Daily Mashriq


مشرقیات

مشرقیات

جنگی مزاح

جنگ وجدل کے اس ماحول میں کوئی جملہ لطیف کیا لکھے لیکن اس طرح کے مواد کی ضرورت انہی دنوں میں زیادہ محسوس ہوتی ہے جب کوئی ایسی بات کی جائے جو لطیف ہو مگر شائستگی کیساتھ ان دنوں سوشل میڈیا پر شعیب ملک کی تیاریوں کے حوالے سے جو کچھ ڈالا جا رہا ہے وہ مناسب نہیں لیکن منچلوں کو کوئی کیا روکے۔ اب تو منچلوں کو کچھ کہنے کو دل بھی نہیں کرتا، وہ نوجوان جو بھارتی پائلٹ کو پاکستانی سرزمین پر گرے ہونے کے باوجود یقین دلانے میں کامیاب ہوا کہ وہ بھارت ہی کے علاقے میں گرا ہے اور علاقے کا نام کلاں ہے۔ نوجوان کی یہ سوچ اور حاضر دماغی دیکھیں میرے جیسا کوئی ہوتا تو سب سے پہلے جذباتی ہو کر نجانے کیا کیا کچھ منہ سے نکالتا اور پاگلوں کی طرح پتھر مارتا، بعد میں آنے والوں نے کیا بھی یہی کہ آخر ہندو کی مذمت نہیں مرمت مطلوب تھی۔ اس جنگ زدہ ماحول میں مودی کی چھاتی کا بار بار تذکرہ جوانوں کی چھاتیاں پھلانے کا باعث بن رہا ہے۔ مشاہد نے بڑا خوب کہا کہ گاندھی کی چھاتی ناپ لیتے۔ چھاتیوں کا تذکرہ اور وہ بھی ڈرانے کیلئے مودی جی نے ذرا نہ سوچا کہ ان کے الفاظ سے مشتعل جذبات سے کتنی خرابی ہوسکتی تھی۔ بہرحال چھاتیاں پھلا کر یہاں بھی جوانان وطن تیار بیٹھے ہیں ۔ اب ان لوگوں کو کوئی کیسے سمجھائے کہ نادان دوست بننے سے دانا دشمن ہی بہتر ہوتا ہے۔ مودی جی جیسی فخر سے اپنی چھاتی کا تذکرہ کرتے ہیں ان کو سوچنا چاہئے کہ پاکستان کے وزیراعظم کھلاڑی ہیں، کھلاڑی جب سے وزیراعظم بنے ہیں خود تو ورزش کے عادی ہیں ہی اپنی سیکورٹی والوں اور عملے کا بھی سویرے سویرے سانس پھلا کر ان کو بھی چاق وچوبند بنا دیا ہے۔ مودی جی چھاتی چوڑی ہے تو آؤ ہمارے وزیراعظم سے پنجہ لڑاؤ، کشتی کرو یقین کرو ایک لگائے تو بھارتی جہاز کی طرح سیدھے زمین پر اور دن میں تارے نظر آئیں گے۔ شاید تم کو تارے نظر نہ آئیں کیونکہ آسمان پر ہمارے شاہینوں نے جس طرح تمہارے جہازوں کی درگت بنا دی تمہارے پائلٹ دیکھ پاتے تو مقابلہ نہ سہی کم ازکم جان بچا کر بھاگ تو سکتے تھے۔ بابائے مشرقیات کو تو انتظار ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان امن کب قائم ہوگا مگر مودی عمران خان کا دنگل دیکھنے کو دل مچل رہا ہے کہ پہلے ہی تھپڑ میں دھوتی اُترتے تو دیکھیں۔ مودی جی کی دھوتی سرحدوں پر تو لہرا رہی ہے خیر وہ جوانوں کا مسئلہ ہے ان کو کم ازکم اپنے فضائیہ کے ایک اعلیٰ سینئر افسر کو برطرف نہیں کرنا چاہئے تھا کیونکہ شاہینوں کا مقابلہ کوؤں کے بس کی بات نہیں خیر بہرحال جو لوگ اپنے ملک کیلئے لڑتے ہیں اور جان دیتے ہیں وہ دشمن بھی ہو تو قابل احترام ہوتے ہیں۔ ہم نے گرفتار بھارتی پائلٹ کو عزت بھی دی اور چائے بھی پلائی۔ مودی جی تو ویسے بھی چائے والا ہی ہے۔ پاکستان آجائے تو عمران خان ان کو گرم گرم چائے پلائیں گے۔

متعلقہ خبریں