بھارتی آبدوز کی دراندازی ناکام

بھارتی آبدوز کی دراندازی ناکام

پاک بحریہ نے پاکستانی سمندری حدود میں بھارتی ایٹمی آبدوز کے داخل ہونے کی کوششوں کو ناکامی سے دو چار کرکے سمندر میں بھی اپنی برتری ثابت کردی اور بھارتی نیوی کے مذموم عزائم ناکام بنا دئیے۔ جمعہ کو ترجمان پاک بحریہ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ بھارتی بحریہ اپنی آبدوزوں کو پاکستان کے خلاف تعینات کر رہی ہے۔ پاک بحریہ کے فلیٹ یونٹس نے پاکستان کے سمندری علاقے کے جنوب میں بھارتی ایٹمی آبدوز کی موجودگی کا سراغ لگایا اور اس کی نقل و حرکت کو محدود کردیا ہے۔ ترجمان کے مطابق پاکستان نیوی نے بھارتی آبدوز کی اپنی موجودگی کو خفیہ رکھنے کی ہر کوشش کو ناکام بنا دیا۔ نیوی فلیٹ یونٹس نے آبدوز کا مسلسل تعاقب کئے رکھا اور اسے پاکستانی پانیوں سے دور دکھیل دیا۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ مذموم عزائم کے حصول کے لئے بھارتی فوج کے ساتھ ساتھ بھارتی بحریہ بھی اپنی آبدوزوں کو پاکستان کے خلاف استعمال کر رہی ہے۔ ترجمان کے مطابق یہ اہم کارنامہ پاکستان نیوی کی اینٹی سب میرین وارفیئرکی بہترین اور اعلیٰ صلاحیتوں کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ پاکستان کی بحری سرحدوں کے لئے پاک بحریہ ہر لمحہ مستعد و تیار ہے اور کسی بھی جارحیت کا منہ توڑ جواب دینے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہے۔ امر واقعہ یہ ہے کہ بھارتی حکمران پاکستان کے خلاف جارحیت کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیتے۔ ایک تو کشمیر میں جب سے تحریک آزادی کی نئی لہر ابھر کر سامنے آئی ہے بھارتی افواج ایک جانب مظلوم کشمیریوں کے خون سے ہاتھ رنگ رہی ہیں اور خالص کشمیری احتجاج کے پیچھے پاکستان کی تلویث کے نشان ڈھونڈ رہی ہیں۔ دوسرے وہ گزشتہ دو ڈھائی مہینے سے کشمیر کنٹرول لائن پر جارحیت کا بار بار مظاہرہ کرتے ہوئے بلا اشتعال فائرنگ سے پاکستانی افواج کے علاوہ بے گناہ کشمیری عوام کے جان و مال کو نشانہ بنا کر اپنے خبث باطن کا مظاہرہ کر رہی ہیں۔ گزشتہ دنوں بھارتی افواج نے ایک بار پھر کنٹرول لائن پر جارحانہ کارروائی میں پاکستان کے سات جوانوں کو شہید کیا جس کے جواب میں پاکستان نے کارروائی کرتے ہوئے بھارتی افواج کے 13فوجیوں کو جہنم واصل کیا مگر بھارتی افواج فوجیوں کی ہلاکتوں پر خاموشی رہیں تو پاک فوج کے کمانڈر انچیف نے بہ بانگ دہل یہ اعلان کیا کہ جس روز پاکستان کے سات جوانوں کی شہادت ہوئی اس روز گیارہ بھارتی فوجی ہلاک کئے۔ ہم شہادت تسلیم کرتے ہیں۔ بھارت مردانگی دکھائے اور اپنے فوجیوں کا بتایا کرے۔ اس پر بالآخر گزشتہ روز بھارتی وزارت دفاع کی جانب سے کنٹرول لائن پر اپنے 13فوجیوں کی ہلاکت کا اعتراف سامنے آہی گیا۔ اب بھارت دونوں ملکوں کے درمیان چھوٹی چھوٹی جھڑپوں کو کسی سوچی سمجھی سازش کے تحت بڑی سطح کے جنگ میں تبدیل کرنا چاہتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اس کی بحریہ نے بلوچستان کے ساحلی علاقے میں اپنی آبدوز کو پاکستانی بحری حدود میں صورتحال کا جائزہ لینے کے لئے بھیجا۔ اگرچہ بھارتی بحریہ نے اپنی ناکامی کو چھپانے کے لئے اپنی کسی آبدوز کے پاکستانی سمندری حدود میں داخل ہونے کی تردید کی ہے۔ دریں اثناء وفاقی وزیر دفاع خواجہ محمد آصف نے ایک بیان میں کہا ہے کہ چوکس پاک بحریہ نے بھارتی آبدوز کو اپنی سمندری حدود میں گھسنے سے روک دیا ہے۔ ادھر پاک بحریہ کے کموڈور(ر) تسنیم احمد کا تجزیہ سامنے آیا ہے جس میں انہوں نے کہا ہے کہ بھارتی سب میرین کے پاکستان آنے کے تین سے چار مقاصد ہوسکتے ہیں۔ پاک بحریہ نے مستعدی سے بھارتی سب میرین کا سراغ لگایا۔ انہوں نے کہا کہ پوری دنیا میں سب میرین کے ذریعے معلومات اکٹھی کی جاتی ہیں۔ ایک نجی ٹی وی سے گفتگو میں کموڈور (ر)تسنیم احمد نے کہا کہ بھارت نے پانی کے نیچے سے کبوتر بھیجا تھا جو ہم نے پکڑ لیا۔ انہوں نے کہا کہ پاک بحریہ اپنے محدود وسائل میں رہتے ہوئے بھارت کو ہر قسم کا منہ توڑ جواب دینے کی قوت رکھتی ہے۔ در اصل جیسا کہ اوپر کی سطور میں گزارش کی جا چکی ہے کہ بھارتی حکمران دونوں ملکوں کے مابین معمولی جھڑپوں کو اب وسعت دینے کی کوشش کرنا چاہتے ہیں کیونکہ مقبوضہ کشمیر میں جس طرح آزادی کی نئی لہر سے بھارت کے طول و عرض میں آوازیں اٹھ رہی ہیں اور بھارتی حکمرانوں پر کشمیر کے مسئلے کو حل کرنے کیلئے دبائو ڈالا جا راہا ہے اس سے جان چھڑانے کے لئے وہ کنٹرول لائن پر بھی اشتعال انگیزی کر رہا ہے او ر دوسرا یہ کہ سی پیک کی کامیابی دیکھ کر بھارتی حکمران تلملا رہے ہیں۔ مودی کے گرد بیٹھے ہوئے انتہا پسندوں کی یہی کوشش ہے کہ سی پیک کے منصوبے کو ہر قیمت پر ناکام بنانے کے لئے دونوں ملکوں کے درمیان محدود پیمانے کی جنگ برپا کی جائے اور بھارتی سب میرین کو پاکستانی حدود میں بھیجنے کا مقصد ہی پاکستانی دفاعی حصار کا اندازہ لگانا ہوسکتا ہے۔ مگر پاکستانی بحریہ نے ثابت کردیا ہے کہ بھارت کے مذموم مقاصد کبھی پوری نہیں ہوسکیں گے۔

اداریہ