Daily Mashriq


بلوچستان کی معدنی دولت اور دعوے

بلوچستان کی معدنی دولت اور دعوے

سچی بات یہ ہے کہ قدرت کے دیے ہوئے بے پناہ خزانوں کا مالک ہونے کے باوجود بلوچستان کی قسمت بدل نہ سکی۔ یہ صوبہ سونا، چاندی، تانبا، تیل، گیس، کوئلہ، کرومائٹ سمیت بیش بہا قیمتی پتھروں اور معدنیات کا عظیم خزانہ اپنے سینے میں چھپائے ہوئے ہے۔ المیہ یہ ہے کہ ان وسائل سے بلوچستان کو کماحقہ فائدہ حاصل نہ ہوسکا۔ صوبے کے وسائل اور یہاں کے عوام کے مفادات کے تحفظ کے بجائے چشم پوشی کا برتا ہورہا ہے۔ دراصل یہی رویے نفرت کی بنیاد اور مرکز گریز رجحانات کی وجہ بن رہے ہیں۔ ریکوڈک کے منصوبے پر ٹتھیان کمپنی سے معاہدہ ختم کیا گیا۔ اس وقت نواب اسلم رئیسانی کی حکومت تھی۔ نیت یقیناصوبے کے مفاد کی تھی، حکمت عملی البتہ صائب نہ تھی۔ یوں مسئلہ عالمی عدالت میں چلا گیا، اور اب صورتِ حال یہ ہے کہ ریکوڈک کے بارے میں مقدمہ بلوچستان کے گلے کی ہڈی بن گیا ہے۔ 1990کی دہائی میں چین کے ساتھ سینڈک کے کاپر اور سونے کے ذخائر بروئے کار لانے کا معاہدہ کیا گیا۔ اس منصوبے پر کام شروع ہوا، لیکن اتنے سال بیت جانے کے باوجود صوبے کے حصے سمیت اس کے معاشی و دوسرے اثرات کے حوالے سے عدم اطمینان کا اظہار ہورہا ہے۔ اس کے مالی ثمرات صوبے کو نہ ملنے کے مترادف ہیں۔

1950کی دہائی میں دریافت ہونے والی سوئی گیس سے صوبے کا غالب حصہ آج بھی محروم ہے اور صوبے کو حاصل ہونے والا نفع بھی چشم کشا ہے۔ صوبے کے مختلف علاقوں میں تیل و گیس کی دریافت ہورہی ہے اور یہ عمل اب بھی جاری ہے۔ ماضی میں دیکھا گیا ہے کہ تیل و گیس کی تلاش کے منصوبوں میں بلوچستان کی حکومت کی اجازت و مرضی کو اہمیت نہیں دی گئی۔ اس تناظر میں پی پی ایل اور چینی کمپنیوں کے لیے حکومت اور بیوروکریسی کی اہمیت چنداں نہیں رہی ہے۔ اب کی صورتِ حال واضح کرنا جام کمال کی حکومت کی ذمے داری ہے کہ آیا صوبائی حکومت کی رضامندی کو کس درجے کی فوقیت و اہمیت حاصل ہے۔بہرکیف موجودہ حکومت خوش کن اعلانات کررہی ہے اور پیش رفت کی دعویدار بھی ہے۔ جام کمال فرما چکے ہیں کہ بلوچستان کے محاصل میں اضافے کے لیے سخت ہاتھ پائوں مارنے کی ضرورت ہے، کیوں کہ اگر صوبے کی آمدنی میں اضافہ نہ کیا گیا تو اس سے ترقی کا عمل ممکن نہ ہوگا۔ مذکورہ تمہید کی حقانیت جام کمال کی اس تشویش سے ثابت ہوتی ہے کہ بے پناہ قیمتی معدنی وسائل کا مالک ہونے کے باوجود بلوچستان کی سالانہ آمدنی صرف پندرہ ارب روپے ہے۔ وزیر اعلیٰ اس بات کا بھی اقرار کرتے ہیں کہ بلوچستان ریکوڈک، سینڈک، سی پیک، ساحل اور قیمتی معدنی ذخائر کا فائدہ نہیں اٹھا سکا ہے۔ بقول وزیراعلیٰ 2002 سے اب تک منرل رولز میں کوئی ترمیم نہیں کی گئی، اور ستم یہ کہ 2002 کے منرل رولز میں صوبے کے مفادات کے بجائے انفرادی مفادات کو تحفظ دیا گیا ہے، جس کے سبب اس شعبے میں صوبے کو سالانہ صرف دو سے ڈھائی ارب روپے کے محاصل ملتے ہیں۔

