Daily Mashriq


پیارے عوام حکمرانوں کو بتلائو

پیارے عوام حکمرانوں کو بتلائو

کہ تم ان کے جلسے سجاتے ہو

تم اِن کے ووٹ بناتے ہو

اِن کو لیڈر بناتے ہو

ان کو ایوانوں میں بھیجتے ہو

اور جب یہ تمہارے ہی پیسوں سے

تمہارے ہی ٹیکسوں سے

تمہارے خون پسینے کی کمائی سے

چند سڑکیں بناتے ہیں

کچھ ٹیوب ویل لگاتے ہیں

کوئی شفاخانہ کسی سکول کی تعمیر کرتے ہیں

تو تم پلکیں بچھاتے ہو

پتیاں اِن پر لٹاتے ہوں

اور پیارے عوام یہ لیڈر اپنی تجوریوں کی گرہ کومزید مضبوط اور محفوظ بنا کر بڑی تسلی کے ساتھ اپنی آنے والی نسلوں کے لیے سنبھال کر آنے والے الیکشن کی تیاری میں لگ جاتے ہیں اور اپنے اگلے جلسے اگلی تقریر میں تمہارے اوپر کسی اور سڑک ، ہسپتال یا کارخانے کی تعمیر کا احسان جتانے کا سکرپٹ تیار کرنے لگتے ہیں اور ان کے کارندے ایک مزید بڑے جلسے کے لیے اِن کے احسانات کی نئی فہرست تیار کرکے بروشر تمہارے گھروں کے دروازوں پر پھینکنے لگ جاتے ہیں، تمہاری غربت کا فائدہ اٹھاتے ہوئے چند نوٹ تمہیں تھماتے ہیں بریانی کی چند دیگیں کسی اور شہر میں چڑھتی ہیں اور پھر تاحد نگاہ سر ہی سر نظر آنے لگتے ہیں۔ ویسے لاکھوں کے شہروں میں دس، بیس، پچاس یا اسی ہزار سروں کا ایک جگہ جمع ہو جانا فیصلہ نہیں ہوتا لیکن زمانے کا رواج ایسا ہی ہے لہٰذا مان لیا جاتا ہے۔ 2018 الیکشن کا سال ہے اور ایک بار پھر یہی سب کچھ ہو رہا ہے بڑے بڑے منصوبے شروع کیے جا چکے ہیں۔ عوام کے بخت بیدار ہیں۔کہیں سڑکوں کے، کہیں پلوں کے، کہیں ٹرین منصوبوں کے ۔عوام کی ضرورت کو تناسب کے حساب سے نہیں گلیمر کے تناسب سے پورا کیا جا رہا ہے لیکن چلیں کچھ تو ہو رہا ہے اور اس کچھ میں بھی ’’زیادہ کچھ‘‘ تو حکمرانوں کے حصے میں آرہا ہے اور ’’کم کچھ‘‘ عوام کے نصیب میں۔ ہمارے حکمران کر پشن کو اپنا حق سمجھتے ہیں جس طرح پراجیکٹ انچارج کا ایک ’’پر سنٹیج‘‘ مقرر ہوتا ہے سلسلہ آگے بڑھتا ہے اور اس’’ پر سنٹیج ‘‘میں زیادہ ’’پرسنٹیج‘‘ حکمران کے حصے میں آجاتا ہے یا اللہ رحم کر اس قوم پر اور عقل دے اس کو جو پھر بھی انہی حکمرانوں کو اپنا مائی باپ کہتی ہے جو حکمران اسے لوٹتے ہیں یہ اُس کے لیے چند ہزار روپے لے کر نعرے لگا لگا کر اپنے گلے پھاڑتے ہیں۔ ایسے میں اگر کچھ ادارے ان کو روکیں تو اُن کے خلاف ہو جاتے ہیں نہ اُن کے تقدس کا خیال رکھا جاتا ہے اور نہ اہمیت کا۔ہماری عدالتیں متعدد بار نظریہ ضرورت کا شکار ہوئی ہیں لیکن اب جب کہ وہ دلیرانہ اورمبنی بَر انصاف فیصلے کر رہی ہیں تو اسے تنقید بلکہ تضحیک کا نشانہ بنانا ہر گز درست نہیں۔ میں یہ نہیں کہتی کہ یہ صرف ایک جماعت کا رویہ ہے کل کو جب یہی عدالتیں کسی اور سیاسی جماعت کے کارناموں سے پردہ اٹھائیں گی تو اس کا رویہ بھی مختلف نہیں ہوگا۔ہمارے سیاست دان جب تک اپوزیشن میں ہوتے ہیں حکومت کے خلاف ہونے والی ہر کارروائی کو جائز اور عظیم سمجھتے ہیں اور حکومت میں آتے ہی ہر ایسے عمل کے خلاف کمر کس لیتے ہیں جو آجکل (ن) لیگ کر رہی ہے۔ آج کل جو کچھ ہو رہا ہے وہ ہر گز درست نہیں کھلے عام عدالتوں کو تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے کیونکہ وہ مسلم لیگ نہیں صرف اُس کے قائدین کی حرکات پر اُنہیں سرزنش کر رہی ہیں مجھے اس بات کا بھی یقین ہے کہ اگر اِن کی جگہ دوسری پارٹی ہوتی تو اس کا بھی یہی رویہ ہوتا۔ بہر حال اس وقت جناب نواز شریف اور اہلخانہ کی حرکات کچھ ایسی ہیں جن پر ہر محب وطن پاکستانی کو اعتراض ہے۔ تیس سال سے وقتاََ فوقتاََ اور اکثر اوقات اِس ملک اور پنجاب پر تو اس سے بھی زیادہ عرصے سے آپ کا خاندان حکمران ہے ویسے اتنا لمبا عرصہ حکومت تو مغل بادشاہوں کا بھی نہیں ہوتا تھالیکن حالات ہمارے پھر بھی نہیں سنبھل رہے۔ جمہوریت کے نام پر جو جرم اور بادشاہت چند خاندان اس ملک پر حکمرانی کر کے کر رہے ہیں اتنا بھونڈا مذاق شاید دنیا کی تاریخ میں کوئی ہو، باپ کے بعد بیٹا یا بیٹی اور اب بڑے بھائی کے بعد چھوٹا بھائی، خدا نے کسی اور خاندان کو وہ خوبیاں دی ہی نہیں جو شریفوں، بھٹوئوں ، زرداریوں، شاہوں یا مخدوموں وغیرہ کو دی ہیں۔ عدالتوں سے درخواست ہے کہ اگر آپ نے کچھ بہتری کی طرف قدم اٹھائے ہیں تو پیچھے مت پلٹئے اس قوم پر رحم کریں ،اور عوام سے بھی التجا ہے کہ ’’اپنی خودی پہچان‘‘ یہ حکمران اور رہنما آپ کے ووٹوں اور نعروں سے حکمران اور رہنما بنتے ہیں ورنہ یقین کیجئے ابھی تک انہوں نے اپنی کسی خوبی اور خاصیت کی وجہ سے آپ پر حکومت نہیں کی بلکہ ناراض مت ہوئیے آپ کی حماقت کی بنا پر کی ہے لہٰذا آئندہ کے لیے اپنی قسمت کے مالک خود بنیے اپنی توانائیاں جلسوں کے سائز بڑھانے پر نہیں ملک کی قوت اور ترقی پر خرچ کیجئے تاکہ دنیا میں آپ باعزت مقام حاصل کر سکیں۔

متعلقہ خبریں