Daily Mashriq

الیکشن ڈائری: رہنا امریکہ میں مگر پھر بھی دل ہے پاکستانی!

الیکشن ڈائری: رہنا امریکہ میں مگر پھر بھی دل ہے پاکستانی!

پاکستانی نژاد فاطمہ نیویارک کے مشہور ٹائمز سکوائر میں ایک موبائل کی دکان پر کام کرتی ہیں۔

میں اپنے موبائل میں پیسے ڈلوانے گئی تو ان سے ملاقات ہوئی۔’

٭ امریکہ کے صدارتی الیکشن: بی بی سی اردو کا خصوصی ضمیمہ

فاطمہ ڈونلڈ ٹرمپ کو بالکل پسند نہیں کرتیں۔ ان کا شمار بھی ان ووٹرز میں ہوتا ہے جو مجبوری میں ہلیری کو ووٹ دے رہے ہیں۔

لیکن فاطمہ امریکہ میں صدارتی انتخاب پر نہیں بلکہ امریکہ میں مقیم پاکستانی نژاد امریکی خاندانوں کے طرز زندگی پر بات کرنا چاہتی تھیں۔

فاطمہ کے والدین 30 برس پہلے امریکہ منتقل ہوئے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ 'آج سے برسوں پہلے ہمارے والدین امریکہ آئے اور یہاں کے شہری ہونے کے باوجود بھی وہ امریکہ کو اپنا گھر نہیں سمجھتے۔ پاکستان کو ہی اپنا گھر مانتے ہیں، وہاں ہی عالی شان گھر بناتے ہیں جہاں وہ کئی سالوں میں صرف ایک مرتبہ جاتے ہیں۔'

فاطمہ کا پاکستان سے امریکہ منتقل ہونے والے پاکستانیوں کے بارے میں کہنا ہے کہ 'پوری زندگی امریکہ میں محنت کر کے گزار دیتے ہیں اور رہنے کے لیے ایک مناسب گھر بھی امریکہ میں لینا انھیں پسند نہیں۔'

ذاتی زندگی کے بارے میں بات ہوئی تو معلوم ہوا کہ فاطمہ کی شادی کو ہوئے دو سال ہوگئے ہیں۔ جب شادی کے بارے میں بات ہو رہی تھی تو وہ فوراً بولیں کہ میں نے کزن سے نہیں بلکہ اپنی پسند کی شادی کی ہے۔

ان کے لہجے سے لگا کہ جیسے وہ نظریاتی طور پر اپنے ورثے میں ملے رسم و رواج اور امریکی معاشرے میں بٹ کر رہ گئی ہوں۔

دنیا