صوبے کے وسائل اور ذخائر کو صوبے کے مفاد اور خوشحالی کے لیے بروئے کار لانے کی ضرورت ہے۔ ظاہر ہے کہ یہ کام تنہا جام کمال کا نہیں ہے، نہ ہی ان کے بس میں ہے۔ اس کے لیے مجموعی طور پر صوبے کو ہم قدم ہونا پڑے گا۔ متعلقہ محکمے اور اس کے ذمے داران کا فرض بنتا ہے کہ وہ اس ضمن میں اپنی تمام صلاحیتیں کام میں لائیں۔بیوروکریسی بہرحال قدرت رکھتی ہے کہ وہ وفاق سمیت کسی کو صوبے کا استحصال نہ کرنے دے۔ صوبے کے محاصل میں اضافے کو بھی فوقیت دینی چاہیے۔ یہاں سیاسی جماعتوں کا کردار بہت اہمیت رکھتا ہے کہ حکومت اور بیوروکریسی کے شانہ بشانہ کھڑی ہوں۔ صوبے کے اندر بین الاقوامی سرمایہ کاروں کی آمد قلیل مدت میں یقینی بنانے کی مساعی ہونی چاہیے۔ حکومت بروقت اور تیز رفتار پالیسیاں وضع کرے، گورننس بہتر کرے تاکہ بیرونی سرمایہ کار بلا خوف و تردد صوبے کا رخ کریں۔ بلوچستان میں اب بھی کئی معدنی ذخائر دریافت نہیں ہوسکے ہیں۔ یقیناصوبے کو اس ذیل میں بنیادی ڈھانچے کی عدم دستیابی اور انسانی وسائل جیسے مسائل کا سامنا ہے۔ ہونا یہ چاہیے کہ سردست اس سیکٹر کی ترقی کے لوازمات پر توجہ دی جائے۔ ترجیحی بنیادوں پر اس راہ میں حائل مشکلات پر قابو پانے کی تدبیر و حکمت عملی اپنانی چاہیے۔بلوچستان کے محکمہ معدنیات کا اسٹرکچر بہتر بنانے اور اسے جدید خطوط پر استوار کرنے کی ضرورت ہے، نیز محکمے کے افسران اور دوسرے عملے کی جدید تقاضوں کے مطابق تربیت ہونی چاہیے۔ 18مارچ کو اس تناظر میں صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں ایک روزہ سیمینار کا انعقاد ہوا جہاں پی پی ایل، بی ایم ایس، آئی ایل او، ایم سی سی اور معدنی شعبے کی مختلف کمپنیوں کے نمائندوں، اور سرمایہ کاروں نے شرکت کی۔ یاد رہے کہ15 فروری2019 کو وزیراعلیٰ جام کمال محکمہ معدنیات کے جیو ڈیٹا سینٹر کا افتتاح کرچکے ہیں۔ یقینا بلوچستان میں سرمایہ کاری کے بہت سارے مواقع موجود ہیں۔ مقامی معیشت کو استحکام کس طرح دینا ہے اس پر جامع پالیسی بنانے کی ضرورت ہے۔ مربوط پالیسیوں اور وژن کے ساتھ صوبے کے وسائل و معدنیات صوبے کے عوام کی ترقی و خوشحالی کے لیے استعمال ہوسکتے ہیں۔

متعلقہ خبریں