Daily Mashriq

گم گشتہ ''پیس پروسیس '' کی بحالی کا خواب

گم گشتہ ''پیس پروسیس '' کی بحالی کا خواب

مقبوضہ کشمیر کی وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی نے اپنی جماعت پیپلزڈیموکریٹک پارٹی کے قیام کے اٹھارہ برس مکمل ہونے کے موقع پرسری نگر میں ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کچھ کھلے اور کچھ ڈھکے لفظوں میں کشمیر اور کشمیریوں کو پنجرے سے آزاد کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔محبوبہ مفتی کے خطاب کے چند اہم نکات یوں تھے۔کشمیر اور کشمیری پنجرے میں بند ہیں انہیں آزاد کرنے سے ہی جموں کشمیر کے مسئلے کا پائیدار اور منصفانہ حل نکالا جا سکتا ہے۔بھارت کشمیر دونوں حصوں میں آمدورفت کے تمام راستے کھول دے جن میں سیالکوٹ جموں روڈ بھی شام ہے جو ریاست کو براہ راست پاکستان سے ملاتی ہے۔منقسم کشمیر کے آر پار قانون ساز اسمبلی کا قیام عمل میں لایا جائے اور سال میں کم ازکم دو مرتبہ اس اسمبلی کے اجلاس سر ی نگر اور مظفر آباد میں منعقد کئے جائیں۔روایتی راستوں کو بند کرنے سے جموں وکشمیر ایک پنجرے کی شکل اختیار کر گیا ہے اور ان راستوں کو کھول کر اسے آزادی دی جائے۔ نظریات کو قتل کیا جا سکتا ہے نہ قید البتہ انہیں متبادل نظریات سے بدلا جا سکتاہے ۔آزادی کا ایک نظریہ ہے جس کی وجہ سے پتھر بازی ہوتی ہے ،تشدد ہوتا ہے ۔بندوق چلتی اور افراتفری پھیلتی ہے ۔اسی نظریے کی وجہ سے آج کے نوجوان کو فوج ،پولیس،سی آر پی کسی چیز سے ڈر نہیں لگتا یہی نظریہ آج کا سب سے بڑا چیلنج ہے۔

