Daily Mashriq


قیامت خیز زلزلے کو گزرے 13سال بیت گئے

ویب ڈیسک:2005میں آنے والے قیامت خیز زلزلے کے زخم لوگوں کے دلوں میں آج بھی تازہ ہیں۔

آزاد کشمیر، بشام، بالاکوٹ، ایبٹ آباد، مانسہرہ  اور شمالی علاقہ جات میں 2005 میں آنے والے قیامت خیز زلزلے کو 13سال بیت گئے۔2005 میں آنے والے اس زلزلے کی شدت ریکٹرسکیل پر 7اعشاریہ 6ریکارڈ کی گئی جس میں ایک طرف تو 80ہزار سے زائد افراد لقمہ اجل بنے اور لاکھوں زخمی ہوئے  تو دوسری طرف زلزلے سے آنے والی تباہی کے باعث لاکھوں افراد بے گھر ہوکر محفوظ علاقوں کی طرف نقل مکانی کرنے  پر مجبور ہوگئے،سینکڑوں گاوں صفحہ ہستی سے مکمل طور پر مٹ گئے۔

8اکتوبر 2005کو آنے والے اس قیامت خیز زلزے میں شہید ہونے والوں کی یاد میں آج مختلف مقامات میں تقاریب کا انعقاد کیا گیا۔

مظفرآباد کے یونیورسٹی گراونڈ میں شہداء کی یاد میں مرکزی تقریب کا منعقد کی گئی جس کے دوران 8 بجکر 52 منٹ پر ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی گئی اور پولیس کے دستے نے یادگارِ شہداء پر سلامی دی۔

ضلع باغ کی مرکزی جامع مسجد باغ میں دعائیہ تقریب کا انعقاد ہوا جس میں شہریوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

بالاکوٹ میں بھی سوگ کے باعث دکانیں اور کاروباری مراکز بند رہے اور شہدا کے ایصال ثواب کے لیے قرآن خوانی اور دعائیہ تقریبات کا انعقاد کیا گیا ہے۔

قیامت خیز زلزلہ میں بالاکوٹ کا 95 فیصد انفراسٹرکچر تباہ ہوگیا تھا اور اتنا عرصہ ہونے کے باوجود نیو بالاکوٹ سٹی کی تعمیر کا منصوبہ اب تک مکمل نہ ہوسکا۔ 

متعلقہ خبریں