Daily Mashriq

مشرقیات

مشرقیات

سعید بن عامرؓ حضرت عمر فاروقؓ کے دور خلافت میں ایک علاقے کے گورنر تھے۔ اس وقت امیر المومنینؓ شہروں کی جامع مساجد میں جاتے اور عام لوگوں سے گورنر کی بابت پوچھتے تھے کہ لوگو! تمہیں گورنر سے کوئی شکایت تو نہیں؟

جب حضرت عمر فاروق اعظمؓ نے حضرت سعید بن عامرؓ کی بابت لوگوں سے پوچھا کہ گورنر سے کوئی شکایت تو نہیں تو لوگوں نے جواب دیا چار شکایتیں ہیں۔ حضرت عمر فاروقؓ نے گورنر کو بلایا اور فرمایا: چار شکایتیں ہیں لوگوں کو آپ سے؟

لوگوں نے بتایا کہ پہلی شکایت یہ کہ آپ ان سے فجرکے وقت نہیں ملتے‘ اشراق کے وقت ملتے ہیں۔ حضرت سعید بن عامرؓ نے جواب دیا کہ میری بیوی جس نے تیس سال میری خدمت کی اب بیماری کی وجہ سے معذور ہوگئی ہے‘ میں صبح نماز پڑھ کر اپنی بیوی کو ناشتہ بناکردیتا ہوں‘ اس کے کپڑے دھوتا ہوں‘ اس کی صفائی ستھرائی کرتا ہوں‘ اس لئے دیر ہو جاتی ہے لوگوں سے ملنے میں۔ ابھی جب لوگوں نے پہلی شکایت کا جواب سناتو ان کے رونگٹے کھڑے ہوگئے۔ دوسری شکایت یہ ہے کہ آپ ہفتے میں ایک دن ملتے نہیں لوگوں سے؟ سعید بن عامرؓ بولے:میں اس کا جواب ہر گز نہ دیتا اگر پوچھنے والے آپ نہ ہوتے۔ بہر حال بتا دیتاہوں‘ میں گورنر ضرور ہوں لیکن بہت غریب ہوں‘ میرے پاس یہی ایک جوڑا کپڑوں کا ہے جسے میں ہفتے میں ایک دن دھوتا ہوں‘ پھر سوکھنے تک میں اپنی بیوی کے کپڑے پہنتا ہوں اس لئے لوگوں کے سامنے نہیں آتا۔ یہ سن کر حضرت فاروق اعظمؓ رونے لگے اور سعید بن عامرؓ کے بھی آنسو جاری ہوگئے۔

تیسری شکایت یہ کہ آپ رات کو لوگوں سے نہیں ملتے؟

سعید بن عامرؓ بولے:سارا دن مخلوق کی خدمت کرتا ہوں‘ میری داڑھی سفید ہوچکی ہے‘ مطلب کہ کسی وقت بھی مالک کا بلاوا آسکتا ہے اس لئے پوری رات اس رب ذوالجلال کی عبادت کرتا ہوں‘ کہیں حشر کے روز رسوا نہ ہوجائوں۔

چوتھی شکایت ان لوگوں کی یہ ہے کہ آپ پر بے ہوشی کا دورہ کیوں آتا ہے؟

سعید بن عامرؓ بولے:میں چالیس سال کی عمر میں مسلمان ہوا‘ ان چالیس برسوں کے گناہ یاد کرکے روتا ہوں‘ کیا پتا میرے مالک مجھے بخشے گا بھی یا نہیں‘ بس خشیت الٰہی سے میں بے ہوش ہو جاتا ہوں۔ اے عمر! ان شکایتوں کے نتیجے میں جو میری سزا بنتی ہے دے دو۔حضرت عمرؓ کے ہاتھ اٹھے اور رب سے التجا کی: خدایا اس طرح کے کچھ اور گورنر مجھے عطا کئے جائیں‘ مجھے ان پر فخر ہے۔ (کتاب: حیات صحابہؓ)

کیسے کیسے عظیم ہستیاں ہماری حکمران تھیں ان کے کردار کی عظمت کی وجہ سے وہ دور مسلمانوں کے عروج کا دور تھا۔ حاکم حقیقت میں عوام کے خادم ہوتے صرف نام کے نہیں۔ اب تو جیسے حالات ہی الٹ ہوگئے ہیں اقتدار تو حاصل ہی عیش و آرام کے لئے کیا جاتا ہے اس وجہ سے مسلمان آج پس رہے ہیں۔

متعلقہ خبریں