Daily Mashriq

پاکستان اورایران سرحدی سکیورٹی کےلئےمشترکہ سریع الحرکت فورس بنانےپرمتفق

پاکستان اورایران سرحدی سکیورٹی کےلئےمشترکہ سریع الحرکت فورس بنانےپرمتفق

پاکستان اور ایران نے سرحدی سکیورٹی کےلئے مشترکہ سریع الحرکت فورس بنانے پر اتفاق کیا ہے۔

 تہران میں وزیراعظم عمران خان کے ساتھ مشترکہ نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ایران کے صدر حسن روحانی نے کہا کہ دونوں ملکوں نے دوطرفہ تجارتی تعلقات بڑھانے پر بھی اتفاق کیا ہے۔

 انہوں نے کہا کہ ایران اور پاکستان گیس پائپ لائن منصوبے کو مکمل کرنے کےلئے مربوط کوششیں کریں گے۔

اس موقع پر وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان دنیا میں واحد ملک ہے جسے دہشت گردی کے باعث سب سے زیادہ نقصان ہوا ہے۔

 انہوں نے کہا کہ ہم کسی دہشت گرد تنظیم کو کسی ملک کے خلاف پاکستان کی سرزمین استعمال نہیں کرنے دیں گے۔

 وزیراعظم نے کہا کہ افغان جنگ سے ایران اور پاکستان دونوں متاثر ہوئے اور افغانستان میں امن دونوں ملکوں کے بہترین مفاد میں ہے۔

 انہوں نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی بربریت کو بھی اجاگر کیا۔

نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ دونوں ممالک نے دہشت گردی کے خاتمے میں تعاون بڑھانے کافیصلہ کیا ہے تاکہ اپنی سرزمین ایک دوسرے کےخلاف استعمال نہ کی جاسکے۔

 بلوچستان میں دہشت گردی کے حالیہ واقعے کا حوالہ دیا جس میں چودہ سکیورٹی اہلکارشہید ہوئے تھے۔ وزیراعظم نے کہا کہ دہشت گردی کے واقعات سےدونوں ممالک کے تعلقات متاثر ہوئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کی پوری سیاسی قیادت نے عزم کیا ہے کہ کسی عسکریت پسند گروپ کو کسی ملک کےخلاف پاکستان کی سرزمین استعمال کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

 وزیراعظم نے کہا کہ دونوں ملکوں نے افغان تنازعے کے پرامن حل میں مدد دینے کےلئے تعاون کا بھی فیصلہ کیا ہے۔

 مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کا حوالہ دیتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ اس دیرینہ تنازعے کا کوئی فوجی حل نہیں تاہم یہ سیاسی تصفیے کے ذریعے ہی حل ہوسکتا ہے۔

انہوں نے کہاتنازع کے حل سے پورے برصغیر میں ترقی میں مدد ملے گی اور خطے میں معاشی و اقتصادی روابط بہتر ہونگے۔

متعلقہ خبریں