Daily Mashriq

انڈیا جا جا کشمیر سے نکل جا

انڈیا جا جا کشمیر سے نکل جا

کل اگست کے مہینے کی 21 تاریخ تھی اور پاکستان سمیت ساری دنیا میں دہشت گردی کا شکار ہونے والے لوگوں کے تحفظ کا عالمی دن منایا جارہا تھا اور دوسری طرف مقبوضہ کشمیر جنت نظیر کی انگار وادی کے بے بس اور مظلوم باشندے بھارت کی ریاستی دہشت گردی کا شکار ہوکر اپنے سینوں اورسروں کو پیٹ پیٹ کر کہہ رہے تھے

انڈیا جا جا کشمیر سے نکل جا

میری جنت میرے گھر سے نکل جا

ایک حوالے کے مطابق جنرل اسمبلی نے اقوام متحدہ کے شہری اور سیای حقوق کے کنونشن اور دیگر متعلقہ انسانی حقوق کے عالمی معاہدات کی روشنی میں اس دن کو منانے کا فیصلہ کیا جس میں دہشت گردی کے خلاف جنگ میں انسانی حقوق کے تحفظ کا اعادہ کیا گیا۔اس کے علاوہ انسانی حقوق کونسل کی 16 جون 2011 کی قرارداد 17/8 کو بھی دہرایا گیا جس کا عنوان 21 اگست کو دہشت گردی کے شکار افراد کے دن کے طور پر منانا ہے۔ سو، منا لیا جہاں بھر کے لوگوں نے یہ دن ، دہشت گردی کا شکار ہونے والوں کے حق میں لمبی لمبی تقریریں کرتے ہوئے ، ان کو طفل تسلیاں دینے کی غرض سے جھوٹے وعدے کرتے ہوئے، اک رسم تھی جو ادا کردی گئی، مناظرے ہوئے مذاکرے برپا کئے گئے ، مظاہرے ہوئے ، ریلیاں نکلیں، آرٹیکل شائع ہوئے، کیمرہ سیشن منعقد کئے گئے ، اک لائیو شو تھا جو عالمی سطح کے پنڈال پر سٹیج کردیا گیا۔ 21 اگست کے سورج کی ایک آنکھ ہنس رہی تھی یہ طرفہ تماشا دیکھ کر اور ایک آنکھ رو رہی تھی کشمیریوں پر ظلم و ستم کے ٹوٹتے پہاڑوں کا منظر دیکھ کر ، 21اگست 2019ء کے سورج نے شام کے بعد سیاہ رات کی گود میں الحفیظ و الامان کہتے ہوئے پناہ لینے سے پہلے جو طرفہ تماشا دیکھا اس کو بھول جانا اس کے بس کی بات نہ تھی ، اس نے اک طرف دہشت گردی کا شکار ہونے والوں کے غم میں عالمی مگر مچھوں کوٹپ ٹپ نیر بہاتے دیکھا اور دوسری طرف مظلوم اور نہتے کشمیریوں پر تابڑ توڑ گولیاں برستی دیکھیں ۔کشمیری بچے جرم ناکردہ کی پاداش میں کٹ کٹ کر شہید ہو رہے تھے۔ان کی مائیں اپنا سینہ پیٹ رہی تھیں اور بہنیں اپنا چادر اور دوپٹوں سے عاری سر پھوڑ رہی تھیں ، میں نے کشمیر میں انٹر نیٹ پر پابندی کے باوجود سوشل میڈیا پرلیک ہوکر وائرل ہوتی ایسی تصویریں بھی دیکھیں جن میں کشمیر کی روتی بلکتی حسین و جمیل سیاہ سر اور سیاہ بخت بیٹیا ںبھارتی سینا کے وحشیوں کے بوٹوں پر اپنے سروں سے اترا ہوا دوپٹہ رکھ کر کہہ رہی تھیں ۔

