Daily Mashriq

سیاحت کی ترقی کیلئے نجی شعبہ کی خدمات لی جائیں

سیاحت کی ترقی کیلئے نجی شعبہ کی خدمات لی جائیں

ہیوی بائیک پر دنیا کی سیاحت پر نکلے پشاور میں ایک یوم ٹھہرنے کا قصد کر کے آنے والے جرمن سیاح جوڑے کا ہفتہ بھر قیام غیر ملکی سیاحوں کیلئے پیغام ہے کہ صوبائی دارالحکومت میں سیاحوں کی ہفتہ بھر کی دلچسپی کا ساماں اور سیاحت کے مواقع موجود ہیں ۔پشاورکے تاریخی مقامات اور روایتی ذائقے دار کھانے سیاحوں کیلئے خاص طور پر کشش کا باعث ہیں۔پشاور میں سیاحوں کے تحفظ اور شہر کا ماحول موافق ضرور ہے لیکن سیاحوں کو کھینچ لانے کیلئے یہ کافی نہیں پشاور کی بالخصوص اور صوبے کی بالعموم سیاحت کے فروغ کیلئے صرف سرکاری سطح پر ہونے والے اقدامات کافی نہیں صوبے میں جب تک ٹریول اور ٹورز کا بین الاقوامی سطح پر انتظام اور ان انتظامات کی پیشہ وارانہ طور پر تشہیر نہیں ہوگی سیاحوں کی مناسب رہنمائی اور معلومات کی فراہمی سے لیکر ان کی آمدو رخصتی تک کے انتظامات وخدمات کا بندوبست نہ ہوگا سیاحت کیلئے طے شدہ اہداف کا حصول ممکن نہ ہوگا حکومت کو چاہیئے کہ وہ اس شعبے میں دنیا کے دیگر ممالک کی طرح نجی شعبے کو بھی شامل کر ے اور ان کیلئے بھی کاروبار ورزگار کے مواقع پیدا کرے تاکہ عالمی سطح پر سیاحت کو فروغ دیا جا سکے اور صوبے کی سیاحت ترقی کرے۔

صالح انار کے باغات لگانے کیلئے حکومتی اقدامات کی ضرورت

سوات میں انار صالح کے باغات لگانے اور اس کی پیداوار کے تحفظ اور مارکیٹنگ میں محکمہ زراعت کے مشوروں اور عملی اقدامات کا کتنا عمل دخل ہے اس کا سوات سے ہمارے نمائندے کی رپورٹ میں ذکر نہیں البتہ رپورٹ کے مطابق انار صالح قندہاری انار سے کہیں شیریں اور رس بھرے ہیں جن کی خرید و فروخت سے باغات لگانے والوں کو معقول آمدنی ہوتی ہے۔ دوسرے پھلدار پودوں کے مقابلے میں انار صالح جلد پھل دیتا ہے دیگر پھلوں کے مقابلے میں قدرت نے اسے مضبوط اور سخت چھلکے سے نوازا ہے اور انار دیگر پھلوں کی طرح جلد خراب بھی نہیں ہوتا اور نہ ہی اسے پکے بغیر درخت سے اتار کر فروخت کرنے کی ضرورت پڑتی ہے ان ساری خصوصیات کی بناء پر انار واقعی منافع بخش پھل ہے جس کے باغات لگانے پر محکمہ زراعت کو خاص طور پر توجہ دینے اور اقدامات کی ضرورت ہے۔ دیر' شانگلہ' کوہستان' چترال' ہزارہ ڈویژن کے بعض علاقوں قبائلی اضلاع کے موسم تقریباً یکساں اور سوات کے موسم کے قریب قریب ہیں جہاں پر انگور کے باغات لگانے کے بڑے مواقع ہیں اس پر محکمہ زراعت کو سروے کرنے اور جائزے کے بعد لوگوں کو انار صالح کے پودے لگانے کی طرف راغب کرنے کی ضرورت ہے۔ محکمہ زراعت ان علاقوں کے لوگوں کو بنیادی تربیت ترغیب اور سہولتیں فراہم کرکے انار صالح کی پیداوار بڑھانے اور لوگوں کے لئے کاروبار اور روزگار کے بہتر مواقع پیدا کرسکتا ہے۔ توقع کی جانی چاہئے کہ اس سلسلے میں جلد ہی مثبت اقدامات سامنے آئیں گے اور اگر حکومت لوگوں کو مفت پودوں کی فراہمی کے لئے اقدامات کرسکے تو یہ سونے پہ سہاگہ ہوگا۔

سرکاری سکولوں کے قومی پرچم کے صدر دروازے

محکمہ تعلیم خیبر پختونخوا کی طرف سے سرکاری سکولوں کے صدر دروازوں پر پاکستانی پرچم پینٹ کرنے کا فیصلہ احسن اور قابل تعریف ہے اپنے وطن سے محبت کے اظہار کا ہر طریقہ اور ہر رنگ اور نئی نسل کے اذہان و قلوب کو وطن پرستی کی طرف مائل کرنا وقت کی اہم ضرورت ہے۔ ہم جن حالات اور جس قسم کی صورتحال سے گزر رہے ہیں اور خاص طور پر سوشل میڈیا پر بعض اندرونی و بیرونی عناصر کی طرف سے نوجوانوں کے ذہنوں کو پراگندہ کرنے کا جو کھیل جاری ہے اس کا تقاضا ہے کہ ہر سطح پر گھر سے لے کر سکول' کالجوں اور جامعات تک ہم اپنے بچوں کی اس طرح سے تربیت کریں اور وطن کی محبت سے اس طرح سے ان کو سرشار کریں کہ وہ پروپیگنڈہ بازوں کے سامنے چٹان کی طرح کھڑے رہیں اور وہ کسی طور بھی کسی منفی پروپیگنڈے کا شکار نہ ہوں نہ صرف یہ بلکہ وہ اس کا موثر جواب بھی دیں۔سکولوں کے صدر دروازوں پرقومی پرچم پر آتے جاتے نظر پڑنے کے بچوں پر نفسیاتی اثرات اور وطن کی یاد و محبت کی پختگی میں یقینا مدد گار ہوگی یہ ایک اچھا فیصلہ ہے جس پر عملدرآمد میں تاخیر نہیں ہونی چاہئے۔

متعلقہ خبریں