Daily Mashriq


متوازن خارجہ پالیسی کی ناگزیریت

متوازن خارجہ پالیسی کی ناگزیریت

عدم توازن کا شکار خارجہ پالیسی کے خوفناک نتائج کو ہم سے زیادہ کوئی دوسرا ملک نہیں سمجھ سکتا ۔قیام پاکستان کے بعد ہی عالمی اور علاقائی صورت حال نے نوزائیدہ ریاست پاکستان کو سرد جنگ کے دو طاقتور فریقوں میں سے کسی کو چننے کی راہ پر ڈال دیا ۔پاکستان نہ چاہتے ہوئے یہ تلخ فیصلہ کرکے ایک مستقل عذاب کو گلے لگا بیٹھا ۔جو بھی ہوا مگر اس پالیسی نے پاکستان کو بہت نقصان پہنچایا ۔ ڈوبتے مشرقی پاکستان کو بچانے کے لئے ساتویں بحری بیڑے کا انتظار تو اب انتظار ِلاحاصل کے حوالے کے لئے ایک محاورہ سا بن کر رہ گیا ہے ۔پاکستان اور امریکہ کے غیر متوازن تعلق میں ساتویں بحری بیڑے جیسے بے شمار مقام اور موڑ آتے رہے ہیں۔مدتوں بعد امریکہ کے وزیر خارجہ کولن پاول کا پاکستان کے فوجی حکمران جنرل پرویز مشرف سے دھمکی میں ملفوف ایک مختصر سوال کہ ''آپ ہمارے ساتھ ہیں یا دہشت گردوں کے ساتھ '' اس افسانے کا ایک اور موڑ ہے ۔

پرائی لڑائیوں میں پڑ کر پاکستان نے اپنے ہاتھ جلانے کے سوا کوئی کارنامہ انجام نہیں دیا ۔اس لئے اب بھی اگرپاکستان کی حکمران اشرافیہ اپنے سب انڈے ،ڈنڈے اور جھنڈے کسی ایک ٹوکری میں ڈالنے پر مصر ہو تو اس پر کف ِ افسوس ملنے کے سوا اور کیا جا سکتا ہے ؟۔غیر متوازن خارجہ پالیسی کے مضمرات کے لئے پاکستان کو کسی دوسرے ملک کی تاریخ پڑھنے کی ضرورت نہیں نہ یورپ اور لاطینی امریکہ سے حوالے ڈھونڈ لانے کی اور حوالے تلاش کرنے کی ضرورت ہے ۔پاکستان کا حکمران طبقہ خود پاکستان کی تاریخ کا گہرائی میں جا کر مطالعہ کرے تو تاریخ اور تجربے سے بڑا اتالیق کوئی ثابت نہیں ہوگا اور انہیں خارجہ پالیسی میں عدم توازن کے نقصانات کابخوبی اندازہ ہوگا۔ ملامتی اور مذمتی گروہ کی بات چھوڑیںمگر خدا لگتی بات ہے کہ پاکستان کی ماضی قریب کی کچھ پالیسیوں میں ماضی بعید سے سبق حاصل کرنے کے اشارے ملتے ہیں۔اب پاکستان ہمہ وقت بروئے کار آنے پر تیار نہیں رہتا خواہ اس کے لئے مہربانوں اور دوستوں کی پیشانیوں پر شکنیں ہی کیوں نہ اُبھریں۔دودھ کا جلا چھاچھ کو بھی پھونک پھونک کرپیتا ہے کے مصداق ماضی کی یہی یادیں اور تلخیاں ہیں کہ پاکستان کسی تنازعے میں فریق بننے لگتا ہے تو خدشات اور اعتراضات کا ایک بحر ِبیکراں سا منے آتا ہے اور لوگ برملا غیر متوازن ہوتی ہوئی پالیسی پر لب کشائی کرنے لگتے ہیں ۔کچھ یہی معاملہ سابق آرمی چیف جنرل (ر) راحیل شریف کو سعودی قیادت میں بننے والے فوجی اتحاد کی سربراہی سونپنے کے فیصلے کے بعدہورہا ہے ۔ حکومت کی طرف سے جنرل راحیل شریف کو سعودی عرب کی قیادت میں قائم ہونے والے انتالیس ملکی فوجی اتحاد کی سربراہی کے لئے این او سی جاری ہوئی جس پر ایران کی طرف سے مسلسل تحفظات کا اظہار کیا گیا ۔ پاکستان کی طرف سے دونوں اسلامی ملکوں کے درمیان تعلقات میں توازن رکھنے کی بات بھی مسلسل کی جارہی ہے اور یہ تاثر دیا جارہاہے کہ انتالیس رکنی فوجی اتحاد کسی ملک کے خلاف نہیں بلکہ دہشت گردی سے نمٹنے کے لئے قائم کیا گیا ہے۔