سری نگر مظفرآباد تجارت کو کسی صورت بند نہیں ہونے دیا جائے گا بلکہ مزید راستے کھولنے کا مطالبہ جا ری رہے گا۔ محبوبہ مفتی جب یہ خطاب کر رہی تھیں تو انہوں نے سبز لباس زیب ِتن کر رکھا تھا ۔کشمیر میں شیخ عبداللہ کے زمانے سے ہی سبز رنگ اور لباس کی ایک علامتی حیثیت ہوتی ہے ۔کشمیر گزشتہ ایک سال سے جس کربناک دور سے گزرا ہے محبوبہ مفتی کے لب ولہجے پر اس کے اثرات نمایاں ہیں۔محبوبہ مفتی اور ان کی جماعت کی سیاست کا ظہور کشمیر میں عسکریت کے دور کے بعد شروع ہونے والے سیاسی عمل کے ساتھ ہی ہوا تھا۔یہ کشمیریوں کے اُبلتے جذبات اور رستے ہوئے زخموں پر سیاسی مرہم رکھنے کی ایک کوشش تھی جس میں عالمی طاقتوں کا گہرا عمل دخل بھی تھا ۔اسی لئے محبوبہ مفتی اور ان کے والد مفتی محمد سعید نے وادی میں آزادی پسندوں ،پاکستان اور عوام کے مقبول جذبات سے قریب تر محاورے اور اصطلاحات اپنائیں ۔انہوں نے کشمیری عسکریت کے مضبوط کرداروں کے ساتھ بھی روابط قائم کئے ۔انہی کے دور میں تاریخ میں پہلی بار سری نگر مظفرآباد بس سروس کے افتتاح کے موقع پر من موہن سنگھ کے ساتھ جنرل پرویز مشرف کی صورت کسی پاکستانی حکمران کے پورٹریٹ بھی سجائے گئے۔محبوبہ مفتی اس دن آزادکشمیر سے جانے والے مسافروں کو چکوٹھی کے مقام پر خوش آمدید کہنے کے لئے بنفس نفیس موجود تھیں اور انہوں نے کشمیر میں پاکستان کی علامت سمجھے جانے والے سبز رنگ کا لباس پہنا ہوا تھا۔محبوبہ مفتی کی جماعت کشمیر میں سیلف رول کا مطالبہ کر رہی تھی اور اسی دوران پاکستان میں جنرل پرویز مشرف نے بھی اپنا چار نکاتی فارمولہ پیش کیا تھا جس میں کشمیر سے فوجی انخلاء کے بعد اسے ایک نیم خود مختار علاقے کی حیثیت دینا مقصود تھا۔ان اقدامات کو امریکہ کی حمایت ہی حاصل نہیں تھی بلکہ وہ فریقین پر مسلسل دبائو برقرار رکھے ہوئے تھا۔عالمی چھتر چھائے میں منعقد ہونے والی یہ کوشش کامیاب نہیں ہو سکی مگر سری نگر مظفر آباد تجارت اور منقسم خاندانوں کے درمیان آمدورفت کی کچی ڈور جیسے تیسے بحال ہی رہی۔یہ سارے اقدامات مصنوعی ثابت ہوئے اور کشمیر کی سرزمین پر فوجی جمائو اور دبائو اور انسانی حقوق کے حوالے سے کوئی بڑی تبدیلی رونما نہ ہو سکی ۔اب ایک پرانے کیس میںبھارت کی قومی تحقیقاتی ایجنسی نے حکومت کو سری نگر مظفر آباد تجارت بند کرنے کا مشورہ دیا ہے ۔چند دن قبل مظفر آباد سے سری نگر جانے والے ایک مال بردار ٹرک سے ساٹھ کلوگرام کے قریب ہیروئن برآمد ہوئی تھی جس کے بعد بھارتی ایجنسیوں نے ٹرک کو ضبط کرکے آزادکشمیر کے شہری ڈرائیور کو گرفتار کر لیا تھا ۔ماضی میں بھی ایسے دو واقعات رونما ہو چکے ہیں۔

ان واقعات میں بھی آزادکشمیر کے ڈرائیور سری نگر کی جیل میں سڑھ رہے ہیں۔کنٹرول لائن پر منقسم خاندانوں کے لئے کھلنے والی یہ کھڑکی عالمی مافیا کی نظروں میں آگئی ہے اور وہ اس راستے کو ہیروئن کی سمگلنگ کے لئے استعمال کرنے کی بار بار کوشش کررہی ہے ۔کچھ واقعات میں اس مذموم حرکت میں عالمی نیٹ ورک کا ہاتھ ثابت ہو چکا ہے ۔عین ممکن ہے کہ اس عمل کو بھارت کی اشیرباد بھی حاصل ہو کیونکہ اب بھارت کی طرف سے کشمیر کے دونوں حصوں میں تجارت کو بند کرنے کی باتیں ہونے لگی ہیںاورمحبوبہ مفتی نے ان آوازوں کی مخالفت کی ہے بلکہ نئے راستوں پر آمدورفت اور تجارت شروع کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔انہوں نے اعلان ِلاہور کے بعد شروع ہونے والے عمل کی بحالی پر بھی زور دیا ہے مگریہ پاکستان اور بھارت کے درمیان شروع ہونے والا وہ پیس پروسیس تھا جس پر امریکہ کی چھاپ تھی ۔اب امریکہ جس طرح جنوبی ایشیا کے تنازعات میں بھارت کے ساتھ کھڑا ہو رہا ہے اس سے امریکہ کی پاکستان پر اثرا نداز ہونے کی صلاحیت کم ہو گئی ہے۔اس لئے محبوبہ مفتی کی آواز صدا بصحرا ثابت ہونا یقینی ہی ہے۔

متعلقہ خبریں