Daily Mashriq


ورزش کو عادت بنانا ہر عمر میں صحت کے لیے فائدہ مند

ورزش کو عادت بنانا ہر عمر میں صحت کے لیے فائدہ مند

کیا آپ پوری عمر ورزش کے قریب بھی نہیں گئے؟ اگر ہاں تو اب بھی وقت ہے کہ اسے عادت بنالیں تاکہ غیرضروری جسمانی وزن سے نجات کے ساتھ صحت مند زندگی کو ممکن بناسکیں۔

یہ بات امریکا میں ہونے والی نئی طبی تحقیق میں سامنے آئی۔

 نیشنل کینسر انسٹیٹوٹ کی تحقیق میں بتایا گیا کہ درمیانی عمر بلکہ 60 سال کی عمر میں بھی ورزش کو شروع کرنا جسمانی صحت کے لیے فائدہ مند ہوتا ہے، چاہے پوری عمر اس کے قریب بھی نہ گئے ہوں۔تحقیق میں بتایا گیا کہ درمیانی عمر یا بڑھاپے میں ورزش کو عادت بنانے سے وہی فوائد جسم کو ملتے ہیں جو طویل عرصے سے ورک آﺅٹ کرنے والوں کو حاصل ہوتے ہیں۔

تحقیق کے مطابق 40 سے 61 سال کی عمر کے افراد اگر ورزش کرنا شروع کردیں تو وہ کسی بھی وجہ سے موت کا خطرہ 16 سے 43 فیصد تک کم کرسکتے ہیں۔

محققین کا کہنا تھا کہ اس مقصد کے لیے ہر ہفتے کم از کم 150 منٹ کی ورزش جیسے تیز چہل قدمی یا 75 منٹ کی سخت ورزش کو عادت بنانا ضروری ہے۔

انہوں نے بتایا کہ جسمانی سرگرمیوں کے صحت پر مستحکم اثرات مرتب ہوتے ہیں اور خون کی شریانوں سے جڑے امراض جیسے فالج، امراض قلب اور کینسر وغیرہ کا خطرہ کم ہوتا ہے۔

اس سے پہلے کسی تحقیق میں درمیانی عمر میں ورزش کو اپنانے کے اثرات کا جائزہ نہیں لیا گیا تھا۔

اس تحقیق کے نتائج طبی جریدے جاما نیٹ ورک اوپن میں شائع ہوئے۔

متعلقہ خبریں