Daily Mashriq


بھارتی سپریم کورٹ نے بابری مسجد تنازع پر 3 رکنی ثالثی کمیٹی تشکیل دیدی

بھارتی سپریم کورٹ نے بابری مسجد تنازع پر 3 رکنی ثالثی کمیٹی تشکیل دیدی

نئی دہلی: بھارتی سپریم کورٹ نے بابری مسجد کی زمین کی ملکیت کے تناع پر 3 رکنی ثالثی کمیٹی تشکیل دے دی جو 8 ہفتوں کے اندر اپنا فیصلہ سنائے گی۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق بھارتی سپریم کورٹ نے تاریخی بابری مسجد کی زمین کی ملکیت پر 3 فریقین کے درمیان تنازع کو حل کرنے کے لیے جسٹس ایف ایم کلیف اللہ کی سربراہی میں 3 رکنی ثالثی کمیٹی تشکیل دے دی ہے، سری سری روی شنکر اور ایڈوکیٹ سری رام پنچو کمیٹی کے رکن ہوں گے۔

سپریم کورٹ نے کمیٹی کو 8 ہفتوں کے اندر فیصلہ سنانے کا حکم دیا ہے، ان کیمرہ سماعت کا آغاز فیض آباد میں اسی ہفتے سے کیا جائے گا۔ نقص امن کو مدنظر رکھتے ہوئےسماعت کی کارروائی کو خفیہ رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جب کہ اس سے متعلق دیگر تفصیلات بھی عام نہیں کی جائیں گی۔بابری مسجد کی زمین کی ملکیت کے لیے 3 نمایاں فریقین میں سے ایک ہندو فریق نرموہی اکھاڑا نےعدالت کے فیصلے کی مخالفت کی جب کہ مسلم فریق سنی وقف بورڈ اور ہندو فریق رام للا نے عدالتی فیصلے کی تائید کی ہے۔ سپریم کورٹ نے بدھ کے روز فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

واضح رہے کہ الہ آباد کی ہائی کورٹ میں بابری مسجد کی 2.77 ایکڑ زمین کی ملکیت کے لیے سنی وقف بورڈ، نرموہی اکھاڑا اور رام للا نے 14 اپیلیں دائر کی تھیں جس میں بابری مسجد کی زمین کو فریقین میں 3 برابر حصوں میں تقسیم کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

متعلقہ خبریں