Daily Mashriq


روپے کی قدرمیں کمی کی وجوہات

روپے کی قدرمیں کمی کی وجوہات

گزشتہ دنوں اچانک معلوم پڑا کہ ایک بار پھر ڈالر کو پر لگ گئے ہیں اور روپیہ اپنی قدر کھورہا ہے ، اسحاق ڈار کے جاتے ہی روپے کی اصل ویلیو سامنے آگئی ہے ۔ ہر پاکستانی کی طرح میرے لئے بھی یہ بات تشو یشنا ک تھی کہ اچانک ایسا کیا ہوا کہ پاکستانی روپیہ اپنی قدر کھو بیٹھا؟جبکہ حقیقت یہ ہے کہ آئی ایم ایف سے نئے قرض حاصل کرتے رہنے کے لیے پاکستان نے گزشتہ دنوں روپے کی قدر میں کمی کرنے کے حوالے سے آئی ایم ایف کی شرط تسلیم کرتے ہوئے ڈالر کے مقابلے میںروپے کی قدر کم کرنے پرآمادگی ظاہر کردی ہے ،جس کے بعد ڈالر کی قیمت میں اضافہ ہونا شروع ہوگیاہے،امور تجارت پر نظر رکھنے والے اور کاروبار کی ابجد جاننے والے بھی یہ بات اچھی طرح جانتے ہیں کہ روپے کی قدر میں کمی کا براہِ راست اثردرآمد کی جانے والی اشیاپہ پڑتا ہے اور وہ مزید مہنگی ہوجاتی ہیں جبکہ برآمدکنندگان کو اس سے فائدہ پہنچتاہے اور بیرونی منڈیوں میں ان کے لیے کاروبار کرنا آسان ہوجاتاہے،جس کے نتیجے میں برآمدات میں اضافہ ہوتاہے اور اس طرح حکومت کودرآمدات اور برآمدات کے درمیان توازن پیداکرنے اور درآمدی وبرآمدی تجارت میں خسارے کو کنٹرول میں رکھنے میں آسانی ہوتی ہے، یہی وہ حقیقت ہے جس کی وجہ سے ڈالرکے مقابلے میں پاکستانی روپے کی گرتی ہوئی قدر سے پاکستان کی ٹیکسٹائل اور دیگر برآمدی صنعت سے وابستہ افراد میں خوشی کی لہردوڑ گئی ہے جبکہ درآمد کنندگان میں شدید بے چینی پائی جاتی ہے۔پاکستانی روپے کی قدر میں کمی کا براہِ راست اثر ان اشیاکی قیمتوں پر ہوتا ہے جو بیرونِ ملک سے درآمد کی جاتی ہیں جیسے کہ کمپیوٹرز، گاڑیاں اور موبائل فونز وغیرہ ڈالر کی قیمت میں اضافے اور روپے کی قیمت میں کمی سے ان تمام اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ ہونایقینی ہے۔اس کے علاوہ روپے کی قدر میں کمی سے پاکستان پر بین الاقوامی مالیاتی ادارے آئی ایم ایف اور عالمی بنک کے قرضوں کا حجم بھی راتوں رات بڑھ جائے گا۔ اس صورت حال کواس طرح سمجھا جاسکتاہے کہ اگر ایک ڈالر 100 روپے کے برابر ہو اور ایک ارب ڈالر کا قرضہ ہو تو اس حساب سے 100 ارب روپے کا قرضہ ہوگا لیکن اگر ڈالر 110 کا ہوجائے تو قرضہ بھی اسی حساب سے بڑھ جائے گا۔دوسری جانب روپے کی قدر میں کمی سے ملکی برآمدات کرنے والوں کو بظاہر فائدہ ہوتا ہے۔ چونکہ برآمد کرنے والے کو اپنی چیز کی زیادہ قیمت مل رہی ہوتی ہے اس لیے وہ اپنی پیداواری لاگت میں رہتے ہوئے اشیاء کی قیمت میں کمی کر سکتا ہے۔ اس طرح عالمی منڈی میں برآمدات بڑھ جاتی ہیں اوراس سے جاری کھاتے یا کرنٹ اکاؤنٹ کا خسارہ بھی کم ہوجاتا ہے۔روپے کی قدر میں کمی سے برآمد کنندگان اور ٹیکسٹائل لابی خوش ہوتی ہے۔ماہرمعاشیات کا کہنا ہے کہ جب سے موجودہ حکومت آئی ہے پاکستان کی برآمدات مستقل کم ہو رہی ہیں اور درآمدات تیزی سے بڑھ رہی ہیں جس کی وجہ سے گزشتہ چار سال چار ماہ میں 107 ارب ڈالر کا تجارتی خسارہ ہوا ہے۔روپے کی قدرمیں کمی بظاہر غیر مقبول فیصلہ ہے تاہم پاکستان کا بااثر طبقہ یعنی برآمد کنندگان اور ٹیکسٹائل لابی اس سے بہت خوش ہوں گے۔ایک طرف پاکستان میں روپے کی قیمت میںکمی کا سلسلہ شروع ہوچکاہے اورڈالر آسمان پر اڑان بھر رہاہے دوسری جانب پاکستان کے فیڈرل بورڈ آف ریونیو کی جانب سے جاری کیے گئے ایک حکم نامے نے دوسرے ممالک سے منگوائی جانے والی 731 درآمدی مصنوعات کو مہنگا کر دیا ہے۔حکومت نے درآمدی مصنوعات پر عائد ڈیوٹی اور مختلف ٹیکسوں کی شرح کو 10 سے 50 فیصد تک بڑھا دیا ہے۔حکومت کے اس حالیہ فیصلے کے بعد مکھن، پنیر، دہی، مچھلی، کاسمیٹک، شیمپو، بالوں کو رنگنے والے کلرز، کھیلوں کا سامان، درآمدی گاڑیوں، خشک میوہ جات، درآمدی پھل اور سبزیاں، الیکٹرانک سمیت دیگر اشیاء مہنگی ہو گئی ہیں۔ حکومت کا مؤقف ہے کہ بڑھتے ہوئے تجارتی خسارے کو کم کرنے کے لیے نئے ٹیکس لگائے گئے ہیں اور ان ٹیکسوں سے عام آدمی متاثر نہیں ہو گا بلکہ یہ پر تعیش اشیاء پر عائد کیا گیا ہے۔

