Daily Mashriq


سینیٹ الیکشن میں 1ارب20کروڑروپے سے ارکان اسمبلی خریدے گئے، بکنے والوں میں پی ٹی آئی کے20ارکان شامل،عمران خان

سینیٹ الیکشن میں 1ارب20کروڑروپے سے ارکان اسمبلی خریدے گئے، بکنے والوں میں پی ٹی آئی کے20ارکان شامل،عمران خان

ویب ڈیسک:چیئر مین تحریک انصاف عمران خان نے سینیٹ الیکشن میں پیسے لے کر ووٹ دینے والے پارٹی ارکان کیخلاف سخت ایکشن لے لیا

تفصیلات کے مطابق چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی کے 20اراکین سینیٹ ہارس ٹریڈنگ میں ملوث پائے گئے، عمران خان کا کہنا تھا کہ اگر شوکاز نوٹس پر مطمئن نہیں کیا گیا تو اراکین کو پارٹی سے نکال کر ان کا نام  نیب کو فراہم کر دیں گے۔

چیئرمین تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ گزشتہ 40برس سےسینیٹ الیکشن میں اراکین اپنے ضمیر کا سودا کرتے آرہے ہیں ۔ حالیہ سینیٹ الیکشن میں بھی کسی پارٹی نے کوئی پروا نہیں کی اور ہماری براہ راست طریقہ انتخاب کی تجویز کو مسترد کر دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم نے پیسے لے کر ووٹ دینے والوں کیخلاف ایکشن لیا اور کمیٹی میں تحقیقات کے بعد نام سامنے لے کر آئے، پیسے کے کیلئے اپنا ووٹ بیچنے والے اراکین اسمبلی میں نرگس علی، دینا ناز،نگینہ خان،فوزیہ بی بی،نسیم حیات، سردار ادریس، عبید مایار، زاہد درانی، عبدالحق، قربان خان، امجد آفریدی، عارف یوسف، جاوید نسیم، یاسین خلیل، فیصل زمان، سمیع علی زئی، میراج ہمایوں، خاتون بی بی، بابر سلیم، اور وجیح الزمان شامل ہیں۔

اس سے قبل چیئرمین عمران خان کو پی ٹی آئی کے ایم پی ایز کے ناموں کی رپورٹ دی گئی رپورٹَ میں دعویٰ کیا گیا کہ سینیٹ انتخابات میں 1ارب20کروڑسے ارکان اسمبلی کے ووٹ خریدے گئے،

رپورٹ کے مطابق تحریک انصاف کے ایم پی ایز نے 60کروڑ روپے وصول کیے۔جبکہ پی ٹی آئی کے علاوہ دیگر پارٹیوں سے وابستہ اراکین اسمبلی نے بھی پیسوں کے بدلے ووٹ کا سودا کیا تاہم ایک ممبر نے ڈیل منسوخ کر دی۔

پریس کانفرنس کے دوران عمران خان نے کہا کہ ہم نے اپنے لوگوں کے خلاف تحقیقات کیں، ہمیں یہ بھی پتا ہے کہ باقی جماعتوں کے لوگ بھی بکے ہیں لیکن انتظار کر رہے ہیں کہ باقی جماعتیں بھی ہماری طرح کارروائی کریں، اگر دیگر جماعتوں نے کارروائی نہ کی تو ہم ان لوگوں کے نام بھی جاری کریں گے۔

متعلقہ خبریں