Daily Mashriq


مشرقیات

مشرقیات

بنی اسرائیل میں ایک عبادت گزار تھا۔اس نے پہاڑ کی کھوہ میں اپنا مسکن بنا رکھا تھا۔ حضرتِ موسیٰ علیہ السلام کو اس عبادت گزار کی خبر ہوئی تو آپ ایک دن اس کے پاس پہنچے۔حضرتِ موسیٰ علیہ السلام نے کہا : کیا آپ کی کوئی حاجت ہے؟عبادت گزار نے جواب دیا: آپ میرے لیے پروردگار سے اس کی رضا و خوشنودی کی دعا کر دیں اور میری یہ التجا بھی پہنچا دیں کہ وہ مجھے زندگی بھر صرف اپنی ہی خوشنودی کے کاموں میں مشغول رکھے حتیٰ کہ میں اس سے جا ملوں۔حضرتِ موسیٰ علیہ السلام دعا و مناجات میں مشغول ہوگئے اور اپنے رب سے لذتِ کلام میں اس قدر ڈوب گئے کہ عبادت گزار کی باتیں یاد ہی نہ رہیں۔ اللہ تعالیٰ نے موسیٰ علیہ السلام سے پوچھا: آپ سے میرے عبادت گزار بندے نے کیا کہا ؟موسیٰ علیہ السلام نے عرض کیا: میرے پروردگار! تو ہی ز یادہ جانتا ہے۔اللہ تعالیٰ نے موسیٰ علیہ السلام سے فرمایا : اے موسیٰ!اس عبادت گزار کے پاس جائیے اور کہئیے کہ رات دن جتنی عبادت چاہے کر لے ، ہے وہ بہر حال جہنمی 'کیونکہ میرے صحیفے میں اس کا نام گنہگاروں کی فہرست میں درج ہے۔موسیٰ علیہ السلام اس عابد کے پاس گئے اور پروردگار کے فیصلے سے اسے آگاہ کیا تو عابد نے کہا:سبحان اللہ!میں اپنے پروردگار کے فیصلے کو خوش آمدید کہتا ہوں۔پھر کچھ دیر بعد بولا:اے موسیٰ میرے پروردگار کے جاہ و جلال اور عزت وشان کی قسم!میں اس کے در سے پلٹنے والا نہیں اور اس فیصلے کو سن کر ہر گز مایوس نہیں بلکہ اب اپنے پروردگار سے میری محبت دوبالا ہوگئی ہے۔اس کے بعد جب موسیٰ علیہ السلام دوبارہ اپنے پروردگار سے دعا و مناجات میں مشغول ہوئے تو عرض کیا: میرے رب! جو کچھ تیرے عبادت گزار بندے نے کہا ہے اس سے تو اچھی طرح واقف ہے۔ اللہ نے فرمایا: اے موسیٰ میرے اس بندے کو یہ خوشخبری سنا دیجیے کہ وہ جنتی ہے۔ میری رحمت نے اسے جا لیا ہے۔ اسے یہ بھی بتا دیجیے کہ اس نے میرا یہ خوش کن فیصلہ اپنے صبر و رضا کے عوض حاصل کیا ہے کیونکہ میرا سابقہ کڑوا فیصلہ سن کر بھی وہ چیں بہ جبیں نہ ہوا۔میں کریم اور غفار ہوں۔جب موسیٰ علیہ السلام نے یہ خوشخبری اس عبادت گزار کو سنائی تو وہ سجدے میں گِر گیا، اور پروردگار کی حمد و ثنا کرنے لگا اور پھر اس طویل سجدے میں ہی اس نے جاں جان آفریں کے حوالے کردی۔

اللہ کے ہر فیصلے اور کام میں کوئی نہ کوئی حکمت ہوتی ہے جس تک انسان کی سوچ نہیں پہنچ سکتی۔ مگر جو بھی ان فیصلوں پر صبر کرے گا وہ ہی کامیاب ہوگا۔ صبر و قناعت ایسی وصف ہے جس سے انسان کی پریشانی او بے ینی سے دور رہتا ہے۔ آج کے دور میں جہاں ہر طرف نفسا نفسی اور افراتفری پھیلی ہے صبر کی اہمیت تو مزید بڑھ جاتی ہے کیونکہ جب صبر کا مادہ ختم ہوجاتا ہے تو مایوسی جنم لیتی ہے اور مایوسی کفر کی طرف سے جاتی ہے جبکہ صبر کا پھل ہمیشہ میٹھا ہوتا ہے چاہے دیر سے ہی ملے۔

متعلقہ خبریں