Daily Mashriq


منی لانڈرنگ کیس:جے آئی ٹی کیجانب سے رپورٹ جمع،مزید مشکوک اکاونٹس دریافت

منی لانڈرنگ کیس:جے آئی ٹی کیجانب سے رپورٹ جمع،مزید مشکوک اکاونٹس دریافت

ویب ڈیسک:منی لانڈرنگ اسکینڈل میں سپریم کورٹ نے کشتیوں کے ذریعے رقوم کی منتقلی کی تحقیقات کا حکم دے دیا جب کہ جے آئی ٹی نے مزید 33 مشکوک اکاؤنٹس کا سراغ لگالیا ہے۔

چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے جعلی بینک اکاؤنٹس کے ذریعے اربوں روپے کی منی لانڈرنگ سے متعلق کیس کی سماعت کی۔ معاملے کی تحقیقات کیلئے قائم جے آئی ٹی کے سربراہ نے پیشرفت رپورٹ پیش کی اور بتایا کہ مزید 33 مشکوک اکاؤنٹس کا سراغ لگایا ہے جن کی چھان بین جاری ہے، اب تک کی تحقیقات میں 334 افراد کے ملوث ہونے کا پتہ چلا ہے، یہ تمام ملزمان جعلی اکاؤنٹس میں ٹرانزیکشنر کرتے رہے، ان اکاؤنٹس کے ساتھ 210 کمپنیوں کے روابط رہے اور رقم جمع کروانے والوں میں ٹھیکیدار بھی شامل ہیں، سرکاری ٹھیکیداروں کے نام بھی رپورٹ کا حصہ بنا دیئے ہیں۔

سربراہ جے آئی ٹی احسان صادق نے کہا کہ بیرون ملک مقیم ملزمان کو واپس لانے اور ریڈ وارنٹ کیلئے اقدامات کر رہے ہیں، نیب، ایف بی آر، ایس ای سی پی اور اسٹیٹ بنک سے ریکارڈ لے رہے ہیں۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کن لوگوں نے پیسے جمع کروائے اور نکلوائے ؟ یہ چوری کا پیسہ ہے، اربوں روپے کی منی لانڈرنگ کی کوشش کی گئی۔ جے آئی ٹی سربراہ نے بتایا کہ 334 افراد مختلف ترسیلات زر میں ملوث ہیں، 47 کمپنیاں اومنی گروپ کی ہیں، گھوٹکی شوگر مل سمیت 16 شوگر ملز بھی اومنی گروپ کی ہیں۔ گھوٹکی مل سے ملنے والے ریکارڈ کا تجزیہ جاری ہے۔

متعلقہ خبریں