Daily Mashriq


متحدہ اپوزیشن کا فاٹا اصلاحات بل ایجنڈے سے نکالنے پرقومی اسمبلی سے واک آوٹ۔

متحدہ اپوزیشن کا فاٹا اصلاحات بل ایجنڈے سے نکالنے پرقومی اسمبلی سے واک آوٹ۔

ویب ڈیسک:قومی اسمبلی کے ایجنڈے سے فاٹا اصلاحات بل نکالنے پر اپوزیشن نے ایوان سے واک آؤٹ کردیا۔    

اسپیکر ایاز صادق کی صدارت میں قومی اسمبلی کا اجلاس ہوا۔ وزیرستان میں دو فوجی جوانوں کی شہادت پر فاتحہ خوانی کے بعد اجلاس باقاعدہ طور پر شروع ہوا تو قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ نے فاٹا اصلاحات بل کا معاملہ اٹھا دیا۔ انہوں نے کہا کہ فاٹا اصلاحات پر حکومت نے موقع ضائع کردیا ہے۔ یہ غیر سنجیدگی کا ثبوت ہے کہ تاخیر برتی جارہی ہے۔ حکومت فاٹا اصلاحات بل پارلیمنٹ میں لائے اور بل میں جو بہتری لانی ہے وہ پارلیمنٹ میں ہی لائی جائے۔ ہمیں اور بھی کام ہوتے ہیں مگر اپوزیشن پارلیمنٹ کو اہمیت دیتی ہے۔خورشید شاہ نے کہا آج پرائیویٹ ممبر دن ہے اور وزیر ہے نہ اراکین، ایوان میں وزیر اعظم، وزرا ء اور ارکان آتے ہی نہیں،  بتایا جائے بل ایجنڈے سے کیوں نکالا گیا۔  وزیراعظم سنجیدہ ہوتے تو آج صبح ہی آ جاتے۔

اس موقع پر وزیر مملکت شیخ آفتاب نے حکومت کی جانب سے اپوزیشن کو فاٹا اصلاحات پر مذاکرات کی دعوت دے دی۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم سے اس معاملے پر بات ہوئی ہے، جمعہ کو وزیراعظم کی جانب سے ناشتے کی دعوت ہے جہاں فاٹا بل پر بات کی جائے گی۔ حکومتی موقف پر خورشید شاہ نے کہا کہ حکومت نا تو لڑائی سمجھ رہی ہے اور نا ہی پیار اور دلیل۔ ہم نہیں چاہتے کہ اسپیکر روسٹرم کے سامنے آکر احتجاج کریں، فاٹا اصلاحات بل کو ایجنڈے سے نکالنا حکومت کی ناکامی ہے کیونکہ آج تک ایسا نہیں ہوا کہ بل ایجنڈے سے نکالا گیا ہو،  ہم پارلیمنٹ کی توہین کو برداشت نہیں کریں گے۔

 جماعت اسلامی کے صاحبزادہ طارق اللہ کا کہنا تھا کہ وزیرستان میں حالات گھمبیر ہوتے جا رہے ہیں، آخری وقت میں فاٹا اصلاحات کو ایجنڈے سے نکالنا فاٹا کے ساتھ ظلم ہے، جب تک فاٹا اصلاحات کو ایجنڈے میں شامل نہیں کیا جاتا ہم واک آؤٹ کریں گے۔

تحریک انصاف کے اسد عمر نےکہا ناشتے کی میز پر مذاکرات کی ضرورت نہیں، فاٹا بل پارلیمنٹ میں لایا جائے،اس معاملے پر ہم واک آؤٹ کرتے ہیں، جس کے بعد اپوزیشن نے قومی اسمبلی سے واک آؤٹ کردیا۔

متعلقہ خبریں