Daily Mashriq

پی ایس ایل 5 کے تمام میچز پاکستان میں کرانے کا اعلان

پی ایس ایل 5 کے تمام میچز پاکستان میں کرانے کا اعلان

لاہور: پاکستان کرکٹ بورڈ(پی سی بی) کے چیئر مین احسان مانی نے کہا ہے کہ پاکستان سپر لیگ کا اگلا سیزن مکمل پاکستان میں ہوگا جس کے لیے شہروں کو شارٹ لسٹ کرلیا گیا ہے جبکہ رواں سال متعدد انٹرنیشنل ٹیموں کے دورہ پاکستان کا امکان ہے۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے احسان مانی کا کہنا تھا کہ کرکٹ بورڈ اگلے سال ایشیا کپ کا انعقاد پاکستان میں ہی کروانے کا خواہش مند ہے تاہم اگر کسی ٹیم کو اعتراض ہوا تو بھارت کی طرح متحدہ عرب امارات میں بھی ایونٹ کروانے کا آپشن موجود ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم بھارت کے ساتھ کرکٹ رابطے بحال کرنا چاہتے ہیں لیکن اس کے لیے بھارتی کرکٹ بورڈ کو پہل کرنی ہوگی۔

چیئرمین پی سی بی نے شائقین کرکٹ کو خوشخبری سناتے ہوئے بتایا کہ اگلے برس پی ایس ایل فائیو کے تمام میچز پاکستان میں ہوں گے جس کے لیے چار اسٹیڈیمز کو شارٹ لسٹ بھی کر لیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ لاہور اور کراچی کے اسٹیڈیمز میں پچھلے ایڈیشنز کی وجہ سے کام ہو چکا ہے جبکہ ملتان اور راولپنڈی کے اسٹیڈیمز میں پی سی بی خطیر رقم خرچ کر رہا ہے۔

چیئرمین پی سی بی نے کہا کہ پاکستان نے بنگلہ دیش اور سری لنکا کے خلاف ٹیسٹ سیریز کی میزبانی کرنا ہیں جو آئی سی سی ٹیسٹ چمپئن شپ کا حصہ ہیں، ہم اس کوشش میں ہیں کہ میچز پاکستان میں ہوں اور اس حوالے سے مثبت پیش رفت ہو گی۔

ایک سوال کے جواب میں احسانی مانی کا کہنا تھا کہ ڈومیسٹک کرکٹ اسٹرکچر میں تبدیلی کے لیے سفارشات بھجوا دی گئی ہیں اور منظوری ملتے ہی انہیں لاگو کردیا جائے گا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ پچھلے 4برسوں میں بورڈ میں 210ملازمین رکھے گئے ہیں جو انتہائی حیران کن ہے لیکن ہم کرکٹ بورڈ پروفیشنلز کے ہاتھوں میں دینا چاہتے ہیں۔

ایم ڈی پی سی بی وسیم خان کے حوالے سے احسان مانی نے کہا کہ وہ 20 روزہ دورے پر انگلینڈ میں ہیں، وہ مکمل الاؤنسز لینے سے دستبراد ہوئے ہیں، انہوں نے صرف 9 دنوں کے 1800 ڈالرز لیے ہیں جب کہ ان کے الاؤنس 6400 ڈالرز بنتے تھے، وسیم خان رہائش بھی اپنی استعمال کر رہے ہیں۔

چیئرمین پی سی بی نے کہا کہ کرکٹ آسٹریلیا اور انگلش کرکٹ بورڈ کے سربراہان بھی پاکستان آئیں گے اور پاکستان میں انٹر نیشنل کرکٹ کے حوالے سے بات چیت ہوگی۔

ایک سوال کے جواب میں احسان مانی کا کہنا تھا کہ وہ تبدیلی برائے تبدیلی کے قائل نہیں اور اسی لیے کپتان سرفراز احمد، ٹیم مینجمنٹ اور سلیکشن کمیٹی کو ورلڈ کپ کے اختتام تک نہیں چھیڑا جائے گا، میگا ایونٹ کے اختتام پر کرکٹ بورڈ ٹیم کی 3سالہ کاکردگی کا جائزہ لے کر مستقبل کے بارے میں فیصلے کرے گا۔

متعلقہ خبریں