Daily Mashriq


تاپی گیس منصوبے کی تکمیل خوشحالی کی نوید

تاپی گیس منصوبے کی تکمیل خوشحالی کی نوید

ترکمانستان، افغانستان، پاکستان اور انڈیا (تاپی) گیس پائپ لائن منصوبے کے پہلے حصے کا افتتاح افغان صوبے ہرات میںہونا خطے کے ممالک کے تعلقات اور ترقی کیلئے نہایت اہم ہے۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے پاکستان کے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ پاکستان طویل مدتی معاشی مقاصد حاصل کرنا چاہتا ہے، جس کی وجہ سے خطے میں استحکام کو یقینی بنایا جائے گا۔ افغان صدر نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان اس منصوبے کی تکمیل کے لئے ہر رکاوٹ کو ہٹائے گا۔ دوسری جانب افغان طالبان کی اس منصوبے کی مخالفت نہ کرنا اور اسے خطے کیلئے اہم معاشی منصوبہ قرار دینا منصوبے کی راہ میں رکاوٹ کا خاتمہ ہے۔ یقیناً تاپی منصوبہ خطے کے لئے اہم معاشی اہمیت رکھتا ہے جسے افغان طالبان کے دور میں شروع کیا گیا تھا لیکن افغانستان میں امریکی یلغار کی وجہ سے اس منصوبے کی تکمیل تاخیر کا شکار ہوا۔ پاکستان، افغانستان، انڈیا اور ترکمانستان کے سربراہان نے دس ارب ڈالر کے اس منصوبے تاپی گیس پائپ لائن کا سنگ بنیاد2015 میں رکھا تھا۔ واضح رہے کہ یہ پائپ لائن ابتدائی طور پر27 ارب مکعب میٹر سالانہ گیس فراہم کر سکے گی جس میں سے دو ارب افغانستان اور ساڑھے12ارب مکعب میٹر گیس پاکستان اور بھارت حاصل کریں گے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ خطے کے ممالک کو اس منصوبے پر عملدرآمد کیلئے باہم تعلقات کو استوار بنائے رکھنے کی ضرورت ہوگی۔ فطری طور پر بھی ایسا ہونا مشکل نہیں کیونکہ اس منصوبے سے خطے کے چاروں ممالک کو فائدہ پہنچے گا۔ افغانستان کو راہداری کی مد میں مزید فوائد ملیں گے، افغانستان حکومت کیساتھ طالبان کا اس منصوبے سے اتفاق اور تعاون کے وعدے کے بعد اس منصوبے کی راہ میں سوائے اس کے کوئی اور رکاوٹ دکھائی نہیں دیتی کہ کوئی بڑا ملک اس میں مداخلت کرے یا پھر خدا نخواستہ خطے کے ممالک کے تعلقات میں اچانک کوئی بگاڑ آئے۔

متعلقہ خبریں