Daily Mashriq


فنانس ترمیمی بل:موبائل فونز، سگریٹ اور بڑی گاڑیاں مہنگی

فنانس ترمیمی بل:موبائل فونز، سگریٹ اور بڑی گاڑیاں مہنگی

ویب ڈیسک:حکومت نے منی بجٹ میں سگریٹ اور مہنگے موبائل فون پر ڈیوٹی بڑھانے اور ای او بی آئی کی کم سے کم پنشن 10 ہزار روپے کرنے کی تجویز پیش کردی۔

حکومت نے 300 پر تعیش اشیاء پر ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کر دی، 295 اشیاء پر ڈیوٹی میں اضافہ کیا گیا، امپورٹڈ ٹِن فوڈ، مشروبات، جوسز، ٹافیاں اور چاکلیٹ مہنگے کر دیئے گئے، درآمد شدہ ٹن فروٹس، پائن ایپل اور جیلی پر بھی ڈیوٹی بڑھا دی گئی۔ اسی طرح امپورٹڈ دودھ اور منرل واٹر پر ڈیوٹی میں اضافہ ہوا، امپورٹڈ چیری، سویٹ کارن، مشروب بھی مہنگے ہو جائیں گے۔ امپورٹڈ رس بیری، بلیک بیریز پر بھی ڈیوٹی بڑھا دی گئی۔

 فنانس بل کے مطابق، چار لاکھ روپے سالانہ تک کی آمدن پر کوئی ٹیکس نہیں ہوگا، چار سے 8 لاکھ روپے سالانہ آمدن پر 1 ہزار ٹیکس ہوگا، آٹھ سے 12 لاکھ روپے سالانہ آمدن پر 2 ہزار روپے ٹیکس ہوگا، اسی طرح 12 سے 24 لاکھ روپے سالانہ آمدن پر 5 فیصد ٹیکس ہوگا، 30 سے 40 لاکھ روپے آمدن پر ڈیڑھ لاکھ روپے فکسڈ ٹیکس ہوگا، 30 سے 40 لاکھ روپے آمدن کو فکسڈ کے علاوہ 20 فیصد ٹیکس بھی دینا ہوگا۔

بل کے مطابق، 40 سے 50 لاکھ روپے آمدن والوں کو ساڑھے 3 لاکھ روپے فکسڈ ٹیکس دینا ہوگا، 40 سے 50 لاکھ روپے آمدن والوں کو 25 فیصد ٹیکس دینا ہوگا، 50 لاکھ روپے سے زائد آمدن پر 6 فکسڈ اور 29 فیصد ٹیکس دینا ہوگا۔

وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر نے قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ پنشن میں 10 فیصد اضافہ کیا جا رہا ہے، کسان کی آسانی کیلئے کھاد کی ترسیل بڑھا رہے ہیں، تمباکو پر ٹیکس بڑھا رہے ہیں، یوریا کی قیمتوں میں استحکام کیلئے 7 ارب روپے سبسڈی منظور کی گئی ہے، مزدوروں کیلئے 8 ہزار 276 گھر تعمیر کیے جائیں گے، برآمدی صنعت کیلئے خام مال سے ڈیوٹی ختم کریں گے۔ انہوں نے کہا ایکسپورٹ انڈسٹری کیلئے 82 مصنوعات پر ڈیوٹی ختم کر رہے ہیں، پنجاب میں ٹیکسٹائل بند ہونے سے 5 لاکھ افراد بے روزگار ہوگئے۔

اسد عمر نے مزید کہا کہ ہم 5 اہم اقدامات کرنے جا رہے ہیں، مہنگے فونز پر بھی ڈیوٹی عائد کرنے کی تجویز ہے، بجٹ میں سگریٹ پر ٹیکس عائد کرنے کی تجویز ہے، 1800 سی سی سے اوپر گاڑیوں پر ڈیوٹی 20 فیصد کر دی گئی، نان فائلرز کیلئے نئی گاڑی اور جائیداد خریدنے پر پابندی ختم کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا ٹیکس بڑھائے بغیر 95 ارب روپے اضافی حاصل کریں گے، ریگولیٹری ڈیوٹی کی مد میں ایکسپورٹ انڈسٹری کو 5 ارب کا ریلیف دے رہے ہیں۔

