Daily Mashriq

امریکی حکومت کے بعد گوگل کا بھی ہواوے کو ریلیف دینے کا فیصلہ

امریکی حکومت کے بعد گوگل کا بھی ہواوے کو ریلیف دینے کا فیصلہ

یہ اقدام اس وقت کیا گیا جب امریکی محکمہ تجارت کی جانب سے ہواوے کو 3 ماہ کا لائسنس جاری کیا گیا تاکہ وہ اپنے موجودہ صارفین کو سروسز کی فراہمی جاری رکھ سکے۔

گزشتہ ہفتے امریکا نے ہواوے کو بلیک لسٹ کردیا تھا جس کے باعث امریکی کمپنیوں کو ہواوے کے ساتھ کام کرنے کے لیے حکومتی منظوری درکار تھی۔

یہی وجہ ہے کہ گوگل نے پیر کو اعلان کیا تھا کہ وہ ہواوے سے اپنا تعلق ختم کررہی ہے، جس کے فونز میں گوگل کے اینڈرائیڈ آپریٹنگ سسٹم کو استعمال کیا جارہا ہے۔

گوگل کے اعلان نے ہواوے صارفین میں تشویش کی لہر دوڑا دی تھی اور چینی کمپنی کو یقین دہانی کرانا پڑی تھی کہ وہ اپنے آپریٹنگ سسٹم کی تیاری پر کام کررہی ہے۔

مگر اب نئی پیشرفت اس وقت سامنے آئی جب گوگل نے 19 اگست تک کے لیے ہواوے کے ساتھ اینڈرائیڈ سروسز بحال رکھنے کا اعلان کیا۔

وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ میں ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا کہ گوگل نے اینڈرائیڈ سروسز کو ہواوے فونز کے لیے برقرار رکھا جائے گا۔

بعد ازاں گوگل نے بھی ایک بیان میں بھی اس بات کی تصدیق کرتے ہوئے کہا 'فونز کو اپ ٹو ڈیٹ اور محفوظ رکھنا ہر ایک کے مفاد میں ہے اور عارضی لائسنس کی بدولت ہمیں سافٹ وئیر اور سیکیورٹی اپ ڈیٹس فراہم کرنے کا موقع اگلے 90 دن کے لیے مل گیا ہے'۔

ہواوے نے گوگل کے بیان پر بات کرنے سے گریز کیا ہے۔

ٹی جی ایل کا نفاذ پیر سے ہوا ہے جس کے تحت ہواوے کے صارفین کو اپنے فونز پر سافٹ وئیر اپ ڈیٹس ملتی رہیں گی جبکہ کمپنی بھی امریکی سپلائرز سے پرزہ جات خرید سکے گی۔

امریکی سیکرٹری آف کامرس ولبر روس نے ایک بیان میں کہا ' یہ عارضی لائسنس آپریٹرز کو متبادل انتظامات کے لیے وقت فراہم کرتا ہے جبکہ محکمے کو اس دوران یہ تعین کرنے کا موقع مل سکے گا کہ وہ طویل المعیاد بنیادوں پر امریکی اور غیر ملکی ٹیلی کمیونیکشن کمپنیاں جو اس وقت ہواوے کے آلات پر انحصار کررہے ہیں، کے لیے انتظامات کرسکے'۔

بیان میں کہا گیا کہ یہ لائسنس آپریٹز کو ہواوے موبائل فونزاور براڈ بینڈ نیٹ ورکس پر آپریشنز جاری رکھنے کی سہولت فراہم کرے گا'۔

متعلقہ خبریں