جا جا انڈیا کشمیر سے نکل جا

میری جنت میرے گھر سے نکل جا

میں نے اس خون کی ہولی میں بھارتی سینا کے وحشیوں کے آگے ہاتھ جوڑے کھڑے سفید ریشوں کو بھی دیکھا اور میرے کانوں میں

انڈیا جا جا کشمیر سے نکل جا

میرے گھر میری جنت سے نکل جا

کی دل خراش چیخ و پکار گونجنے لگی۔ اللہ۔ پھوٹ کیوں نہیں گئیں میری آنکھیں، رک کیوں نہیں گئی میرے دل کی دھڑکن، خون کیوں نہیں نکلا آنکھوں سے بہنے والے آنسوؤں کے راوی اور چناب سے ، میں نے ہسپتالوں میں پڑے ان جسموں کو دیکھا جن پر برس برس کر بے بس ہوجانے والے کوڑوں بیدوں چھڑیوں ، بندوقوں کے بٹ اورڈنڈوں کے نیلو نیل نشان زبان حال سے پکار پکار کر کہہ رہے تھے

انڈیا جا جا کشمیر سے نکل جا

میر ے گھر میری جنت سے نکل جا

میرے کان سن کیوں نہ ہوئے کشمیر کی انگار وادی کے جلتے چناروں کی ڈالی ڈالی کی زباں سے جرم ناکردہ کی پاداش میں جبر و ستم اور جرم ناکردہ کی زنجیروں میں جکڑے ہوئے کشمیر کی دل دوز چیخیں سنتے ہوئے۔ کیونکہ ہم نے 21اگست کو

ہم پرورش لوح قلم کرتے رہیں گے

جو دل پہ گزرتی ہے رقم کرتے رہیں گے

کی قسم پوری کرتے ہوئے چند سطریں اقوام عالم کے خفتہ ضمیروں کو جھنجھوڑنے کے لئے لکھنی تھیں ، جانے کیسے پہنچی وہ ویڈیو مجھ تک جس میں کشمیری خواتین کا ٹھاٹھیں مارتا جلوس ہائے بھارت ، وائے بھارت ، اف بھارت آہ بھارت کہنے کے علاوہ لیکر رہیں گے آزادی ، کشمیر بنے گا پاکستان کے نعرے لگاتی اپنی کشمیری مائیں ، بہنیں ، اور بیٹیاں رقص بسمل کرتی نظر آئیں ۔ اور پھر ہمیں دہشت گردی کا شکار ہونے والوں کے حق میں عالمی دن منانے والوں کے دوغلے چہرے اور ان کے دوغلے کردار نظر آنے لگے ، ان کے ضمیر کی اس بے حسی کو دیکھ کر زبان پر بے اختیار یہ شکوہ شکایت یا فریاد بن کرآگئی کہ

تماشے دیکھتے ہیں آج کل وہ رقص بسمل کے

سنے ہم نے بھی غیروں سے یہ قصے ان کی محفل کے

مت رو ، چپ ہوجا ، میرے دل کے دکھی گوشوں سے آواز ابھری کہ اچھا ہوا مودی بہ یک نقطہ موذی نے مظلوم کشمیریوں پر جبرو ستم کے پہاڑ گرا کر اپنے تابوت میں آخری کیل ٹھونک دی ہے ، کشمیری تو شروع روز سے عالمی در انصاف پر دستک د ے رہے ہیں ، لیکن ناعاقبت اندیش مودی کی اس حرکت نے عالمی کاخ انصاف کے درو دیوار میں بھونچال برپا کردیا ہے ،نہتے کشمیریوں کی غلامی کی دیوار کو گرانے کا وقت بہت قریب آگیا ہے اور پاکستان کا مطلب کیا لاالہ الا للہ کے نعرے کی گونج میں یہ آواز صاف سنائی دینے لگی(باقی صفحہ7)

متعلقہ خبریں