Daily Mashriq


بی جے پی پھرکامیاب

بی جے پی پھرکامیاب

دہلی (مانیٹرنگ ڈیسک)انڈیا کے وزیراعظم نریندر مودی کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی( بی جے پی)نے ملک میں ہونے والے عام انتخابات ایک بارپھرواضح سبقت سے جیت لیے ہیں جس پر نریندر مودی نے ووٹروں کا شکریہ ادا کیا ہے جبکہ کانگریس نے انتخابات میںشکست تسلیم کرلی ہے ۔نئی دہلی سے موصولہ اطلاعات کے مطابق بی جے پی کوبھارتی پارلیمان کی 543 میں سے 300 نشستوں پرواضح برتری حاصل ہوئی جبکہ لوک سبھا کی 542 نشستوں میں سے بی جے پی کا اتحاد مجموعی طور پر 350سے زائد نشستوں پر آگے ہے۔نریندر مودی نے ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں کامیابی دلوانے پر انڈین عوام کا شکریہ ادا کیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ شکریہ انڈیا۔ ہمارے اتحاد پر اعتماد کا اظہار ہمیں منکسرالمزاج بناتا ہے اور ہمیں ہمت دے رہا ہے کہ لوگوں کی امیدیں پوری کرنے کے لیے مزید محنت کریں۔میں فتح عوام کے قدموں میں نچھاورکرتاہوں اورملک کی خدمت جاری رکھوں گا،انڈیا میں مرکزی حکومت بنانے کے لیے 272 نشستیں درکار ہیں اس طرح بی جے پی آسانی کے ساتھ حکومت تشکیل دے سکتی ہے۔اس کے برعکس کانگریس اور اس کے اتحادیوں کو119 کے لگ بھگ نشستیں ملی ہیںجن میں سے کانگریس محض 54 نشستوں پرکامیاب ہوئی ہے۔سنہ 2014 میں بی جے پی نے 282 نشستیں جیتی تھیں جو کسی بھی جماعت کی 30 برسوں میں سب سے بڑی کامیابی تھی۔ ان انتخابات میں بی جے پی اور اس کے اتحادیوں کو کل ملا کر 336 نشستیں ملی تھیں۔کانگریس کو سنہ 2014 میں 44 نشستیں ملی تھیں اور یہ اس کی تاریخ میں بدترین شکست تھی اور اتحادیوں کی سیٹیں ملا کر ان کی کل نشستیں 60 تھیں۔اس بار انڈیا کے اہل ووٹروں کی کل تعداد 90 کروڑ تھی جنہوں نے اسے دنیا کی تاریخ کا سب سے بڑا الیکشن بنا دیا تھا۔ ان انتخابات میں وزیر اعظم نریندر مودی بنارس میں اپنے قریب ترین حریف سے 70 ہزار سے زیادہ ووٹوں سے جیتے ہیں جبکہ کانگریس کے صدر راہول گاندھی کا ان کے روایتی حلقے امیٹھی میں بی جے پی کی امیدوار سمرتی ایرانی سے سخت مقابلہ ہواتاہم یہاں سے سمرتی ایرانی نے راہول کوشکست دیدی۔بی جے پی کو سب سے بڑی کامیابی اتر پردیش ، بہار اور بنگال میں ملی ہے۔ مدھیہ پردیش، راجستھان اور چھتیس گڑھ میں بھی غیر معمولی کامیابی حاصل کی ہے جبکہ دلی کی تمام سات نشستوں پر بی جے پی ہی آگے ہے۔بھارتی ٹی وی چینلز کی جانب سے انتخابات میں بی جے پی کی واضح برتری کے اعلان کے بعد بڑی تعداد میں حامیوں نے دہلی ہیڈکوارٹرز سمیت بھارت کے مختلف شہروں میں کامیابی کا جشن منانا شروع کردیا ہے۔بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج نے سماجی روابط کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ٹوئٹ کیا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کو عظیم کامیابی سے ہمکنار کروانے پر نریندر مودی کی مشکور ہوں۔بھارتیہ جنتا پارٹی کے ترجمان کے مطابق یہ مثبت سیاست اور نریندر مودی کی پالیسیوں کے لیے بڑا مینڈیٹ ہے۔ کانگریس پارٹی کے صدر راہل گاندھی نے انتخابات میںشکست تسلیم کرتے ہوئے بی جے پی کو اور وزیر اعظم نریندر مودی کو جیت کی مبارکباد دی ہے لیکن اپنے کارکنوں سے ہمت نہ ہارنے کی تلقین کرتے ہوئے کہا کہ کانگریس محبت سے اپنے نظریے کی جیت حاصل کرے گی۔ انھوں نے دلی میں کانگریس کے صدر دفتر میں صحافیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہامیں نے انتخابی ریلی میں کہا تھا کہ عوام مالک ہے اور مالک نے آرڈردیا ہے۔ تو میں سب سے پہلے نریندر مودی جی کو، بی جے پی کو مبارکباد دینا چاہتا ہوں۔راہول گاندھی نے کہاہمارے کانگریس پارٹی کے کارکن اور امیدوار جو پورا زور لگا کر دل سے لڑے، میں ان کا دل سے شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں۔ ہماری لڑائی نظریے کی لڑائی ہے جو جاری رہے گی۔آج یہ کہنا بے معنی ہوگا کہ کہاں غلطی ہوئی۔ آج ہندوستان کے عوام نے فیصلہ سنایا ہے کہ نریندر مودی وزیر اعظم بنیں گے اور ایک ہندوستانی کے طور پر میں ان کا پورا احترام کرتا ہوں۔