اب اس معاملے میں سب سے اہم وضاحت سیکرٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ کی طرف سے قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی میں پیش کی گئی ہے ۔سیکرٹر ی خارجہ نے قائمہ کمیٹی کے ارکان کے بہت تلخ سوالوں کا صراحت کے ساتھ جواب دیا ۔مثلاََ ایک رکن نے پوچھا کہ کیا یہ اتحاد اسرائیل کے خلاف لڑائی کرے گا؟تہمینہ جنجوعہ کا کہنا تھا کہ پاکستان ایران اور سعود ی عرب کے درمیان تعلقات میں توازن رکھے گا ۔مسلم ممالک کو یکجا دیکھنا چاہتے ہیں۔اسلامی عسکری اتحادی کسی فرقے کے خلاف ہے اورنہ ہی ہم ایرانی مفادات کے خلاف جائیں گے۔کسی ریٹائرڈ پاکستانی جنرل نے بھی ایران کی کبھی مخالفت نہیں کی۔تہمینہ جنجوعہ کی طرف سے دوٹوک وضاحت کے ساتھ ہی فوج کے ادارے آئی ایس پی آر کے سربراہ میجر جنرل آصف غفور نے لندن میں انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ اگرجنرل راحیل شریف کو سعودی عرب بھیجنا ریاست کا فیصلہ ہے اگر یہ سمجھا گیا کہ جنرل راحیل کو بھیجنے کے مقاصد پورے نہیں ہوئے تو انہیں واپس بھی بلاسکتے ہیں۔میجر جنرل آصف غفور نے بھی ایران اور سعودی عرب کے درمیان تعلقات میں توازن رکھنے کی بات کی ۔تہمینہ جنجوعہ کی وضاحت جو پاکستان کی سیاسی اور سویلین فورسز کی ترجمانی کہا جا سکتا ہے تو جنرل آصف غفور کی وضاحت کو پاکستانی فوج کا موقف قراردیا جا سکتا ہے یوں پاکستان کے پاور سٹرکچر کی دو اہم قوتیں جنرل راحیل شریف کی سعودی عرب روانگی اور ایران سعودی تعلقات میں توازن کے حوالے سے یکساں موقف کی حامل ہیں ۔ان کھلی اور غیر مبہم وضاحتوں کے بعد یہ خدشات اب ختم ہوجانے چاہئیں کہ پاکستان دو ملکوں کی کشمکش میں کسی ایک فریق کا ساتھ دے کر اپنی خارجہ پالیسی کا توازن خراب کررہا ہے ۔ایسا خود پاکستان کے لئے بھی کسی طور مناسب نہیں ۔ایران اور سعودی عرب دونوں پاکستان کے کھلے دشمن نریندر مودی سے گرم جوش تعلقات قائم کرنے میں مگن ہے مگر پاکستان نے کسی ملک سے شکوہ نہیں کیا ۔ملکوں اور ریاستوں کو باہمی مفاد میں اپنی خارجہ پالیسی کو تشکیل دینے کا حق ہوتا ہے ۔تاآنکہ ان تعلقات کی زد کسی تیسرے ملک پر نہ پڑے ۔سردست ایسا ہوتا نظر نہیں آتا امریکہ کی خاطر بار بار استعمال ہو کر پاکستان نے تاریخ سے بہت سبق سیکھ لیا ہے ۔

متعلقہ خبریں