Daily Mashriq

لچسپ انتخابی علاقہ

لچسپ انتخابی علاقہ


کالعدم شدت پسند تنظیم تحریک طالبان پاکستان کے سابق سربراہ حکیم اللہ محسود کے آبائی گائوں میں پہلی بار پرامن طریقے سے انتخابات کا انعقاد ایک دلچسپ امر ہی نہیں دہشت گردی کے خلاف جنگ کی کامیابی پر مہر تصدیق ثبت اور دہشت گردوں کی کمر ٹوٹنے اور ایسے مرکز سے محروم ہونے کا بھی مظہر ہے۔افغان جنگ اور 2002 کے عام انتخابات کے بعد یہ پہلا موقع تھا کہ حکیم اللہ محسود کے آبائی گائوں مرغی بند میں 25 جولائی 2018 کو ووٹ کاسٹ کیے گئے۔ یہ علاقہ جنوبی وزیرستان کے شہر جنڈولہ کے قریب واقع ہے، جہاں ڈیڑھ دہائی قبل سیکورٹی کی صورتحال انتہائی خراب تھی۔مگر 25 جولائی 2018 کو ہونے والے عام انتخابات میں یہاں پولنگ کا انعقاد کیا گیا اور لوگوں نے بلا خوف و خطر اپنے حق رائے دہی کا استعمال کیا۔گوکہ ضم شدہ قبائلی اضلاع میں پہلے بھی عام انتخابات کا انعقاد ہو چکا ہے لیکن اس مرتبہ خیبر پختونخوا میں ضم ہو کر ایجنسی سے اضلاع میں تبدیل ہونے کے بعد ان علاقوں میں امیدواروں کی نوعیت اور عوام کی جداگانہ جذبے سے انتخابات میں شمولیت خیبر پختونخوا کی تاریخ میں ایک نیا باب ہے ۔ جس کے بعد اب صوبائی اسمبلی کے انتخابات کی طرف پیشرفت متوقع ہے جو سابق قبائلی علاقہ جات کے عوام کو مکمل طور پر قومی دھارے میں عملی طور پر شامل کرکے انضمام کے عمل کی تکمیل کی صورت میں سامنے آئے گا جس کا عوام ایک طویل عرصے سے منتظر ہیں اس عمل کی تکمیل کے بعد خیبر پختونخوا کی سیاسی جغرافیائی معاشی غرض ہر طرح سے اہمیت میں اضافہ ہوگا ۔

اداریہ