سینیٹ انتخابات:کوٹ اتروانے پر خیبرپختونخوا اسمبلی میں ہنگامہ آرائی

سینیٹ انتخابات:کوٹ اتروانے پر خیبرپختونخوا اسمبلی میں ہنگامہ آرائی

ویب ڈیسک:خیبرپختونخوا اسمبلی میں سینیٹ انتخابات کے دوران کوٹ اتروانے پر ارکان کی ہنگامہ آرائی۔

خیبرپختونخوا اسمبلی میں ووٹ ڈالنے آنے والے اراکین کی تلاشی پر اراکین اسمبلی برہم۔صوبائی وزراء مشتاق غنی اور مظفر سید کا ویسٹ کوٹ اتارکرتلاشی لی گئی ،جب کہ نگہت اورکزئی تلاشی لینے پر شدید برہم ہوگئیں۔اسمبلی کےا راکین کی پولنگ بوتھ کے اوپر لگے سی سی ٹی وی کیمرے پر بھی شدید تنقید۔

تفصیلات کے مطابق خیبرپختون خوا اسمبلی میں سینیٹ انتخابات میں الیکشن کمیشن نے ارکان اسمبلی کو کوٹ اتار کر ووٹ ڈالنے کا حکم دیا ہے جب کہ پولنگ کے دوران اراکین اسمبلی کی تلاشی بھی لی جارہی ہے۔ اس پر پیپلز پارٹی کے ارکان اسمبلی کی الیکشن کمیشن کے عملے کے ساتھ تلخ کلامی ہوگئی۔ اسپیکر اسمبلی نے کوٹ پہن کر ووٹ ڈالنے کی کوشش کی تو اپوزیشن ارکان اسمبلی نے اس پر شور شرابا کیا۔ ریٹرننگ افسر (آر او) نے ضیااللہ آفریدی اور نگہت اورکزئی کے اعتراض کرنے پر اسپیکر سے کوٹ اتاروادیا۔

 کوٹ اتارنے کے معاملے پر کچھ ہی دیر بعد اسمبلی میں دوبارہ ہنگامہ آرائی ہوئی جب نگہت اورکزئی اور تحریک انصاف کے ایم پی اے فضل الٰہی کے مابین جھڑپ ہوگئی۔ نگہت اورکزئی نے کوٹ نہ اتارنے پر اعتراض کیا تو فضل الٰہی غصے میں آگئے اور بولے روک سکتے ہو تو روک لو کوٹ نہیں اتاروں گا لیکن الیکشن عملے کے کہنے پر فضل الہی کو کوٹ اتارنا پڑا جس کے بعد انہیں ووٹ ڈالنے کی اجازت ملی۔

کے پی اسمبلی میں صوبائی وزیر مشتاق غنی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے تمام جماعتوں سے تعاون کی اپیل کی، انہوں نے کہا کہ ارکان اسمبلی تمام تر قواعد و ضوابط پورے کررہے ہیں، سینیٹ انتخابات پرامن طریقے سے ہوں گے۔ مسلم لیگ ن کے رہنما امیر مقام نے خیبر پختونخوا اسمبلی کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مسلم لیگ ن، اے این پی اور جماعت اسلامی مل کر سینیٹ الیکشن لڑ رہے ہیں، ہم نے میرٹ پر امیدواروں کو ٹکٹ دیے ہیں۔

متعلقہ خبریں