Daily Mashriq

افغانستان: مسلح افراد نے ریڈیو اسٹیشن میں گھس کر 2 صحافی قتل کردیئے

افغانستان: مسلح افراد نے ریڈیو اسٹیشن میں گھس کر 2 صحافی قتل کردیئے

افغانستان کے شمالی صوبے تاخر میں نامعلوم مسلح افراد نے نجی ریڈیو اسٹیشن میں گھس کر 2 صحافیوں کو قتل کردیا۔

فرانسیسی خبررساں ادارے اےا یف پی کے مطابق کہ مسلح افراد نجی ریڈیو ’ہم صدا‘ میں داخل ہوئے اور 20 سالہ ہم عمر نوجوانوں پر فائرنگ کردی۔

صوبائی ترجمان جاوید ہجری نے بتایا کہ ’حملے کی ذمہ داری کسی نے قبول نہیں کی تاہم تحقیقات کا عمل جاری ہے‘۔

ان کا کہنا تھا کہ ’بروز منگل شام 6 بجے دو نامعلوم مسلح افراد ریڈیو اسٹیشن کے دفتر میں داخلے ہوئے اور دو رپورٹرز پر فائرنگ کردی جو لائیو پروگرام کررہے تھے تاہم دنوں رپورٹرز موقع پر ہی جاں بحق ہو گئے۔واضح رہے کہ افغانستان میں رواں برس صحافیوں پر حملے کا دوسرا واقعہ ہے۔

گزشتہ ماہ طالبان نے افغان سیٹیزن صحافی جاوید نوری کو ان کی کار سے بابر نکال کر قتل کردیا تھا۔رپورٹرز ود آؤٹ بارڈرکے مطابق سال 2018 افغانستان میں صحافیوں کے لیے بدترین سال رہا۔

کابل میں امریکی سفیر جان باس نے ’صحافیوں کے قتل پر افسوس اور گہرے رنج کا اظہار کیا‘۔

انہوں نے ٹوئٹ کیا کہ ’یہ وقت ہے جب صحافیوں کے خلاف جرائم کا خاتمہ ضروری ہے‘۔دوسری جانب ایمنسٹی انٹرنیشنل نے واقعے کو ’سنگین جرم‘ قرار دیا اور افغان حکام پر زور دیا کہ وہ صحافیوں کے تحفظ کو یقینی بنایں تاکہ بہتر انداز میں فرائض انجام دے سکیں‘۔

دوسری جانب جنوبی ایشیا گروپ کے محقق زمان سلطانی نے کہا کہ ’مذکورہ واقعہ اس امر کی نشاندہی کرتا ہے کہ افغانستان میں صحافیوں کے لیے حالات ساز گار نہیں ہیں‘۔

متعلقہ خبریں