Daily Mashriq

گورنر کا معدنیات، توانائی اور زراعت کے شعبوں میں خصوصی ریسرچ پر زور

گورنر کا معدنیات، توانائی اور زراعت کے شعبوں میں خصوصی ریسرچ پر زور

پشاور(مشرق نیوز)گورنرخیبرپختونخوا شاہ فرمان نے اعلی تعلیمی اداروں کو ہدایت کی ہے کہ وہ اپنے تحقیقی پروگراموں کو صوبے کی استعداد اورضروریات کے مطابق مربوط بنائیں۔ بالخصوص انہوں نے معدنیات، توانائی اور زراعت کے شعبوں میں خصو صی ریسرچ پر زوردیا۔یہ بات انہوں نے پیر کے روزگورنرہاس پشاورمیں ہزارہ یونیورسٹی مانسہرہ اور بینظیربھٹوویمن یونیورسٹی پشاور کی سینیٹ کے الگ الگ اجلاسوں کی صدارت کے دوران کی۔ گورنرخیبرپختونخواشاہ فرمان کاکہناتھا کہ دنیا بھر کی یونیورسٹیوں میں اپنے ملک کے ماحول اورحالات وضروریات کے مطابق ریسرچ ہوتے ہیں تو ہم ان کی تقلید کی بجائے اپنے ماحول اورضروریات کے مطابق کیوں نہ ریسرچ پرتوجہ دیں۔اعلی تعلیمی جامعات اپنا معیاربہتر بنائیں اور مالی نظم وضبط کے ساتھ ساتھ میرٹ، شفافیت یقینی بنائیں۔ انہوں نے ایک بارپھر تمام یونیورسٹیوں پرواضح کیا کہ مالی سال کا بجٹ معقولیت اورترجیحات کی بنیاد پر ترتیب دیاجائے اور ایسی تمام یونیورسٹیاں جنہوں نے گذشتہ مالی سال کے بجٹ کاآڈٹ نہیں کرایا انکا آئندہ مالی مالی سال کابجٹ سینیٹ اجلاس میں منظور نہیں کیاجائیگا۔ گورنرخیبرپختونخوا نے ہائرایجوکیشن کمیشن کو بھی اعلی جامعات کو فنڈز کی فراہمی میں یونیورسٹیز کی کارکردگی کو مدنظر رکھنے کا کہا۔ اجلاس میںشہید بینظیربھٹووویمن یونیورسٹی کے مالی سال 2017-18 کے بجٹ کی بھی منظوری دیدی گئی۔اجلاس میںڈپٹی سپیکرصوبائی اسمبلی محمودجان،سیکرٹری ہائر ایجوکیشن منظور احمد، پرنسپل سیکرٹری برائے گورنر نظام الدین ،شہید بینظیربھٹوویمن یونیورسٹی کی وائس چانسلر ڈاکٹررضیہ سلطانہ ، وائس چانسلر ہزارہ یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر محمد ادریس اور دیگر متعلقہ اراکین نے شرکت کی۔

متعلقہ خبریں