر کو محمد عامر اور یاسر شاہ نے پاکستانی اننگز 255 رنز آٹھ کھلاڑی آؤٹ سے دوبارہ شروع کی اور سکور میں مزید 25 رنز کا اضافہ کیا۔

اس موقع پر جوزف نے عامر کو بولڈ کر کے ویسٹ انڈین ٹیم کو نویں کامیابی دلوا دی۔ اسی اوور میں یاسر شاہ بھی جوزف کی دوسری وکٹ بن گئے اور پاکستانی اننگز تمام ہو گئی۔

ویسٹ انڈیز کی جانب سے اس اننگز میں بشو نے چار، شینن گیبریئل نے تین، جوزف نے دو جبکہ چیز نے ایک پاکستانی کھلاڑی کو آؤٹ کیا۔

کھیل کے پہلے دن بھی ویسٹ انڈین بولرز کی عمدہ کارکردگی کے نتیجے میں پاکستانی بیٹسمین بڑے سکور تک پہنچنے کی تگ ودو کرتے نظر آئے تھے۔

پہلی اننگز میں پاکستان کے لیے سمیع اسلم، یونس خان، مصباح الحق اور سرفراز احمد نے نصف سنچریاں تو سکور کیں لیکن وہ ٹیم کو ایک بڑے سکور تک پہنچانے میں ناکام رہے۔

 

یہ پاکستان کے کپتان مصباح الحق کا بطور کپتان 49واں ٹیسٹ ہے اور وہ اب پاکستان کے لیے سب سے زیادہ ٹیسٹ میچوں میں قیادت کرنے والے کپتان بن گئے ہیں۔

اس میچ کے لیے پاکستان اور ویسٹ انڈیز کی ٹیموں میں دو، دو تبدیلیاں کی گئی ہیں۔

پاکستانی ٹیم میں فاسٹ بولرز سہیل خان اور راحت علی کی جگہ محمد عامر اور وہاب ریاض کو شامل کیا گیا ہے جبکہ ویسٹ انڈین ٹیم میں شائے ہوپ اور میگوئل کمنز کی جگہ شین ڈورچ اور الزاری جوزف شامل ہوئے ہیں۔

پاکستان یہ ٹیسٹ سیریز پہلے ہی دو صفر کی فیصلہ کن برتری حاصل کر چکا ہے اور اب اس کی نظریں ٹی 20 اور ون ڈے سیریز کے بعد ٹیسٹ سیریز میں بھی وائٹ واش پر ہیں۔

متعلقہ خبریں