Daily Mashriq

علما کرام کی انتہا پسندی کے خاتمے کیلئے وزیراعظم کی کوششوں کی حمایت

علما کرام کی انتہا پسندی کے خاتمے کیلئے وزیراعظم کی کوششوں کی حمایت

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ملک میں یکساں نظام تعلیم رائج کرنے کی اشد ضرورت ہے تاکہ دینی مدارس سے فارغ ہونے والے طلبا کو بھی ترقی کے وہی مواقع میسر ہوں جو دیگر تعلیمی اداروں کے طلبا کو ہوتے ہیں۔

اسلام آباد میں علما کرام کے وفد سے ملاقات میں انہوں نے واضح کیا کہ نظام و نصاب تعلیم میں اصلاحات کے ضمن میں حکومت ہر ممکن اقدامات کرے گی۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ ’حکومت ملک میں عوامی فلاح و بہبود کے فروغ کے لیے کوشاں ہے تاہم ساتھ ہی شرپسند عناصر کے عزائم کو ناکام بھی بنانا ہے اور اس مقصد کے حصول کے لیے علما و مشائخ کلیدی کردار ادا کر سکتے ہیں‘۔

وزیرِ اعظم نے اس موقع پر علما کو ملک میں اقتصادی ترقی ، کرپشن کے خاتمے اور عوامی فلاح و بہبود کے حکومتی پروگرام کی تفصیلات سے بھی آگاہ کیا۔

ملاقات کے دوران وفد نے ملک سے انتہا پسندی، دہشت گردی اور فرقہ واریت کے خاتمے اور ملک کی سماجی و اقتصادی ترقی کے لیے حکومت کی کوششوں کی بھرپور حمایت کا اعادہ کیا۔

علما کرام کے وفد نے نیوزی لینڈ میں حالیہ دہشت گردی کا تذکرہ کرتے ہوئے واضح کیا کہ دہشت گردی کا کوئی مذہب ہوتا ہے اور نہ ہی اسے کسی مذہب سے جوڑنا مناسب ہے۔

انہوں نے کہا کہ ملک بھر کے علما مسلمانوں کے خلاف بے بنیاد پراپیگنڈے کو نہ صرف مسترد کرتے ہیں بلکہ ان عناصر کی بھی مذمت کرتے ہیں جو اپنے مذموم مقاصد کے لیے اسلام کے نام کو بدنام کرتے ہیں۔

علما نے 'پیغامِ پاکستان کانفرنس' کی سفارشات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ مذکورہ سفارشات امن و امان کے فروغ کے لیے معاون ثابت ہوں گی۔

انہوں نے نیوزی لینڈ کی وزیراعظم کے رویے اور مسلم برادری کے ساتھ ان کے اظہار یکجہتی کو لائقِ تحسین قرار دیا۔

علما کرام نے وزیرِ اعظم عمران خان کی جانب سے ملک میں بے سہارا اور محروم طبقات کے لئے اٹھائے جانے والے اقدامات کو سراہا۔

علما کرام کے وفد میں مفتی منیب الرحمن، صاحبزادہ حامد رضا، پیر محمد نقیب الرحمٰن، پیر قمر الدین سیالوی، سید مخدوم عباس، پیر محمد امین الحسنات، سید علی رضا بخاری، مولانا عبدالمالک، مولانا ایم حنیف جالندھری، مفتی محمد نعیم سمیت دیگر شامل تھے۔

متعلقہ خبریں