محکمہ اوقاف کے ملازمین تنخواہوں سے محروم کیوں؟

محکمہ اوقاف کے ملازمین تنخواہوں سے محروم کیوں؟


عجیب مخمصے کی بات یہ ہے کہ صوبائی حکومت ایک طرف صوبے کے آئمہ کرام کو ماہانہ اعزازیہ دینے کا اعلان کر رہی ہے مگر دوسری جانب محکمہ اوقاف کے ملازمین اور آئمہ خادمین مسجد اور دیگر ملازمین کو تنخواہوں کی ادائیگی نہیں ہو رہی ہے جس پر ایپکا نے احتجاجی پریس کانفرنس کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ صوبائی حکومت محکمہ اوقاف کے ملازمین سے سوتیلی ماں کا سلوک کر رہی ہے ان کو کئی مہینوں سے تنخواہوں کی ادائیگی نہیں کی گئی ہے جس کے باعث ان کا شدید مشکلات کا شکار ہوجانا فطری امر ہے۔ امر واقعہ یہ ہے کہ محکمہ اوقاف کے لئے وقف شدہ جائیدادوں سے کروڑوں کی آمدنی بھی ہوتی ہے مگر اس کے باوجود اوقاف کے ملازمین تنخواہوں سے محروم ہیں ۔ حکومت کے پاس اوقاف کے ملازمین آئمہ کرام اور خادمین مسجد کو ادائیگی کے لئے اگر رقم نہیں تو پھر بجٹ میں رقم مختص کئے بغیر سینکڑوں آئمہ مساجد کو تنخواہوں کی ادائیگی کہاں سے ہوگی اور اگر ان کے لئے بجٹ میں رقم رکھنے کی گنجائش موجود ہے تو پھر صوبے میں محکمہ اوقاف غیر رسمی سکولوں ' کمیونٹی سکولوں اور ورکرز ویلفیئر بورڈ سمیت دیگر سرکاری اداروں کے ملازمین کو تنخواہوں کی بروقت ادائیگی میں کیا امر مانع ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ علمائے کرام کا اکرام اور ان کو وظیفوں کی ادائیگی احسن اقدام ہوگا لیکن ان سے قبل جو لوگ سرکاری ملازمت پر ہیں جن کو تنخواہوں کی سرکاری خزانے سے ادائیگی ہونی ہے ان اداروں کے ملازمین کا حق پہلے کیوں نہیں دیا جاتا۔ توقع کی جانی چاہئے کہ صوبائی حکومت محکمہ اوقاف کے ملازمین کو تنخواہوں کی ادائیگی میں مزید تاخیر نہیں کرے گی اورجلد سے جلد ان کا مسئلہ حل کرلیا جائے گا۔

اداریہ