Daily Mashriq

حکومتی اقدامات کے نتیجے میں قومی معیشت بتدریج مستحکم ہورہی ہے،وزیراعظم

حکومتی اقدامات کے نتیجے میں قومی معیشت بتدریج مستحکم ہورہی ہے،وزیراعظم

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ حکومت کے اقدامات کی بدولت قومی معیشت بتدریج بہتر اور مستحکم ہو رہی ہے۔

انہوں نے یہ بات ہفتے کے روز لاہور میں پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی اور فوری زرعی قرضوں کے لئے بڑے پرائیویٹ تجارتی بینکوں کے درمیان خدمات کی فراہمی کی سطح کے معاہدے پر دستخطوں کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

وزیراعظم نے کہا کہ حکومت کو اپنے پہلے سال میں قرضے کی دوبارہ ادائیگی کی مد میں دس ارب ڈالر ادا کرنے تھے جس سے روپے کی قدر میں کمی ہوئی۔

انہوں نے کہا کہ اب روپے کی قدر اور کاروباری اعتماد میں بہتری آرہی ہے انہوں نے کہا کہ سٹاک مارکیٹ میں بھی مثبت رجحان دیکھاجارہا ہے۔

انہوں نے کہاکہ حکومت کے اقتصادی اقدامات کا مقصد پسماندہ طبقے کا معیار زندگی بہتر بنانا اور امراء اور غرباء کے درمیان فرق کم کرنا ہے۔

چھوٹے کاشتکاروں کے لئے قرضے کی فراہمی کی سکیم کو سراہتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ95 فیصد کاشتکاروں کو قرضے کی اشد ضرورت ہے اور یہ اقدام ان کی زندگی میں انقلاب لائے گا۔

انہوں نے کہا کہ معاہدے سے کاشتکاروں اور زرعی شعبے کو فائدہ ہوگا جس سے ملک کی مجموعی معیشت بہتر ہوگی۔

وزیراعظم نے کہا کہ حکومت احساس پروگرام کے تحت نادار طبقے کی فلاح و بہبود پر تقریباً دوسو ارب روپے خرچ کر رہی ہے انہوں نے کہا کہ احساس پروگرام کے تحت مختلف سکیمیں اور اقدامات بھی شروع کیے جارہے ہیں جن میں نوجوانوں کیلئے بلاسود قرضے اور ضرورت مندوں کیلئے مالی معاونت شامل ہے۔

انہوں نے کہا کہ درست اعدادو شمار اکٹھے کیے جاہے ہیں تاکہ کوئی بھی مستحق اس سہولت سے محروم نہ رہے۔

سٹیٹ بینک کے گورنر رضا باقر نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم کے وژن کے تحت بہت سے لوگوں کی انتھک کوششوں کی بدولت ملک کی اقتصادی صورتحال مستحکم ہوگئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ آج روپے کی شرح تبادلہ میں عدم استحکام نہیں ہے اور زرمبادلہ کے ذخائر میں اضافہ ہورہا ہے جبکہ بین الاقوامی مالیاتی ادارے حکومت پاکستان کے اقدامات کی تعریف کررہے ہیں۔

سٹیٹ بینک کے گورنر نے کہا کہ اقتصادی استحکام سے ترقی کی راہ ہموار کرنے میں مدد ملتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اقتصادی ترقی سے روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے جس سے ملک خوشحالی کی راہ پر گامزن ہو گا۔

انہوں نے کہا کہ سٹیٹ بینک دوسرے بینکوں کے تعاون سے آمدنی میں فرق کم کرنے پر کام کررہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کم آمدن والے لوگوں کو قرضے فراہم کئے جائیں گے۔

اس سے قبل لاہور میں صوبائی بیورو کریسی اور اعلیٰ پولیس افسروں کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے وزیراعظم نے اس بات پر زور دیا کہ اہل بیورو کریسی کا ملک کی اقتصادی ترقی میں اہم کردار ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں نئے پاکستان میں پرانی سوچ کو بدلنا ہے کیونکہ پرانا نظام زیادہ دیر تک کام نہیں کرسکتا۔

وزیراعظم نے بیورو کریسی کو ہدایت کی کہ وہ میرٹ کو اپنائے اور عوامی خدمت کی ذمہ داری کو نبھائے۔

انہوں نے کہا کہ بیورو کریسی اور دوسرے عہدوں پر تقرریاں میرٹ پر کی گئی ہیں اور تحریک انصاف کی حکومت نے سرکاری افسروں کو کسی بھی سیاسی مداخلت سے آزاد کیا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ صوبہ پنجاب میں نظم و نسق اور امن و امان کی صورتحال بہتر بنانے کی ضرورت ہے۔

عمران خان نے کہا کہ غریبوں کی زندگیوں میں بہتری لانے کیلئے کوششیں تیز کی جانی چاہئیں۔

انہوں نے کہاکہ پولیس کا محکمہ قانونی اختیار رکھتا ہے لیکن یہ اختیار صرف عوام کی خدمت اور ان کی زندگیوں میں بہتری لانے کیلئے استعمال ہونا چاہیے۔

متعلقہ خبریں