Daily Mashriq


سانحہ ماڈل ٹاون کیس:حکومت پنجاب کا نئی جے آئی ٹی بنانے کا فیصلہ

سانحہ ماڈل ٹاون کیس:حکومت پنجاب کا نئی جے آئی ٹی بنانے کا فیصلہ

ویب ڈیسک:پنجاب حکومت نے ماڈل ٹاؤن کیس میں ازسرِ نو تحقیقات کے لیے نئی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) بنانے کا فیصلہ کرلیا جس کے بعد سپریم کورٹ میں اس سے متعلق درخواست نمٹا دی گئی۔

سپریم کورٹ میں سانحہ ماڈل ٹاون کی تحقیقات کیلئے نئی جے آئی ٹی بنانے کے حوالے سے کیس کی سماعت چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں لارجر بنچ نے کی۔ جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ حکومت نےجے آئی ٹی بنا دی تھی ،اس نے رپورٹ بھی دی۔ جس پر سربراہ عوامی تحریک طاہرالقادری نے کہا کہ مقتولین کے کسی وارث کا بیان ریکارڈ نہیں کیا گیا، چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ آپ کے بقول یہ سازش تھی؟ طاہرالقادری نے کہا کہ ایس ایچ او نے جے آئی ٹی کو بتایا ابتدائی ایف آئی آرانہوں نے نہیں لکھی۔ عدالت نے ایڈووکیٹ جنرل پنجاب سے نئی جے آئی ٹی کی تشکیل کے حوالے سے موقف پوچھا جس پر انھوں نے کہا کہ حکومت کو کوئی اعتراض نہیں۔ 

چیف جسٹس نے کہا کہ پنجاب حکومت کو کوئی اعتراض نہیں لہذا نئی جے آئی ٹی تشکیل دے دی جائے۔ اس فیصلے پر عوامی تحریک کے سربراہ اور کارکنان میں خوشی کی لہر دوڑ گئی۔ عدالت کے باہر طاہرالقادری کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ نے انصاف کا بول بالا کر دیا۔ ورثا کے چہروں پرخوشیاں لوٹا دیں، پاکستان کی اعلی ترین عدالت نے انصاف فراہمی کا دروازہ مسکینوں کیلئے کھول دیا۔ پنجاب حکومت نے نئی جے آئی ٹی بنانے کی حمایت کی ہے، سپریم کورٹ اور پنجاب حکومت کے شکر گزار ہیں۔

متعلقہ خبریں