Daily Mashriq

 کینسر کو خود سے ہمیشہ دور رکھنا بہت آسان

کینسر کو خود سے ہمیشہ دور رکھنا بہت آسان

پھلوں اور سبزیوں میں کینسر سے لڑنے والے ایسے مرکبات ہوتے ہیں جو اس مرض پر قابو پانے والی ادویات جتنے ہی موثر ثابت ہوسکتے ہیں۔

یہ دعویٰ برطانیہ میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا۔

امپرئیل کالج لندن کی تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ پھلوں اور سبزیوں میں 8 ہزار کے قریب مالیکولز ہوتے ہیں جن میں سے 110 رسولی پر قابو پانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

پھلوں اور سبزیوں میں فلیونوئڈز نامی اینٹی آکسائیڈنٹس کافی مقدار میں ہوتے ہیں جو جسمانی ورم کو روک کر کینسر کی روک تھام ، خلیات کی غیرمعمولی تعداد کو کنٹرول کرنے اور رسولی کو ممکنہ طور پر ختم ہونے پر مجبور کرسکتے ہیں۔

خیال رہے کہ حالیہ برسوں میں مختلف طبی تحقیقی رپورٹس میں یہ بات سامنے آچکی ہے کہ 30 سے 40 فیصد کینسر کے کیسز کی روک تھام صحت مند طرز زندگی سے ممکن ہے۔

اس نئی تحقیق میں بتایا گیا کہ پھلوں اور سبزیوں کا زیادہ استعمال اس حوالے سے مفید ثابت ہوتا ہے کیونکہ ان میں کینسر سے لڑنے والے اینٹی آکسائیڈنٹس موجود ہوتے ہیں۔

محققین کے مطابق جن پھلوں اور سبزیوں میں کینسر سے لڑنے کی صلاحیت سب سے زیادہ ہوتی ہے وہ مالٹے، انگور، گاجر، گوبھی اور دھنیا ہیں۔

مالٹوں میں فلیونوئڈ کی ایک قسم ڈیڈیمین کی مقدار بہت زیادہ ہوتی ہے جو دھنیا میں بھی پایا جاتا ہے، جو کینسر سے لڑنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

محققین کا کہنا تھا کہ چائے میں بھی فلیونوئڈز کی مقدار کافی زیادہ ہوتی ہے جو کہ کینسر سے بچنے کے لیے استعمال ہونے والی ادویات جیسا اثر رکھتی ہے۔

محققین کا کہنا تھا کہ خوراک کسی بھی فرد کی صحت کے لیے سب سے اہم ترین عنصر ہے اور توقع ہے کہ ان نتائج کے نتیجے میں ایک دن لوگوں میں صحت بخش غذا کو اپنانے کا رجحان پیدا ہوگا جو مختلف امراض کی روک تھام میں مددگار ثابت ہوسکے گا۔

انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے مزید کام کرنے کی ضرورت ہے کہ ایسی کونسی غذائیں ہیں جن کا زیادہ استعمال ہونا چاہیے۔

متعلقہ خبریں