Daily Mashriq

ملک ، پانی اور شجرہائے سایہ دار

ملک ، پانی اور شجرہائے سایہ دار

طرح اللہ تعالیٰ نے اپنے آسمانوں کو ستاروں سے خوبصورت بنایا ہے اسی طرح زمین کی زینت اس کے پودے ، درخت اور پھل پھول ہیں ۔ یہ کائنات اور اس کی مخلوقات اللہ تعالیٰ کی وحدانیت اور عظیم ترین خالق ہونے کی دلیل ہے ۔ خالق عظیم نے اس زمین کی آبادی پانی پر رکھی ہے ۔ پانی انسان اور جاندار مخلوقات اور نباتات کی بنیادی ضرورت ہے ۔ سبزے اور پودوں ودرختوں کی ہریالی تو پانی ہی کی مرہون منت ہے ۔ اللہ تعالیٰ نے اپنی رحمانیت اور رحمت کا بھر پور مظاہرہ کر کے دنیا میں پانی کی اہمیت اور ضرورت کے پیش نظر اس کی مقدار تین چوتھائی رکھی ہے ۔ سمندروں ، بحیروں ، بحروں اور دریائوں کا ایک عظیم عالمی نیٹ ورک دنیا کے شادو آباد رہنے کیلئے پھیلایا گیا ۔ اونچے اور فلک بوس پہاڑوں کی چوٹیوں پر برفباری کے ذریعے گلیشیئر بنائے تاکہ انسان اور دیگر مخلوقات کو صاف پانی مہیا ہوتا رہے اور زندگی کا قافلہ رواں دواں رہے ۔ کیاخوبصورت اور سرسبز وشاداب دنیا ہوگی جب حضرت آدم ؑ اپنی زوجہ محترمہ اماں حوا کے ساتھ پہاڑوں کی چوٹی پر اُترے ہوں گے ۔ اور پھر پانی کی تلاش میں برف پو ش پہاڑوں کے قدموں میں بہتے دریا کے ساتھ ساتھ آتے ہوئے کسی کنارے پر بود دباش اختیار کر چکے ہوں گے ۔ 

