Daily Mashriq

دہشت گردی مقدمات میں کوئی جرم قابلِ معافی نہیں، سپریم کورٹ

دہشت گردی مقدمات میں کوئی جرم قابلِ معافی نہیں، سپریم کورٹ

اسلام آباد: دور رس اثرات کے حامل ایک فیصلے میں سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ اگر متاثرہ فریق مجرم کے جرم کے ساتھ ساتھ کیے گئے کم سنگین نوعیت کے جرم میں معاف بھی کردیں تو بھی دہشت گردی کے مقدمات میں راضی نامہ نہیں ہوسکتا۔

عدالت عظمیٰ کی جانب سے 27 صفحات پر مشتمل فیصلے میں اس بات کی رہنمائی کی گئی کہ انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت ناقابلِ راضی نامہ جرم سے کس طرح نمٹا جائے جبکہ اسی جرم کے ساتھ ایک قابلِ راضی نامہ جرم بھی کیا گیا ہو۔

مذکورہ فیصلہ چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں 7 ججز پر مشتمل لارجر بینچ نے سنایا۔

اس سلسلے میں بینچ نے دہشت گردی کے ناقابلِ راضی نامہ جرم کے ساتھ قابلِ راضی نامہ جرم کے اثرات کے حوالے سے متعدد سوالات کے جوابات بھی دیے اور مختلف سوالوں پر متعدد فیصلے دیتے ہوئے کہا کہ اس مسئلے سے متعلق جوابات پہلے بھی دستیاب تھے لیکن علیحدہ علیحدہ موجود تھے۔

چانچہ عدالتی فیصلے میں کہا گیا کہ ’تازہ حکم نامے میں ان تمام دستیاب حل کو جوڑنا ضروری تھا۔

فیصلے میں چیف جسٹس نے وضاحت کرتے ہوئے بتایا کہ دہشت گردی کا ناقابلِ راضی نامہ جرم اسی کیس میں کیے گئے کسی بھی دوسرے قسم کے جرم سے مختلف نوعیت اور آزاد حیثیت کا حامل ہے۔

چنانچہ قانون کے مطابق اگر منسلک جرم پر فریقین کے درمین راضی نامہ بو بھی جائے تو دہشت گردی کا جرم ناقابلِ راضی نامہ ہی رہے گا۔

اس حولے سے درپیش دوسرا سوال یہ تھا کہ فریقین کے درمیان ناقابلِ راضی نامہ جرم پر سمجھوتہ ہوجانے کی وجہ سے دہشت گردی کے جرم میں دی گئی سزا میں کمی ممکن ہے؟

جس کے جواب میں فیصلے میں کہا گیا کہ سزا میں کمی پر غور وہی عدالت کرسکتی ہے جہاں اس معاملے کی سماعت ہوئی ہو اس کو خود کار طریقے سے نافذ نہیں کیا جاسکتا۔

تیسرا سوال اس بارے میں تھا کہ کون سی عدالت ناقابلِ راضی نامہ جرم کی سزا میں کمی کرسکتی ہے جس کے جواب میں عدالت عظمیٰ نے وضاحت کی کہ مقدمے کے اختتام پر ٹرائل کورٹ بھی سزا میں کمی کرسکتی ہے۔

متعلقہ خبریں