Daily Mashriq


6ستمبر اور آج کا پاکستان

6ستمبر اور آج کا پاکستان

ترپن سال پہلے1965میں بھارت نے کشمیر کے پہاڑوں پر جاری کشیدگی کو پنجاب کے میدانوں تک پھیلانے کا فیصلہ کرتے ہوئے رات کی تاریکی میں لاہور پر حملہ کیا تھا۔ بھارتی حکمران یہ سمجھتے تھے کہ اب پاکستان پر فیصلہ کن وار کا یہ اچھا موقع ہے۔ اس سے تین برس قبل1962 میں بھارت چین کیساتھ ایک خوفناک جنگ میں شکست کھا چکا تھا۔ اس جنگ کے منفی اثرات بھارت میں نیچے تک سرایت کر گئے تھے۔ لوگ مایوسی کا شکار تھے اور اپنے پچھواڑے میں انہیں ایک طاقتور دشمن کا احساس خوفزدہ کر رہا تھا۔ چین صرف بھارت کی سرحدوں پر ہی نہیں اس کے اندر بھی کئی ریاستوں میں اتھل پتھل کرنے کی بھرپور صلاحیت رکھتا تھا کیونکہ ناگا لینڈ، میزورام وغیرہ ایسی ریاستیں تھیں جہاں چین کا اثر رسوخ ایک حقیقت تھا۔ چین اور بھارت کی جنگ میں چینی وزیراعظم چواین لائی نے اس وقت کی پاکستانی قیادت کو پیشکش کی تھی کہ اگر وہ اس جنگ میں شریک ہو جائیں تو چین کشمیر حاصل کرنے میں پاکستان کی مدد کر سکتا ہے۔ گویاکہ یہ کشمیر کی آزادی کیلئے پاکستان کو حاصل ہونے والا ایک اچھا موقع تھا۔ اس وقت پاکستان کی قیادت امریکی دباؤ میں تھی کہ اس نے چین کی اس پیشکش سے فائدہ نہیں اُٹھایا۔ بھارت چین کیساتھ دوستانہ تعلقات کے باوجود اس جنگ میں غیرجانبدار رہا مگر تین سال بعد اس کا صلہ بھارت نے یوں دیا کہ چین کے ہاتھوں ذلت آمیز شکست کے نفسیاتی اثرات ختم کرنے کیلئے پاکستان کیخلاف جنگ چھیڑ دی گئی۔ پاکستان نے مقبوضہ کشمیر کے عوام کی خواہشات، وہاں بھارتی مظالم کو دیکھتے ہوئے آپریشن جبرالٹر کے نام سے ایک منصوبہ ترتیب دیا۔ اس وقت ایوب خان صدر پاکستان اور ذوالفقار علی بھٹو وزیر خارجہ تھے۔ اس منصوبے کا مقصد یہ تھا کہ پاک فوج کے تربیت یافتہ کمانڈوز کو وادی کشمیر میں داخل کیا جائے اور اس کے نتیجے میں پیدا ہونے والی صورتحال کو مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے استعمال کیا جائے۔ اس منصوبے کیلئے کشمیر کے اندر فضاء پوری طرح تیار نہیں تھی۔ کشمیر میں موئے مقدس کی تحریکوں نے عوام میں بیداری اور شعور تو پیدا کیا تھا مگر بھارت کا فوجی قبضہ مضبوط ہوتا جا رہا تھا اور عوام محاصرے کی کیفیت میں تھے کشمیر کی مقبول قیادت شیخ عبداللہ جیل میں قید تھے اور ان کی جگہ بھارت مصنوعی قیادتوں کو آگے بڑھانے کیلئے کوشاں تھا۔ ان حالات میں پاکستان میں آپریشن جبرالٹر کا منصوبہ ترتیب دیا گیا۔ بھارت نے کشمیر کے متنازعہ علاقے میں ہونیوالی اس سرگرمی کا جواب بین الاقوامی سرحد پر جنگ چھیڑ کر دیا۔ بھارت کا مقصد یہ تھا کہ پاکستان کے کسی بڑے شہر پر قبضہ کیا جائے۔ اسی حکمت عملی کے تحت واہگہ اور سیالکوٹ کے محاذوں پر بھارتی فوج نے پیش قدمی کی کوششیں کیں۔ بھارت نے ٹینکو ں کی بڑی تعداد کو پاکستان کے میدان کی طرف دھکیل دیا۔ دنیا یہ دیکھ کر دنگ رہ گئی کہ پاکستان کی فوج بھارت کے مقابلے کیلئے پہلے سے تیار تھی۔ پاک فضائیہ نے بھارت کی فضائی برتری کے باوجود اعلیٰ کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔ جہاں ایک طرف میجر عزیز بھٹی جیسے کردار جنگ میں اُبھرے وہیں شاہین پاکستان ایم ایم عالم جیسے ہیرو بھی منظر پر آئے جنہوں نے بھارتی جنگی جہازوں کو کم وقت میں گراکر عالمی ریکارڈ قائم کیا۔ بھارتی جرنیلوں نے لاہور جیم خانہ میں شراب وکباب کی محفلیں منعقد کرنے کا اعلان کر رکھا تھا مگر انہیں یہ اندازہ ہی نہیں تھا کہ ان کا واسطہ اور مقابلہ ایک ایسی قوم سے ہے کہ جذبہ جہاد جس کا ہتھیار ہے اور شوق شہادت جس کی تمنا ہے۔ اس جذبے اور سوچ کا مقابلہ مادی قوت سے ممکن نہیں ہوتا۔ پاک فوج ہی نہیں عوام بھی سروں پر کفن باندھ کر میدان میں نکل آئے۔ ہر لب پر یہ نغمے اور گیت تھے کہ ’’اے دشمن ِدیں تم نے کس قوم کو للکارا ہے‘‘۔ قوم میں ایک بار پھر پاکستانیت کا جذبہ عود کر آیا۔ خیبر سے کراچی اور ڈھاکہ تک پوری قوم بھارتی جارحیت کیخلاف متحد ہوگئی۔ سیاسی، علاقائی اور صوبائی تعصبات کہیں پیچھے رہ گئے اور لوگ صرف پاکستانی اور مسلمان بن کر دشمن کے مدمقابل کھڑے ہوگئے۔ پاکستان مسئلہ کشمیر پرکوئی بامعنی سمجھوتہ کئے بغیر جنگ بند نہیں کرنا چاہتا تھا مگر امریکہ اور دوسری عالمی طاقتیں بھارت کی خواہشات کے احترام پر یقین رکھتے ہوئے غیر مشروط جنگ بندی چاہتی تھیں۔ اس معاملے میں عالمی طاقتوں نے سوویت یونین کے شہر تاشقند میں دونوں ملکوں کے سربراہوں ایوب خان اور لال بہادر شاستری کو ایک میز پر بٹھایا اور دونوں کے درمیان ایک معاہدہ ہوا جسے معاہدہ تاشقند کہا جاتا ہے۔ پاکستان اور بھارت کے درمیان یہ معاہدہ اصل مسئلے کو حل کرنے میں معاون ثابت نہ ہو سکا۔ برسہا برس گزرگئے بھارت کا جنگی جنون ایک بار پھر عروج پر ہے۔ چین اور پاکستان کیساتھ اس کی کھٹ پھٹ آج بھی جاری ہے۔ فوجی آپریشنوں کے ذریعے پاکستان میں غیرملکی سازشوں کا تانا بانا توڑنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ پاکستان کیخلاف دشمنوں کی سازش انہی پر الٹ دی گئی۔ آج پاکستان ترپن برس پہلے کا نہیں بلکہ اس سے قطعی مختلف ہے۔ آج پاکستان دنیا کی ساتویں بڑی ایٹمی طاقت ہے۔ اسلئے آج کے یوم دفاع کا پیغام یہ ہے کہ دشمن نے کوئی مہم جوئی کی تو پاکستان اپنی پسند کا محاذ اور اپنی پسند کا ہتھیار استعمال کرے گا۔ اچھا ہے کہ دشمن کسی مہم جوئی کا خیال ہی ترک کر دے۔

متعلقہ خبریں