Daily Mashriq

پاک امریکہ تعلقات، معذرت خواہانہ رویہ کیوں؟

پاک امریکہ تعلقات، معذرت خواہانہ رویہ کیوں؟

امریکا کی آرمی سینٹرل کمانڈ کے کمانڈنگ جنرل لیفٹیننٹ جنرل مائیکل گیریٹ نے گزشتہ ہفتے پاکستان کے دورے کے موقع پرپاکستان کو خطے میں امریکہ کا اہم شراکت دار قرار دیا، امریکا کی آرمی سینٹرل کمانڈ کے کمانڈنگ جنرل لیفٹیننٹ جنرل مائیکل گیریٹ کے بیان کو اگر پاکستان کے حوالے سے امریکی حکومت کے حالیہ اقدامات اور فیصلوں کے ساتھ موازنہ کیاجائے تو پاکستان کے حوالے سے امریکی حکومت کادوغلا پن کھل کر سامنے آجاتاہے ، پاکستان کی اہمیت کے حوالے سے امریکی جنرل کامذکورہ بیان بلاوجہ نہیں ہے بلکہ امریکا کی فوجی قیادت اس طرح کے بیانات دے کر امریکی انتظامیہ کی جانب سے کئے گئے پاکستان مخالف اقدامات پر پاکستان کی برہمی اور غصے میں کمی کرنا چاہتی ہے، کیونکہ امریکا کی حکومت اور فوجی قیادت کو اس بات کا پوری طرح احساس ہے کہ افغانستان میں قیام امن کے لیے پاکستان کاتعاون از حد ضروری ہے اور پاکستان کو نظر انداز کر کے افغانستان میں امن کاقیام اور افغانستان میں موجود امریکی فوج کے تحفظ کو یقینی بنانا ممکن نہیں ہوسکتا، امریکی انتظامیہ اور فوجی قیادت16برس تک ایڑی چوٹی کا زور لگانے کے باوجود افغانستان میں اپنے مقاصد حاصل کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکا ہے۔ سپر پاور ہونے کے دعویدار امریکا کے لیے اعتراف شکست نہایت مشکل کام ہے، اس لیے وہ اپنی ناکامی کا الزام پاکستان کے سر تھوپنے کی کوشش کرتارہا ہے لیکن اس کوشش کے جواب میں پاکستان کے سخت ردعمل اور پاکستان کی جانب سے امریکا کے درشت اور سرد رویے کے جواب میں پہلے جیسا عاجزانہ رویہ اختیار کرنے کے بجائے بے رخی کے رویئے نے امریکی انتظامیہ کو پریشان کرکے رکھ دیا ہے، امریکی حکام کاخیال تھا کہ پاکستان کے مقابلے میں بھارت کے انتہاپسند اور ماضی میں تسلیم شدہ دہشت گرد وزیراعظم مودی کو گلے لگانے پر پاکستان تلملا اٹھے گا اور امریکا کے پیر پکڑنے پر تیار ہوجائے گا اورپھر امریکا پاکستان پر ڈومور کے مطالبات مسلط کرسکے گا۔ لیکن اس کے جواب میں پاکستان نے جس رویئے کااظہار کیا اس نے امریکی حلقوں میں ہلچل مچادی۔امریکا کی جانب سے پاکستان پر افغانستان میں عدم استحکام کی ذمہ داری ڈالنا حقیقت پسندی سے نظریں چرانے کے مترادف ہے، کیونکہ پاکستان بار بار یہ واضح کرچکاہے اور پوری دنیا بھی یہ بات اچھی طرح جانتی ہے کہ افغانستان کا امن و استحکام پاکستان کے قومی مفادمیں بہت اہمیت رکھتا ہے، اور اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ پاکستان افغانستان میں پائیدار قیام امن کا نہ صرف متمنی ہے بلکہ اس کے لیے اپنے تمام تر سفارتی و اخلاقی ذرائع بھی بروئے کار لا رہا ہے جبکہ امریکی تائید و حمایت سے بھارت پاکستان کیخلاف افغان سرزمین استعمال کررہا ہے،جس کے ناقابل تردید شواہد پاکستان میں دہشتگردی کے کئی سانحات کی صورت میں سامنے آچکے ہیں اور بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو اپنے اعترافی بیان میں بھی بتاچکاہے کہ بھارت پاکستان کوعدم استحکام سے دوچار کرنے کے لیے کس طرح دہشت گردوں کومالی اورمادی امداد فراہم کررہاہے اورنوجوانوں کوورغلا کر اپنے مذموم مقاصد کے لیے استعمال کرتاہے۔ اس حقیقت کے باجود امریکا افغانستان سمیت خطے میں بھارتی کردار اور اثررسوخ بڑھانے پر مصر ہے۔ امریکی کانگریس نے حال ہی میں ایک بل کی منظوری دی ہے جسکے تحت پاکستان کی فوجی امداد میں کمی اور پاکستان کے ساتھ جاری تعاون کو ماضی کی طرح ڈومور پالیسی سے مشروط کیا گیا ہے۔ قبل ازیں امریکی صدر ٹرمپ کو اپنے پہلے دورہ پینٹاگان کے دوران جو بریفنگ دی گئی ، اس میں نہ صرف دہشتگردی کیخلاف جنگ میں پاکستان کی قربانیوں کو نظرانداز کیا گیا بلکہ اس بریفنگ میں افغانستان میں امریکی شکست کا ذمہ دار بھی پاکستان کو ٹھہراتے ہوئے باقاعدہ سفارش کی گئی کہ افغانستان میں طالبان کیخلاف جنگ جیتنے کے لیے پاکستان کیخلاف کارروائی ناگزیر ہے۔ امریکی جریدے کی رپورٹ کے مطابق اسی اجلاس میں امریکی صدر نے افغانستان کے معدنی ذخائر میں سے ایک بڑا حصہ حاصل کرنے کی بھی بات کی ، جس کے جواب میں امریکی صدر کو بتایا گیا کہ افغانستان کے معدنی وسائل پر مکمل دسترس حاصل کرنے کے لیے افغان حکومت کا ملک پہ کنٹرول ضروری ہے، جس کی راہ میں پاکستان حائل ہے۔ امریکا پاکستان پر دباؤ بڑھانے کے لیے یہ حقیقت نظر اندا ز کررہا ہے کہ داعش جس نے مشرق وسطٰی کے کئی ممالک کے امن کو تہہ و بالا کر رکھاہے اب افغانستان میں مسلسل زور پکڑ رہی ہے۔ حال ہی میں پاکستان اور افغانستان میں دہشت گردی کے جو اندوہناک خونی واقعات ہوئے ، ان کی ذمہ داری داعش نے قبول کی، جبکہ ماضی قریب میں ان دہشتگردو ں نے داعش میں شمولیت کا اعلان کیا تھا جو بھارت کے زیراثر تھے۔ ان حالات کاتقاضہ ہے کہ پاکستان خطے اور پڑوسی ممالک کے ساتھ اپنے تعلقات کو فروغ دیکر امن و اعتماد کی بحالی کے لیے جاری کوششوں کو مزید فروغ دے۔ داعش کی صورت میں خطے میں ابھرنے والے نئے فتنے سے نمٹنے کے لیے روس، چین ، ایران اور ترکی کے ساتھ ہم آہنگی اور تعاون کی پالیسی اپنائے۔ سی پیک کے ثمرات سے فقط پاکستان یا چین ہی نہیں بلکہ خطے کے تمام ممالک مستفید ہوں گے، چنانچہ اسکے خلاف جاری سازشوں سے نمٹنے کے لیے جامع اور مربوط حکمت عملی اپنانے کی ضرورت ہے۔ امید کی جاسکتی ہے کہ ہمارا دفتر خارجہ اور وزیر خارجہ اس حوالے سے واضح اور بے لچک پالیسی اپنانے اور امریکا کے سامنے ہر وقت جھکے رہنے کی پالیسی تبدیل کرکے تن کر کھڑا ہونے کی کوشش کریں گے ،اور امریکا پر یہ واضح کردیاجائے گا کہ اگر وہ پاکستان کے مقابلے میں بھارت سے دوستی کوترجیح دیتاہے توپاکستان کو بھی امریکا سے دوستی اتنی زیادہ عزیز او ر ضروری نہیں ہے۔

متعلقہ خبریں