Daily Mashriq


وزیراعظم کی کرائسٹ چرچ میں دہشتگردحملےکی شدید مذمت

وزیراعظم کی کرائسٹ چرچ میں دہشتگردحملےکی شدید مذمت

وزیراعظم عمران خان نے کرائسٹ چرچ میں دہشت گرد حملے کی شدید مذمت کی ہے۔

 ایک ٹویٹ میں انہوں نے اس دہشت گردی کی کارروائی کو نائن الیون کے بعد مسلمانوں کے خلاف پیدا ہونے والی نفرت کی وجہ قرار دیا ہے جس کے تحت صرف ایک مسلمان کی بجائے دنیا کےایک ارب تیس کروڑ مسلمانوں کو کسی بھی دہشت گرد کارروائیوں کا مورد الزام ٹھہرایا جارہا ہے۔

  وزیراعظم نے اس حملے کو مسلمانوں کی جائز سیاسی جدوجہد کو نقصان پہنچانے کی دانستہ  کوشش بھی قرار دیا۔

 عمران خان نے کہاکہ اس واقعے نے ہمارے اس دعوے کی تصدیق کردی ہےکہ دہشت گردی کا کوئی مذہب نہیں ہوتا۔

پی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بھی نیوزی لینڈ میں دہشت گرد حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔

 انہوں نے واقعے پر گہرے دکھ اور متاثرین سے تعزیت کا اظہار کیا۔

 وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ کرائسٹ چرچ میں تقریباً3 سو پاکستانی رہائش پذیر ہیں اور اس المناک واقعے میں کسی پاکستانی کے جاں بحق ہونے کی اطلاعات موصول نہیں ہوئیں۔

 دفتر خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر محمد فیصل نے بھی ایک ٹویٹ میں آج نیوزی لینڈ میں دہشت گرد حملے کی شدید مذمت کی ۔

انہوں  نےکہا کہ ہمارا ہائی کمیشن مقامی حکام کے ساتھ مسلسل رابطے میں ہے اور مزید تفصیلات کے حصول کےلئے کوششیں کررہا ہے۔

 ترجمان نے کہا کہ پاکستان ہائی کمیشن نے سیاسی امور کے ناظم سید معظم شاہ کو اس مقصد کےلئے فوکل پوائنٹ نامزد کیاہے۔

وزیر اطلاعات چودھری فواد حسین نے ایک ٹویٹ میں نیوزی لینڈ میں دو مساجد پر حملوں پرگہرے دکھ اور افسوس کااظہار کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کے عوام مشکل کی اس گھڑی میں نیوزی لینڈ کے عوام کےساتھ ہیں۔

وزیر اطلاعات نے کہا کہ پاکستان چند سال پہلے اس صورتحال سے گزرا ہے اور ہم اس درد اور تکلیف کو سمجھ سکتے ہیں۔

متعلقہ خبریں