استحصال اور احتساب میں فرق ہوتاہے،منصف بنو حکمران نہیں،مریم نواز

استحصال اور احتساب میں فرق ہوتاہے،منصف بنو حکمران نہیں،مریم نواز

ویب ڈیسک:حکومت چلاناعوامی نمائندوں کاکام ہےاورعوام کی رائےکو دباناآمریت ہے،منصف نوازشریف کااحتساب نہیں استحصال کررہے ہیں۔

سرگودھا میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے مریم نواز کا کہنا تھا کہ  سپریم کورٹ میں مجموعی طور پر 17 ججز ہیں جن میں سے 7 ججز نوازشریف کے خلاف مقدمات کی سماعتیں کررہے ہیں اور پاناماکیس کا 5 رکنی اسکواڈ تو ہر وقت نوازشریف کے خلاف رہتا ہے، ڈیڑھ سال سے چلنے والے مقدمے میں ابھی تک 5 روپے کی کرپشن ثابت نہیں ہوئی، سابق وزیراعظم نے پاکستان میں سب سے زیادہ منصوبے لگائے،ان منصوبوں میں کوئی ایک پیسے کی کرپشن سامنے نہیں لاسکا، عوام کو نوازشریف کے اثاثے نہیں کرپشن دیکھنی ہے۔

مریم نوازکا کہنا تھا کہ یہ پاکستان میں کیا ہورہا ہے کہ مسلم لیگ (ن) کو سینیٹ انتخابات سے اٹھاکر باہر پھینک دیا گیا، کیا کبھی دیکھا ہے کہ پوری کی پوری جماعت کو الیکشن سے باہر کردیا گیا ہو،  ہمیں ناصرف سینیٹ انتخابات سے باہر کیا گیا بلکہ ہم سے ہمارا انتخابی نشان شیر بھی چھین لیا گیا،آج لاڈلہ بھی کہہ رہا ہے کہ سپریم کورٹ نے نوازشریف کے خلاف کیسا فیصلہ دیا ہے، یہ مذاق جو شیر کے نشان یا نوازشریف کے ساتھ ہوا درحقیقت عوام کے ساتھ ہوا ہے،  نوازشریف کسی وزارتِ عظمیٰ یا پارٹی صدارت سے نہیں بلکہ اللہ کے کرم اور عوام کی محبت سے بنا ہے، سابق وزیراعظم کو صدارت سے ہٹانے اور دلوں سے نکالنے کے لئے کروڑوں ووٹرز کو بھی نااہل کرنا ہوگا۔

رہنما (ن) لیگ نے کہا کہ نوازشریف نے ووٹ کی حرمت کی جنگ لڑ کر بتادیا کہ ووٹ دینے والوں کی بھی کوئی عزت ہوتی ہے، جس طرح عوام نے نوازشریف کا مقدمہ لڑا، اس بات کا واضح ثبوت ہے کہ وہ بے گناہ ہیں۔ ایک وقت تھا جب منصف عوام کی عدالت میں آئے تھے اس وقت عوام قانون کے رکھوالوں کے لئے باہر نکلے تو بہت اچھی بات ہے اور اگر یہی عوام اپنے رکھوالے کے لئے نکلے ہیں تو غلط ہے، نوازشریف منصفوں کی بحالی کے لئے تحریک چلائے تو جائز اور ووٹ کے تقدس کے لئے جائے تو غلط۔

مریم نواز نے کہا کہ آئین کہتا ہے اللہ کے بعد عوام کے نمائندے حاکم ہیں، آئین میں یہ نہیں لکھا کہ منصف حاکم ہیں، قوم اداروں کی عزت کرنا چاہتی ہے اس لئے عزت سے اپنا کام کرو اور حکومت چلانا عوامی نمائندوں پر چھوڑ دو، حساب کرو انتقام مت لو، منصب بنو حکمران مت بنو، قوم کو اپنی سیاسی لڑائیوں میں مت گھسیٹو ، خطرناک لڑائی مت لڑو اس میں ملک کا نقصان ہے۔ اس انتقام نےعوام کا نوازشریف عوام کو واپس کردیا ا اور سارے شیروں کو متحد کردیا، نوازشریف کی طاقت میں کمی نہیں بلکہ اضافہ ہواہے۔

متعلقہ خبریں