اے آب رود گنگا! وہ دن ہیں یاد تجھ کو ؟

اُترا تیرے کنارے جب کارواں ہمارا

اُس وقت زندگی کتنی سیدھی سادی ہوتی ہوگی ۔ نہ بے ہنگم آبادی ، نہ آلودگی نہ فضا میں زہریلی گیسیں اور دھواں ، نہ وسائل کی چھینا جھپٹی ، نہ کاغذ کی کرنسی کے حصول میں ہلکان ہوتی انسانیت اور نہ ہی لالچ وحرص کہ صاف پانی آلودہ ہو تو سو بار ہو لیکن مجھے دو پیسے ملیں ۔ ہزار ہا درخت کٹ کر تباہ و برباد ہوجائیں ، تو کوئی بات ہی نہیں لیکن ٹمبر مافیا پھلتا پھولتا رہا ۔ نہ سائنسی ترقی کی مضرات وتباہی کہ نہ زمین سلامت ہے نہ فضا ۔ اوزون کا پردہ چھلنی ہو کر سورج اپنا غصہ اہل زمین پر بارہ ڈگری سنٹی گریڈ کی صورت میں نکال رہا ہے ۔ حضرت انسان نے سائنسی ترقی کی، بہت اچھا کیا ۔اور حقیقت یہ ہے کہ انسان کو بہت سہولت اور آرام ملا صحت کے مسائل اور اُس کے حل پر بڑی پیش رفت ہوئی ۔ایک طرف بہترین دوائوں اور علاج کے ذریعے اوسط عمر اور صحت میں اضافہ ہوا اور دوسری طرف ایسی بیماریاں سامنے آئیں جن کا کبھی نام نہیں سنا گیا تھا ۔ ایک طرف خوراک غلہ اجناس کی فراوانی دوسری طرف بھوک وپیاس ۔ آخر اس کی وجہ کیا ہے ؟ اس کی وجہ اس کے سوا کیا ہوسکتی ہے کہ انسان بنیادی طور پر خود غرض ، لالچی ، حریص اور نفس پرست ہے ۔ انسانوں کی انہی بیماریوں کے علاج کے لئے انبیاء کرام ؑ کا سلسلہ چلا یاگیا اور خاتم النبیینؐ کے ساتھ یہ سلسلہ ہمیشہ کے لئے مکمل ہوا ۔ دنیا آج بھی دوبارہ خوبصورت ہوسکتی ہے اگر ہم انسان ان مقدس تعلیمات سے رہنمائی حاصل کریں۔ آئیے دیکھتے ہیں کہ آپؐ نے انسانیت کو قناعت‘ صبر اور ایثار و قربانی کا سبق دے کر کس طرح اس دنیا میں اطمینان و سکون سے رہنے کا سامان کیا ہے۔ اسلام میں دولت ذریعہ حیات ہے مقصد حیات نہیں۔ کاغذ کی کرنسی نے انسانیت کو دھوکے میں ڈال کر تباہی کے راستے پر ڈال دیا ہے۔ ڈالر اور پائونڈ کے کاغذ کے لئے پوری دنیا میں کارخانوں اور صنعت نے تباہی مچا دی ہے۔خیر یہ تو عالمی مسائل ہیں جو دنیا میں بڑے ملکوں کے آپس کی جنگوں‘ مقابلوں اور حسدات نے پیدا کئے ہیں اور شاید اس کے ختم کرنے میں ہمارا کردار اتنا زیادہ فعال نہ ہوسکے لیکن وطن عزیز میں اگر ہم سب انفرادی اور اجتماعی سطح پر دو چیزوں کاخیال رکھنا شروع کردیں تو شاید حالات بہتری کی طرف گامزن ہو جائیں۔ ایک یہ کہ ہم ہرگھر کی سطح پر ہر سال اگست اور بہار‘ فروری مارچ میں ایک پھلدار اور سایہ دار درخت لگا کر اس کی دیکھ بھال کو اپنی اہم ذمہ داریوں میں شمار کرلیں اور یہ تہیہ اور عزم کرلیں کہ بغیر کسی اشد ضرورت اور وجہ کے کسی پودے اور درخت کو کاٹیں گے نہیں۔ اگر بائیس کروڑ عوام میں سے دس کروڑ نوجوان یہ ارادہ اور عزم بالجزم کرلیں تو پانچ دس سال کے اندر پاکستان کی آب و ہوا میں خوشگوار تبدیلی محسوس ہونے لگے گی۔ دوسری اہم بات یہ کہ پانی کا اسراف فوری بند کرلیں اور ہر گھر میں ہر فرد پانی کی حفاظت کرے۔ عوام اور حکومت مل کر دستیاب پانی کو احتیاط کے ساتھ استعمال کرنے کے طریقے اختیار کریں اور پانی کے محفوظ ذخائر کاانتظام کریں۔ نئے ڈیم قومی اتفاق رائے کے ساتھ تعمیر کریں تاکہ بھارت کی بد نیتی خاک میں مل جائے اور قرآن کریم کے الفاظ میں وہ اپنے غیض و غضب میں مر جائے۔ پاکستان کے سارے مسائل بہت جلد حل ہو جائیں گے انشاء اللہ۔ لیکن اگر ہم دو باتوں کا خیال رکھیں جو آج کے حالات میں بہت ضروری ہیں۔ ایک ہر صورت میں پاکستان سے محبت کریں اور پاک افواج کو مضبوط رکھنے کے لئے اس کی پشت پر رہیں ۔ اللہ پاکستان کو شاد و آباد و تر و تازہ اور ہرا بھرا اور پانی کی نعمت سے سرفراز رکھے۔ آمین

متعلقہ خبریں