سینیٹ اجلاس:پارلیمنٹیرینز کی الیکشن کمیشن، نگران حکومت پر کڑی تنقید، الیکشن کی شفافیت پر سوالات اٹھا دیے

21 جولائی 2018 (19:46)

ویب ڈیسک:سابق چیئرمین سینیٹ رضا ربانی نے الیکشن کمیشن اور نگران حکومت پر کڑی تنقید کرتے ہوئے الیکشن کمیشن سے انتخابات سےمتعلق سوالات پوچھ لیے۔

سینٹ اجلاس کے دوران اپوزیشن لیڈر شیری رحمان نے کہا کہ حالات بہتر نظر نہیں آ رہے، انتخابات اور ملک دو راہے پر کھڑے ہیں، آپ مسلح تنظیموں کو مین اسٹریم میں لاکر پاکستان میں تفریق پیدا کر رہے ہیں، جب وہ لوگ ایوان میں آگئے تو یہاں کیا بحث ہوا کرے گی؟ کالعدم تنظیمیں ایوان میں آگئیں تو وہ لوگ مین اسٹریم میں آجائیں گے، اگر وہ لوگ یہاں آگئے تو پھر یہاں کس کو سانس لینے کی اجازت ہوگی؟ نگراں صوبائی وزیر داخلہ پنجاب کو فوری استعفی دے دینا چاہئے۔

پرویز رشید۔

ن لیگ کے سینیٹر پرویز رشید کا کہنا تھا کہ نگران حکومت جواب دے کسی کے ساتھ لاڈلے اور کسی کے ساتھ سوتیلوں والا سلوک کیا جارہا ہے، عمران خان کو نیب نے ہیلی کاپٹر کیس میں اور انسداد دہشت گردی عدالت نے دھرنا کیس میں حاضری سے استثنیٰ دیا، اگر لاڈلے کو استثنی مل سکتا تو حنیف عباسی کو کیوں نہیں مل سکتا، نگراں وزیراعلیٰ پنجاب نے بھارتی اخبار میں پیش گوئی کی کہ پنجاب میں تحریک انصاف کی نشستیں بڑھ جائیں گی، حسن عسکری کو استعفیٰ دینا چاہئے۔

پرویز رشید نے کہا کہ حنیف عباسی  کے خلاف ایفی ڈرین کیس کا فیصلہ سنایا جارہا ہے، جس کیس کا فیصلہ سات سال میں نہیں ہو سکا کیا الیکشن سے چند روز قبل فیصلہ دینا ضروری ہے، شیخ رشید کی شکست کو دیکھتے ہوئے حنیف عباسی کیس کا فیصلہ دیا جارہا ہے، چیف الیکشن کمشنر اور چیئرمین نیب کو سینیٹ طلب کر کے سوالات کے جواب لینے چاہئیں۔

رضا ربانی۔

سابق چیئرمین سینیٹ رضا ربانی نے سینیٹ میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا نگران حکومت جانبدار ہے جبکہ الیکشن کمیشن اپنی آئینی ذمہ داری پوری کرنے میں ناکام ہوگیا ہے۔ انہوں نے کہا الیکشن کمیشن ایسے خاموش ہے جیسے اسے کسی نے کچھ کہا ہو

رضا ربانی نے سوال اٹھایا کہ بینک ملازمین کو کس بنیاد پر بطور پولنگ اسٹاف تعینات کیا گیا ؟ الیکشن کمیشن نے کس قانون کے تحت کالعدم تنظیموں کو انتخاب لڑنے کی اجازت دی ؟ تحفظات کی صورتحال میں صاف شفاف انتخابات کیسے ہوں گے؟۔

سابق چیئرمین سینیٹ کا کہنا تھا الیکشن کمیشن اس وقت کہاں تھا جب بلاول بھٹو کو روکا گیا، الیکشن کمیشن کو لیگی کارکنوں کی گرفتاری کیوں نہیں نظر نہیں آتی ؟ عوام کی رائے کو نظر انداز کرنا خطرناک ہو گا۔

رضا ربانی نے کہا تحفظات کی صورتحال میں صاف شفاف انتخابات کیسے ہوں گے؟ الیکشن کمیشن کو سب کچھ نظر کیوں نہیں آ رہا ؟۔

مزیدخبریں