اقتصادی ماہرین کا کہنا ہے کہ حکومت بلاواسطہ ٹیکسوں کا دائرہ کار بڑھانے کے بجائے بالواسطہ ٹیکسوں کی شرح میں اضافہ کر رہی ہے، جس سے مہنگائی میں اضافہ ہو گا۔دوسری جانب صارفین ضروری درآمدی اشیاء پر مزید ٹیکس عائد کرنے پر نالاں ہیں۔ صارفین کی بھلائی کے پیش نظر تجارتی خسارہ کم کرنے کے لیے برآمدات کو بڑھانا چاہیے۔یاد رہے کہ رواں مالی سال کے پہلے دو ماہ کے دوران پاکستان کی برآمدات ساڑھے تین ارب ڈالر اور درآمدات نو ارب 78 کروڑ ڈالر تک پہنچ گئی ہیں۔ جولائی اور اگست میں مجموعی تجارتی خسارہ چھ ارب ڈالر سے بڑھ گیا ہے جو گذشتہ سال سے 33 فیصد زیادہ ہے۔سابق وزیر اعظم کی نا اہلی کے بعد عوام میں یہ تاثر پایا جاتا ہے کہ موجودہ حکومت دن پورے کر رہی ہے اور جب یہ حکومت اپنی مدت پوری کرے گی تو ملک قرضوںمیں ڈوب چکا ہوگااسلئے ہم سمجھتے ہیں کہ ملک جس نازک دور سے گزر رہا ہے ان حالات میں اپوزیشن کی ذمہ داریاں بڑھ جاتی ہیں ،بالخصوص وہ سیاستدان جنہوں نے اپنی زندگی کا بیشتر حصہ سیاست کے نام کیا ہے ایسے قائدین ملک و قوم کے مفاد کو مدنظر رکھتے ہوئے حقائق قوم کے سامنے کی اپنے تئیں سعی کریں تو نقصان کو کسی حد تک کم کیا جا سکتا ہے۔

متعلقہ خبریں