Daily Mashriq

کیا پارلیمانی نظام بوجھ بننے سے بچ گیا؟

کیا پارلیمانی نظام بوجھ بننے سے بچ گیا؟

پارلیمنٹ منتخب جمہوری نمائندوں کے درمیان بحث وتمحیص اور قوانین کی تیاری ومنظوری کا ادارہ ہوتا ہے جس میں اہم قومی مسائل پر کھل کر اظہار خیال کیا جاتا ہے۔ دنیا میں بارہا یہ دیکھا گیا ہے کہ بحث تکرار میں ڈھل کر جذبات کے پیمانے سے چھلک پڑتی ہے اور نوبت ہاتھا پائی تک پہنچ جاتی ہے مگر یہ اس فورم کا ناپسندیدہ استعمال سمجھا اور مانا وجانا جاتا ہے۔ عوام اپنے منتخب نمائندوں کی زبان سے بڑھ کر ہاتھ کے استعمال یا زبان کے استعمال میں غیرمحتاط رویوں کو پسند نہیں کرتے۔ میڈیا بھی ایسے رویوں کا ناقد ہوتا ہے اور سوشل میڈیا کے آنے کے بعد تو اب عام آدمی براہ راست اپنے جذبات واحساسات کا برملا اظہار کرکے اسے ہزاروں افراد تک پہنچانے کی پوزیشن میں آگیا ہے۔ گویا کہ جن رویوں پر چوپالوں، دالانوں اور قہوہ خانوں میں بیٹھ کر لوگ اچھے یا برے جذبات کا اظہار کرتے ہیں اب ان سب بیٹھکوں کی جگہ فیس بک، ٹویٹر، واٹس اپ وغیرہ نے لی ہے۔ اس طرح عام آدمی کی صورت میں عوامی نمائندوں کیلئے ایک نیا اور مضبوط ناقد سامنے آگیا ہے۔ پہلے تو اپنے حلقۂ انتخاب سے دور عوامی نمائندے کی کسی حرکت پر عوام کے جذبات نمائندے تک براہ راست پہنچ ہی نہیں پاتے تھے مگر اب سوشل میڈیا بلکہ موبائل کے ذریعے عوام اپنے جذبات لمحوں میں نمائندے تک پہنچانے میں کامیاب ہوتے ہیں۔ اس تبدیلی نے عوامی نمائندوں کی ذمہ داریوں میں مزید اضافہ کیا ہے۔ ان کیلئے اپنے کردار اور اخلاق کو مزید کمپوزڈ اور تہذیب کے دائروں کے اندر رکھنا ضروری ہو گیا ہے۔ پی ٹی آئی کی موجودہ حکومت احتجاج دراحتجاج اور بلندآہنگ الزامات اور اعلانا ت کے ذریعے سیاست کے تالاب میں بھرپور ارتعاش پیدا کرنے کے بعد قائم ہوئی تھی اسی لئے یہ صاف نظر آرہا تھا کہ اس پی ٹی آئی کی حکومت کو ایک بپھری ہوئی اپوزیشن ملے گی جو جا وبے جا احتجاج اور غصے کا اظہا کرکے حکومت کی راہوں میں کانٹے بچھاتی جائے گی۔ خود حکومت بھی ابھی تک اپنے مزاج کو بدلے ہوئے حالات اور حقائق سے آشنا نہیں کر سکی۔ صاف انداز میں بات کی جائے تو حکومت خود کو بدستور اپوزیشن سمجھ کر معاملات چلانے کی روش پر گامزن دکھائی دیتی ہے۔ اپوزیشن کا کام ہی شور وغل کرنا ہے اور یہ شور وغل نہ کرکے اپوزیشن ایک اہم ذمہ داری سے غفلت کی مرتکب ہوتی ہے۔ ماضی میں مسلم لیگ اور پیپلزپارٹی کی حکومتوں نے اس ذمہ داری کو مفاہمتوں اور میثاقوں کی نذر کرکے سیاست میں خلاء پیدا کرنے کی جو بھیانک غلطی کی تھی اسی کا نتیجہ عمران خان کے ڈرائیونگ سیٹ پر بیٹھنے اور اس کے نتائج کی صورت میں انہیں بھگتنا پڑ رہا ہے۔ اس سے تو نوے کی دہائی ہی ٹھیک تھی، دونوں لڑتے لڑتے حکومتیں بھی تڑوا بیٹھتے تھے مگر پھر باریاں بدل کر دونوں اقتدار میں بھی آتے تھے اور اس کھیل میں خلاء تلاش کرنے والے نامی گرامی سیاستدان تانک جھانک کر کے پیچھے ہٹ جاتے تھے مگر دوہزاری کی دہائی میں جب دونوں بڑی جماعتیں مفاہمت کے تحریری معاہدوں تک پہنچیں تو ’’تیسری قوت‘‘ کا مذاق ایک سنجیدہ حقیقت بنتا چلا گیا۔ نوے کی دہائی میں تیسری قوت کی بات کرنے اور دعویٰ کرنے والے سیاستدانوں کا یہ دونوں بڑی جماعتیں اور ان کا ہمنوا میڈیا اس قدر مذاق اُڑاتا تھا کہ خدا کی پناہ۔ ان کا خیال تھا کہ ملک مدتوں تک دوجماعتی نظام کے کولہو کا بیل بنا یونہی گردش کرتا چلا جائے گا۔ وقت کچھ اس انداز سے پلٹ گیا کہ کل کا مذاق ایک حقیقت بنتا چلا گیا۔ یہاں تک تیسری قوت گرتے پڑتے اقتدار کی مسند کے قریب پہنچ گئی۔ یہ انہونی اپوزیشن کی طرف سے اپنا رول ادا نہ کرنے کے باعث ہو کر رہی۔ اس لئے اب بھی حکومت کو اپوزیشن کو گونگا بہرہ بنانے اور مفاہمت کی زنجیر میں باندھنے کی بجائے دل کی بھڑاس اور صحیح اور غلط کی نشاندہی کیلئے آزاد چھوڑنا چاہئے۔ حکومت وقت کی خوش قسمتی ہے کہ اسے ایک ایسی اپوزیشن ملی ہے جو اپنے ماضی کے بوجھ کے باعث کمر خمیدہ ہے۔ حکومت اس کی ہر تنقید کا وار ماضی کے حوالے دیکر انہی پر اُلٹ دیتی ہے۔ یہ معاملہ زیادہ دیر تک اس لحاظ سے چلتا دکھائی نہیں دیتا کہ آخرکار ماضی عوام کی لوحِ حافظہ سے محو ہوتا جائے گا اور ان کی نظریں اور یادداشت صرف لمحۂ موجود میں ہی گھومتی چلی جائے گی۔ ایسے میں حکومت اور اپوزیشن کے درمیان پارلیمانی آداب کو ملحوظ رکھنے کے معاہدہ کی خبریں سامنے آئیں۔ قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے ایک طویل خطاب میں جم کر حکومت پر تنقید کی مگر انہوں نے اخلاقیات کا دامن سختی سے تھامے رکھا۔ ان کی تقریر کے دوران حکومتی بنچوں سے اِکا دُکا آوازیں تو بلند ہوتی رہیں مگر مجموعی طور پر ماحول پرسکون اور سنجیدہ رہا۔ ان کا جواب وفاقی وزیر عمر ایوب نے اسی قدر جم کر نکتہ وار اور طوالت کیساتھ دیا۔ حکومت نے کچھ خطاب ایوان میں سنا اور ظاہر ہے باقی اپوزیشن چیمبر میں سنا ہوگا۔ شنید ہے کہ اسی معاہدے کے تحت وزیراعظم عمران خان بھی بجٹ اجلاس سے خطاب کریں گے۔ پارلیمنٹ اپنے قیام کے مقاصد کو پورا نہ کرے تو اپنے وجود کا جواز کھو دیتی ہے۔ ہاتھاپائی، دھینگا مشتی اور دشنام واتہام کیلئے گلی کوچے پڑے ہوتے ہیں۔ حکومت اور اپوزیشن کو یہ احساس ہی نہیں تھا کہ وہ اپنے کردار اور رویوں سے پارلیمنٹ اور پارلیمانی نظام کی اُلٹی گنتی کا کام دے رہے تھے۔ انہیں شاید احساس ہی نہیں تھا کہ وہ جس شاخ پر ان کی سیاست اور کروفر کا آشیانہ قائم ہے نادانستگی یا فریق مخالف کی ضد میں وہ اسی کو کاٹ رہے ہیں۔

متعلقہ خبریں