Daily Mashriq

سرکاری رہائشی سکیموں پر تیزی سے پیشرفت کی جائے

سرکاری رہائشی سکیموں پر تیزی سے پیشرفت کی جائے

وزیراعلیٰ خیبرپختونخوامحمود خان نے کہا ہے کہ نیا پاکستان ہا ئوسنگ پروگرام کے تحت صوبے میں عوام کو پلاٹس اور گھر فراہم کئے جائیں گے، جس کیلئے منصوبہ بندی پر عملدرآمد ممکن بنایا جارہا ہے۔ وزیراعلیٰ نے پشاور ماڈل ٹاؤن ، ضلع ہنگو میں ہاؤسنگ پروگرام پر عملدرآمد یقینی بنانے کیلئے تیز ترطریقہ کار وضع کرنے کی بھی ہدایت کی ہے۔اجلاس کو بتایا گیا کہ نیا پاکستان ہائوسنگ سکیم سوڑیزئی کیلئے سمری پہلے سے منظور ہو چکی ہے ۔ جبکہ بورڈ نے بھی اس کی منظوری دی ہے ۔ جس کے لئے پری پی ڈی ڈبلیو پی اسی مہینے کرائی جائے گی۔ اجلاس کو پشاور ماڈل ٹائون پر پیشرفت کے بارے میں آگاہ کیا گیا کہ اس منصوبے کیلئے ایف ڈبلیو او کیساتھ ایگر یمنٹ پہلے سے ہوچکا ہے اور سیکشن فور بھی نوٹیفائی کیا گیا ہے۔وزیراعظم عمران خان کی منشاء کے مطابق پاکستان میں کم آمدنی والے طبقے کیلئے رہائشی سہولیات کی فراہمی کے منصوبے پر صوبے میں ترجیحی بنیادون پر کام شروع کرنے کی اس لئے بھی ضرورت ہے کہ ابھی تک اس سلسلے میں عملی اقدامات تسلی بخش نہیں مستزاد یہ کہ اس حوالے سے سیاسی تنقید بھی جہاں ہورہی ہے وہاں سب سے بڑھ کر یہ کہ کم آمدنی والے لوگوں نے اس پروگرام سے امیدیں وابستہ کرتے ہوئے بڑے پیمانے پر اس میںدلچسپی کااظہار کیا ہے اور درخواستیں جمع کرائی ہیں۔ان عوامل سے قطع نظر بھی اگر دیکھا جائے تو صوبائی دارالحکومت پشاور میں کم آمدنی والے طبقے کیلئے تو کوئی رہائشی سکیم ہے ہی نہیں گزشتہ دو تین عشروں سے کوئی بڑی سرکاری رہائشی سکیم متعارف ہی نہیں ہوئی جس کے باعث زرعی زمینوں سے بے ہنگم گھر بن رہے ہیں یاایسے مقامات پر جو جوہڑ ہونے کے باعث آبادی کیلئے موزوں نہیں کالونیاں بن رہی ہیں صوبائی دارالحکومت میں بالخصوص اوردیگر شہروں میں بالعموم بننے والی رہائشی بستیاں اور ہائوسنگ سکیمز قانونی دائرہ کار سے باہربھی بنتی ہیں اور ان میں سہولتوں کا بھی فقدان ہوتا ہے۔ان تمام مشکلات ومسائل کا تدارک اور حل صوبے میں مناسب مقامات پر شہری سہولتوں کے ساتھ ہائوسنگ سکیمز کا اجراء ہے وزیراعلیٰ کے زیر صدارت اجلاس میں مختلف اہم سرکاری رہائشی منصوبوں پر پیشرفت خوش آئند ہے اور ضرورت اس امر کی ہے کہ اس ضمن میں تسلسل سے کام کیا جائے وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کو ان تمام امور کا جائزہ لیتے ہوئے متعلقہ حکام کو بار بار اس امر کی تاکید کرنے کی ضرورت ہے کہ ان سرکاری سکیموں کا حشر ریگی للمہ ٹائون شپ جیسا نہ ہو۔صوبے میں ہائوسنگ کے شعبے میں کام کی رفتار تیز ہونے سے نہ صرف لوگوں کو مناسب رہائشی سہولیات کی فراہمی ہوگی بلکہ اس سے درجنوں کاروبار بھی ترقی کریں گے ہنرمندوں کو خاص طور پر مواقع ملیں گے۔توقع کی جانی چاہیئے کہ نیا پاکستان ہائوسنگ سکیم سوریزئی پر جہاں عملی اقدامات میں تیزی لائی جائے گی وہاں پشاور ماڈل ٹائون پر بھی کام شروع کر کے شہر میں بہتر رہائشی مواقع کے متلاشی افراد کی ضرورت بھی پوری کرنے کی احسن سعی ہوگی اور صوبے میں بے ہنگم آبادی اور شہرائو کے عمل کو باقاعدہ بنایا جائے گا۔

متعلقہ خبریں