Daily Mashriq

ایل او سی: بھارتی فوج کی بلا اشتعال شیلنگ سے پاک فوج کا جوان، 6 شہری شہید

ایل او سی: بھارتی فوج کی بلا اشتعال شیلنگ سے پاک فوج کا جوان، 6 شہری شہید

لائن آف کنٹرول (ایل او سی) پر بھارتی فوج کی بلا اشتعال شیلنگ کے نتیجے میں پاک فوج کا ایک جوان اور 6 شہری شہید ہوگئے۔

حکام نے بتایا کہ بھارتی فوج کی شیلنگ کے نتیجے میں 9 پاکستانی شہری زخمی بھی ہوئے اور مزید بتایا کہ یہ رواں برس میں بھارتی شیلنگ کے نتیجے میں ہونے والی سب سے زیادہ اموات ہیں۔

بعد ازاں پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے ڈائریکٹر جنرل (ڈی جی) میجر جنرل آصف غفور کی جانب سے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر کیے گئے ٹوئٹ میں بتایا گیا کہ بھارتی فورسز کی فائرنگ کے نتیجے میں پاک فوج کا ایک جوان شہید جبکہ دیگر 2 زخمی ہوئے۔

 آئی ایس پی آر نے مزید بتایا کہ پاک فوج نے بھارتی جارحیت کے جواب میں بھرپور کارروائی کرتے ہوئے بھارتی چیک پوسٹوں کو نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں 9 بھارتی فوجی ہلاک جبکہ دیگر 9 زخمی ہوگئے۔

بیان میں مزید بتایا گیا کہ پاک فوج کی جوابی کارروائی کے نتیجے میں 2 بھارتی بنکرز بھی تباہ ہوئے۔

 ڈی جی آئی ایس پی آر کی جانب سے ایک اور ٹوئٹ میں کہا گیا کہ 'بھارتی فوج کو ہمیشہ سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کا بھرپور جواب ملے گا، پاک فوج ایل او سی پر معصوم شہریوں کی حفاظت کرے گی اور بھارتی فوج کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا جائے گا'۔

انہوں نے اپنے ٹوئٹ میں مزید کہا کہ 'پاک فوج، بھارت کی جانب سے جھوٹے دعووں کا جواز پیش کرنے اور جعلی آپریشنز کی تیاریوں کو سچائی سے بے نقاب کرتی رہے گی'۔

آئی ایس پی آر نے مزید کہا کہ کہ' پاکستان کی موثرکارروائی کے بعد بھارتی فوج نے سفید جھنڈا لہرا دیا ہے، بھارتی فوج لاشیں اور زخمیوں کو اٹھانے کی کوشش کررہی ہے '۔

ٹوئٹ میں مزید کہا گیا کہ 'بھارتی فوج کو سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی سے پہلے سوچنا چاہیے اور معصوم شہریوں کو نشانہ بنانے سے گریز کرتے ہوئے فوجی اصولوں کا احترام کرنا چاہیے'۔

دوسری جانب ایل او سی پر بھارتی فورسز کی بلااشتعال شیلنگ کے نتیجے میں شہریوں کی ہلاکت کی تصدیق کرتے ہوئے آزاد کشمیر کے وزیراعظم راجا فاروق حیدر نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں بھاری فورسز

وزیراعظم آزاد کشمیر نے مزید کہا کہ ' یہ سفاکیت کی انتہا ہے، دنیا کو اس پر خاموش نہیں رہنا چاہیے'۔

بھارتی فورسز کی شیلنگ کے نتیجے میں سب سے زیادہ نقصان آزاد کشمیر کے ضلع مظفرآباد میں واقع نوسیری سیکٹر اور وادی نیلم کے جورا سیکٹر کو نقصان پہنچا۔

مظفرآباد کے ڈپٹی کمشنر بدر منیر نے کہا کہ ' شیلنگ رات میں شروع ہوئی تھی اور بہت زیادہ تھی'۔

انہوں نے کہا کہ ' بھارتی فوج نے مارٹر گولوں کا استعمال کیا اور شہری آبادیوں کو نشانہ بنایا۔

علاوہ ازیں سوشل میڈیا پر ویڈیوز پوسٹ کرنے والے رہائشیوں نے بتایا کہ ٹریسر ہتھیار بھی فائر کیے تھے۔

انہوں نے بتایا کہ اسی گاؤں میں غلام ربانی نامی شخص کے بیٹے حاجی سرفراز جاں بحق ہوئے جبکہ ارشاد نامی شخص کی اہلیہ نرگس زخمی ہوئیں۔

ڈپٹی کمشنر نے بتایا کہ نوسیری سیکٹر میں صوابی کے رہائشی 35 سالہ لیاقت خان اور ٹیکسلا کے رہائشی 30 سالہ فیصل لنک روڈ پر خیمے کے قریب شیل گرنے سے جاں بحق ہوئے، دونوں افراد پنجکوٹ روڈ پر مزدوروں کے طور پر کام کررہے تھے۔

ڈپٹی کمشنر نے بتایا کہ نوسیری سیکٹر کے گاؤں کنور میں 38 سالہ شبیر اور ان کی 60 سالہ والدہ جاں بحق ہوگئیں۔

انہوں نے مزید بتایا کہ بھارتی شیلنگ کے نتیجے میں علاقے کو پہنچنے والے نقصان کا جائزہ لیا جارہا ہے۔

آٹھمقام میں پولیس عہدیدار فیض طلب نے ڈان کو بتایا کہ جورا گاؤں میں جاں بحق شخص کی شناخت لورالائی کے رہائشی ظفر خان کے نام سے ہوئی جبکہ اسلام پورہ گاؤں میں ایک خاتون اور 3 بچیاں زخمی ہوگئیں۔

انہوں نے بتایا کہ زخمیوں کو علاقے میں واقع ملٹری ہسپتال منتقل کیا گیا ہے۔

فیض طلب نے بتایا کہ بھارتی شیلنگ کے نتیجے میں 43 دکانیں، 53 مکان، 6 گاڑیاں اور 3 موٹرسائیکلوں کو نقصان پہنچا۔

خیال رہلے کہ چند روز قبل لائن آف کنٹرول کے سیکٹر نیزا پیر کے مختلف گاؤں میں بھارتی فوج کی بلا اشتعال شیلنگ سے 3 شہری شہید اور 8 زخمی ہوگئے تھے۔

واضح رہے کہ ایل او سی پر جنگ بندی کے لیے 2003 میں پاکستان اور بھارتی افواج کی جانب سے ایک معاہدے پر دستخط کیے گئے تھے تاہم اس کے باوجود جنگ بندی کی خلاف ورزی کا سلسلہ وقفے وقفے سے جاری ہے۔

حکام کے مطابق رواں برس ایل او سی پر بھارتی فوج کی جارحیت کے نتیجے میں آزاد جموں و کشمیر میں 47 افراد شہید اور 236 سے زائد زخمی ہوچکے ہیں۔

متعلقہ خبریں