Daily Mashriq

پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ طاہرالقادری کا سیاست چھوڑنے کا اعلان

پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ طاہرالقادری کا سیاست چھوڑنے کا اعلان

پاکستان عوامی تحریک (پی اے ٹی) کے سربراہ اور معروف مذہبی اسکالر علامہ طاہر القادری نے سیاست سے علیحدگی کا اعلان کردیا۔

سیاست سے ریٹائرمنٹ کا اعلان انہوں نے لاہور میں منہاج القرآن سیکریٹریٹ میں ویڈیو لنک کے ذریعے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔

طاہر القادری نے کہا کہ انہوں نے سیاست چھوڑنے کا فیصلہ کرلیا ہے اور یہ فیصلہ انہوں نے لاہور میں اپنے حالیہ قیام کے دوران کیا تھا۔

بعد ازاں سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر اپنے پیغام میں انہوں نے کہا کہ وہ اپنے تعلیمی وعدوں اور صحت کی خرابی کی وجہ سے سیاست سے علیحدہ ہورہے ہیں۔

قبل ازیں پریس کانفرنس کے دوران ایک سوال کے جواب میں طاہر القادری نے کہا ان کی جماعت کی ورکنگ کونسل، فیڈرل کونسل اور تھینک ٹینک سے مشاورت کے بعد یہ فیصلہ کیا تھا۔

انہوں نے مزید بتایا کہ اس دوران یہ بھی فیصلہ کیا گیا تھا کہ اس ریٹائرمنٹ کا اعلان مناسب وقت پر حالات کو دیکھتے ہوئے کیا جائے گا۔

طاہر القادری نے اپنی سیاست میں واپسی کے امکان کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ دوبارہ ملکی سیاست میں واپسی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

انہوں نے کہا کہ وہ پارٹی کی چیئرمین شپ سے بھی علیحدہ ہورہے ہیں، اپنے بیٹوں میں سے کسی کو پارٹی کی کمان نہیں دیں گے، اس کا فیصلہ پارٹی کی شوریٰ کرے گی۔

ڈاکٹر طاہر القادری کا کہنا تھا کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن پر قانونی جنگ جاری ہے اور وہ جاری رہے گی۔

اپنے خطاب کے آغاز میں معرف مذہبی اسکالر کا کہنا تھا کہ ان کا سیاست میں آنے کا مقصد اقتدار حاصل کرنا نہیں تھا بلکہ انہوں نے اصلاحی سیاست کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اپنی جماعت پاکستان عوامی تحریک کے قیام کے بعد 1990 کی دہائی میں ملک بھر میں شرح خواندگی بڑھانے کے لیے تعلیمی مراکز قائم کرنے پر توجہ مرکوز کی گئی اور ملک بھر میں تعلیم دینے کی ایک تحریک شروع کی گئی جس کے تحت 5 ہزار سے زائد تعلیمی مراکز قائم ہوئے۔

طاہر القادری نے ملکی سیاست کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ‘اسمبلیوں میں بیٹھنے والے لوگ اپنی مراعات اور مفادات کا تحفظ کرتے ہیں، اسمبلی میں ملک و قوم کی بہتری کے علاوہ ہر بات ہوتی ہے۔‘

متعلقہ خبریں