Daily Mashriq

انجمن عاشقان جاتی امرائ

انجمن عاشقان جاتی امرائ

محترمہ بینظیر اور پیپلزپارٹی پر این آر او کی پھبتی کستے انجمن عاشقان جاتی امراء والے بھول جاتے ہیں کہ نوازشریف اسی این آر او کی بدولت ہی وطن واپس آپائے تھے کیونکہ محترمہ نے این آر او کی خلاف ورزی کرتے ہوئے وطن پہنچتے ہی نوازشریف کی واپسی کا مطالبہ کر دیا تھا۔ اس سے قبل نوازشریف لندن سے ایک طیارے کے ذریعے اسلام آباد ایئر پورٹ پر اُترے تو انہیں جدہ بھجوا دیا گیا، چند دن بعد سعد الحریری اور ایک عربی شہزادہ اسلام آباد میں ایک پریس کانفرس کر کے ہمیں سمجھا رہے تھے کہ نواز شریف اور پرویز مشرف کے درمیان معاہدہ جلاوطنی کی مدت 10سال تھی، نوازشریف نے اس معاہدہ کی خلاف ورزی کی۔ کچھ پیچھے چلیں تو دسمبر دوہزار کی ایک شب نوازشریف معاہدہ جلاوطنی کے عوض اپنے خاندان سات ملازمین سمیت سعودی عرب سے بھجوائے گئے قطری طیارے میں ملک چھوڑ گئے تھے۔ اس معاہدہ جلاوطنی کا پہلے پہل یکسر انکار ہوتا رہا، پھر پانچ سال کے معاہدے کا اعتراف ہوا لیکن سعدالحریری (ان کے والد نے یہ معاہدہ کروایا تھا امریکہ اور سعودی عرب کے نمائندے کی حیثیت سے) کی پیش کردہ دستاویزات نے حقیقت دوچند کردی۔ اس امر پر دو آراء نہیں کہ بارہ اکتوبر1999ء کا پرویز مشرف کا اقدام غیرقانونی تھا مگر 13ماہ کی جیل نے اس وقت کے مطابق حکمران نے دس سال کیلئے سیاست سے دستبرداری کے عوض جلاوطنی کو ترجیح دی۔ ان کے حامی تب اور آج بھی سمجھتے ہیں جان بچانے کی وہ حکمت عملی درست تھی لیکن بینظیر بھٹو کا این آر او اور اسی این آر او کی چھتر چھایا میں نوازشریف کی واپسی پر دو آراء ہیں۔ اولاً بینظیر نے فوجی آمر سے ڈیل کرلی، ثانیاً یہ کہ نواز شریف کی واپسی ان کا حق تھا۔ غالباً اسی حق کی بنا پر چودھری افتخار کی عدالت نے انہیں بغاوت کیس اور دو دوسرے مقدمات میں ہوئی سزاؤں کیخلاف اپیل کی مدت گزر جانے کے باوجود اپیل کا حق دیا اور این آر او غیرقانونی قرار دیدیا۔ ''میٹھا میٹھا ہپ ہپ اور کڑوا کڑوا تھو تھو''۔ اچھا یہ فرمایئے کہ این آر او کے تحت نواز شریف دور کے وہ مقدمات جو بند ہوئے تھے سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد کھل گئے لیکن میاں نوازشریف کیخلاف مقدمات کیوں نہ بحال ہوئے؟۔ نون لیگ والے کہتے ہیں وہ انتقامی مقدمات تھے، معاہدہ جلاوطنی کے تحت ختم ہوگئے۔ بہت خوب تو کیا یہ این آر او نہیں تھا؟۔ ایک عزیز دوست نے چند دن اُدھر سوشل میڈیا پر بھٹو صاحب کو آمر قرار دیتے ہوئے ان کے مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر بننے کو جواز کے طور پر پیش کیا۔ عرض کیا یہ تو بتا دیجئے کہ ایل ایف او کے تحت چلتے ملک میںکس قانون کے تحت انتقال اقتدار ہو پاتا؟ جواب میں پھبتی کسی بھٹو ایوب کی پیداوار تھے۔ ان کالموں میں ایک سے زیادہ بار عرض کرچکا بھٹو سکندر مرزا کے دور میں عملی سیاست میں آئے، سکندر مرزا نے انہیں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں پاکستانی وفد کا سربراہ بنا کے بھیجا۔ انہوں نے اپنی صلاحیتوں کے جوہر دکھائے، واپسی پر انہیں وفاقی کابینہ کا حصہ بنا لیا گیا، یہ1957ء کی بات ہے اسی کابینہ میں ایوب خان وزیر دفاع تھے۔ اکتوبر1958ء میں انہوں نے سکندرمرزا کی حکومت کو رخصت کر کے اقتدار سنبھال لیا۔ بعد میں بھٹو بھی ان کی کابینہ میں شامل ہوئے، مختلف وزارتوں سے ہوتے ہوئے وزیرخارجہ بنے اور یہی وزارت ان کی ملکی وعالمی شہرت کا باعث بنی۔ بھٹو صاحب پر پھبتی کستے اس دوست سے پوچھا کہ نوازشریف کو اقتدار کے ایوانوں میں متعارف کروانے والے بریگیڈئیر قیوم قریشی تھے پھر انہوں نے ترقی کی پنجاب کے وزیراعلیٰ بنے اور جنرل حمید گل کے بنوائے اسلامی جمہوری اتحاد کے سربراہ بھی مشرف دور میں زیرعتاب آئے، تو مزاحمت کی بجائے جلاوطنی کا معاہدہ کر لیا۔ جواب ملا پچھلی باتیں چھوڑیں۔ ارے واہ آپ کہیں درست اور اگر تاریخ کی اسی کتاب کا دوسرا ورق پڑھا جائے تو غلط۔ سچ یہی ہے کہ نون لیگ بھٹو خاندان سیاست اور پیپلز پارٹی کی نفرت پر قائم ہوئی۔ 1980ء آئی جے آئی ہو یا پھر تنہا پرواز کرنے والی نون لیگ پنجاب سمیت ملک کے دوسرے حصوں سے بھٹوز کی نفرت کا شکار طبقات اس میں جمع ہوئے۔ ان طبقات کا خیال ہے، میاں نوازشریف کا میموگیٹ سکینڈل سپریم کورٹ سے مدعی کے طور پر رجوع کرنا درست اور زرداری کا بلوچستان حکومت گرانے میں کردار اسٹیبلشمنٹ کی خوشنودی کا حصول تھا۔ سینیٹ کے انتخابات اور چیئرمین وائس چیئرمین کے چناؤ کے وقت نون لیگ سے اتحاد نہ کرنا جمہوریت سے غداری تھا۔ یہ بجا ہوگا لیکن اپنے پانچ سالہ دورحکومت میں کیا نون لیگ کا رویہ سیاسی تھا، دوسری بات یہ ہے کہ حزب اختلاف کی جماعتیں سیاسی داؤپیچ کھیلتی ہیں، سینیٹ انتخابات میں حکومت کیخلاف حزب اختلاف کی جماعتیں مشترکہ اُمیدوار لائیں رضا ربانی کا دانہ ڈالنے والوں نے نہال ہاشمی اور مشاہد اللہ خان جیسے سیاسی کارکنوں کی بجائے جہیز میں ملے راجہ ظفرالحق کو اپنا اُمیدوار کیوں بنایا؟ قصے بہت ہیں، جناب شہباز شریف اپنی بڑھکوں اور پیٹ پھاڑنے کے اعلانات کی معافی مانگ چکے اس کا ذکر اب مناسب نہیں، لاریب سیاسی جماعتوں کو آگے بڑھنا چاہئے ماضی سے سبق حاصل کرکے لیکن اگر نوازشریف کی ضمانت انصاف کا بول بالا اور زرداری کی ضمانت ڈیل کہلائے تو چار اور ہوتی سرگوشیوں پر دھیان دینے کی ضرورت پڑتی ہے۔ پیپلز پارٹی کا سب سے بڑا کج اس کی میڈیا مینجمنٹ کا نہ ہونا ہے، نون لیگ کی کامیابی کے پیچھے اچھی میڈیا مینجمنٹ ہے۔ حرف آخر یہ ہے کہ جب سن دوہزار یا اس سے ایک آدھ سال پہلے دنیا میں تشریف لائی نسل اخبارات کی سرخیوں اور بیان فروشوں کے بھاشنوں کو ایمان کا چھٹا رکن بنکر پیش کرتی ہے تو بلکل افسوس نہیں ہوتا لیکن جب نون لیگ کے حامی متوالے اور میڈیا منیجرز تاریخ کو مسخ کرتے ہوئے سول سپرمیسی کی دہائی دیتے ہیں تو ہنسی آتی ہے۔ صاف سیدھی بات یہ ہے کہ سیاسی عمل صرف اس صورت آگے بڑھ سکتا ہے جب سیاسی جماعتوں کی باگ دوڑ سیاسی کارکنوں کے پاس ہوگی۔

متعلقہ خبریں