Daily Mashriq

گیس لیکج سے بڑھتے حادثات

گیس لیکج سے بڑھتے حادثات

مختصر عرصے کے دوران بلال ٹائون میں واقع ہوٹل میں گیس لیکج سے دھماکہ کے افسوسناک واقعے کے بعد اب رامداس میں کلینک میں گیس لیکج کے باعث دھماکے میں متعدد افراد کا جھلس جانا اور املاک کی تباہی سے اس امر کا اظہار ہوتا ہے کہ گیس صارفین کے ساتھ گیس کمپنی دونوں ہی اپنی ذمہ داریوں اور احتیاط کے تقاضوں کو ملحوظ خاطر رکھنے میں ناکام ہوچکے ہیں۔ گو کہ صارفین کی ذمہ داری زیادہ ضرور ہے لیکن گیس کنکشن کی فراہمی کے وقت گیس کنکشنز کی تنصیبات کے معیار کی جانچ پڑتال کمپنی کے متعلقہ اہلکاورں کی ذمہ داری ہے لیکن بدقسمتی سے وہ دفتروں میں بیٹھ کر رشوت لے کر ڈیمانڈ نوٹس کا اجراء کرتے ہیں اور کنکشن دینے والا عملہ جاکر کنکشن دے کر آجاتا ہے۔ علاوہ ازیں اس طرح کے پے در پے واقعات سے اس امر کا بھی اظہار ہوتا ہے کہ گیس کیساتھ بو کی درست مقدار شامل نہیں کی جا رہی ہے اگر تیز بو آجائے تو لیکج کی بروقت نشاندہی ممکن ہے جبکہ دوسری جانب گیس صارفین ناقص فٹنگ کرواتے ہیں ان کو معلوم ہوتا ہے کہ وہ کم پیسوں میں جیسے بھی فٹنگ کروائیں گیس کا متعلقہ عملہ بغیر دیکھے ان کو کنکشن فراہم کرے گا۔ شہر میں بار بار پیش آنے والے ان واقعات کا نوٹس لینا ضروری ہے۔ پولیس اپنی تفتیش میں گیس لیکج کی وجوہات اور کمپنی کی طرف سے گیس کنکشن دیتے وقت معائنے کی رپورٹ دینے یا بنا دیکھے کنکشن دینے کے بارے میں بھی معلومات پر توجہ دے ۔ اس مسئلے کی طرف فوری توجہ نہ دی گئی تو خدانخواستہ شہر میں کسی بڑے حادثے کا امکان ہے جس کا تدارک پیشگی احتیاط اور اپنی اپنی ذمہ داریوں کی ادائیگی ہی سے ممکن ہوگا۔

متعلقہ خبریں