وزیر خزانہ نے مزید کہا کہ یوریا کیلئے 6،7 ارب روپےکی سبسڈی کی منظوری دی کاچکی ہے، سالانہ 12 لاکھ آمدنی والے افراد سے اضافی ٹیکس وصول نہیں کیا جا رہا، بینگ ٹرانزیکشن پر نان فائلر 0.6 فیصد ٹیکس ادا کرے گا۔

اسد عمر نے کہا ہمارا ہدف معیشت کو استحکام دینا اور روزگار فراہم کرنا ہے، بجٹ میں تبدیلی نہ کی گئی تو مشکلات پیدا ہوسکتی ہیں۔ انہوں نے کہا مدت پوری کرنیوالی حکومت کو آئندہ مالی سال کیلئے بجٹ پیش کرنے کا اختیار نہیں، گزشتہ حکومت کا پیش کیا گیا چھٹا بجٹ حقائق کے برعکس تھا۔ ان کا کہنا تھا بجلی کے سیکٹر میں ساڑھے 400 ارب روپے کا ایک سال میں خسارا ہوا، ملک کو قرضوں سے نکالنا ہماری اولین ترجیح ہے۔

وفاقی وزیر خزانہ نے کہا کہ پچھلے سال بجٹ خسارہ 4.1 تھا، کوشش کریں گے کہ برآمدات میں اضافہ ہو، زرمبادلہ کے ذخائر تیزی سے گر رہے ہیں، بیرونی قرضے 60 ارب سے بڑھ کر 95 ارب تک پہنچ گئے۔ انہوں نے کہا گیس کے شعبے میں 100 ارب سے زائد خسارے کا سامنا ہے، بجٹ میں تبدیلی نہ کی گئی تو مشکلات پیدا ہوسکتی ہیں۔ ان کا کہنا تھا موجودہ صورتحال میں خسارہ 7.2 فیصد تک پہنچ سکتا ہے، اگر ہم اسی طرح چلتے رہے تو خسارہ 2 ہزار 900 ارب روپے تک پہنچ سکتا ہے۔

 اسد عمر کا کہنا تھا گردشی قرضوں میں گزشتہ سال 550 ارب روپے اضافہ ہوا، گیس سیکٹر میں زیر گردشی قرض 150 ارب روپے تک پہنچ گئے، زرمبادلہ کے ذخائر 2 ماہ کی درآمداد کے لیے ناکافی ہیں۔ انہوں نے کہا روپے کی قدر میں کمی سے پٹرول مزید 20 روپے مہنگا ہوسکتا ہے، زیادہ تنخواہ والے افراد پر گزشتہ سال کی نسبت ٹیکس کم کر رہے ہیں، کراچی کے انفرا اسٹرکچر کے منصوبوں کیلئے 50 ارب رکھے گئے ہیں۔

 وزیر خزانہ نے کہا اسمبلی ارکان کی مراعات پر ٹیکس استثنیٰ ختم کیا جا رہا ہے، سی پیک کے منصوبوں میں ایک روپے کمی نہیں آنے دیں گے، 30 سال میں ہم نے کوئی کامیابی حاصل نہیں کی، مالی سال 2018 میں 661 ارب روپے کا ترقیاتی بجٹ تھا، رواں مالی سال ترقیاتی بجٹ 725 ارب روپے کر دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا دیامر اور بھاشا ڈیمز کو 6 سال میں تعمیر کیا جائے گا۔

اسد عمر نے پٹرولیم ڈویلپمنٹ لیوی میں اضافہ واپس لینے کا بھی اعلان کیا۔ انہوں نے کہا وزیراعظم، وزرا اور گورنرز کے الاؤنسز پر ٹیکس استثنیٰ ختم کر رہے ہیں، نئے مالیاتی بل میں مختلف شعبوں پر ٹیکس میں کمی ہے۔

متعلقہ خبریں